کانگریس کا شرم ناک رویہّ!
کانگریس کا شرم ناک رویہّ!

✍️شکیل رشید (ایڈیٹر ممبئی اردو نیوز) ___________________ لوک سبھا کے انتخابات میں اپنی ’بہترکامیابی‘ کے بعد کانگریس نے ایک اور ’ تیر مارلیا ہے ‘۔ کانگریس کی ترجمان سپریا شرینیت نے مودی حکومت کی ایک مہینے کی کارکردگی پر رپورٹ کارڈ پیش کیا ہے ، جس میں مرکزی سرکار کوآڑے ہاتھوں لیا ہے ۔ یہ […]

کانگریس کا شرم ناک رویہّ!
غم جہاں سے نڈھال سراپا درد و ملال!!
غم جہاں سے نڈھال سراپا درد و ملال!!

✍️ جاوید اختر بھارتی محمدآباد گوہنہ ضلع مئو یو پی _____________ دینی ، سیاسی ، سماجی اور تعلیمی مضامین اکثر و بیشتر لکھا جاتاہے اور چھوٹے بڑے سبھی قلمکار لکھتے رہتے ہیں مگر ضروری ہے کہ کچھ ایسے موضوع بھی سامنے آئیں جو حقائق پر مبنی ہوں یعنی آپ بیتی ہوں مرنے کے بعد تو […]

غم جہاں سے نڈھال سراپا درد و ملال!!
جمہوری سیکولر سیاست میں دھرم کی مداخلت: ہندوستانی تناظر میں
جمہوری سیکولر سیاست میں دھرم کی مداخلت: ہندوستانی تناظر میں

✍️ محمد شہباز عالم مصباحی ____________ جمہوریت کا مفہوم ہی اس بات پر منحصر ہے کہ عوامی رائے کو فیصلہ سازی میں اولیت دی جائے اور ہر شہری کو یکساں حقوق اور مواقع فراہم کیے جائیں۔ سیکولرزم، جمہوریت کی بنیاد کو مضبوط کرتا ہے، جس کا مطلب یہ ہے کہ ریاست کو مذہبی معاملات میں […]

جمہوری سیکولر سیاست میں دھرم کی مداخلت: ہندوستانی تناظر میں
کیجریوال کا قصور
کیجریوال کا قصور

✍️ مفتی محمد ثناء الہدیٰ قاسمی نائب ناظم امارت شرعیہ بہار اڈیشہ و جھاڑکھنڈ ________________ دہلی کے وزیر اعلیٰ اروند کیجریوال کی پریشانیاں دن بدن بڑھتی جارہی ہیں، نچلی عدالت سے ضمانت ملتی ہے، ہائی کورٹ عمل در آمد پر روک لگا دیتا ہے، سپریم کورٹ میں عرضی داخل کرتے ہیں، اس کے قبل ہی […]

کیجریوال کا قصور
این جی اوز اور فلاحی اداروں میں علماء کا رول
این جی اوز اور فلاحی اداروں میں علماء کا رول

✍️ نقی احمد ندوی ________________ اس میں کوئی شک نہیں کہ علماء و فارغینِ مدارس اور طلباء کے اندر قوم و ملت اور ملک کی خدمت کا جو حسین جذبہ پایا جاتا ہے وہ عصری تعلیم گاہوں کے فارغین کے اندر عنقا ہے۔ این جی اوز اور فلاحی ادارے ان کے اس حسین جذبہ استعمال […]

این جی اوز اور فلاحی اداروں میں علماء کا رول
previous arrow
next arrow
Shadow

شب برأت اور ہمارے نوجوان

شبِ برأت کے موقع پر مفتی منظور ضیائی کا پیغام مسلم نوجوانوں کے نام !

مفتی منظور ضیائ

معروف اسلامک اسکالر و دانشور مفتی منظور ضیائی چیئرمین علم و ہنر فاؤنڈیشن ممبئی نے موجودہ حالات کے تناظر میں شبِ برأت کے بابرکت,پر کیف و بہار  موقع پر مسلم نوجوانوں سے اپیل کرتے ہوئے کہا کہ قرآن مجید  اللہ کی پاک کتاب ہے، جسے اللہ نے اپنی امت کے لئے نازل کیا اور  دین اسلام کا فلسفہ ہے کہ لوگ پاکیزہ زندگی گزر بسر کریں۔
شعبان المعظم کی پندرہویں شب  جو ’’برأت‘‘سے موسوم ہے دراصل یہ خطاؤں اور گناہوں سے توبہ کرکے بری ہونے کی رات ہے,یہ وہ رات ہے جس میں ہر معاملے کا حکیمانہ فیصلہ اللہ تعالی صادر فرماتا  ہے,چنانچہ حضرت علی رضی اللہ عنہ سے مروی ہے کہ حضور اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ جب شعبان کی پندرہویں رات ہو تو اس رات میں عبادت کرو اور اس کے بعد والے دن میں روزہ رکھو کیونکہ اس رات کو اللہ تعالیٰ غروب آفتاب کے وقت سے ہی آسمان دنیا پر جلوہ خاص فرماتا ہے اور اللہ تعالیٰ فرماتا ہے کہ کیا کوئی مغفرت چاہنے والا ہے کہ میں اسے بخش دوں، کیا کوئی مبتلائے مصیبت ہے کہ اسے عافیت دوں، کیا کوئی ایسا ویسا ہے اور یہ آواز صبح تک آتی رہتی ہے۔ اس رات میں رحمتِ الٰہی کا نزول ہوتا ہے چنانچہ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا: یقینا اﷲ تعالیٰ اس رات بنو کلب کی بکریوں کے بالوں کی تعداد کے برابر میری اُمت پر رحم فرماتا ہے۔اس  بابرکت رات میں رحمتِ الٰہی کا نزول ہوتا  ہے اور اپنے گناہ گار بندوں کی بخشش و مغفرت کے لیے خاص توجہ فرماتی ہے، اس رات میں قیام کرنا، کثرت سے تلاوتِ قرآن، ذکر، عبادت اور دعا کرنا کارِ ثواب ہے  لہذا مسلم نوجوانوں سے اپیل ہے کہ اس بابرکت  شب میں عبادت و دعا کا خصوصی اہتمام کریں,اس رات میں عبادت، تلاوت، صدقہ و خیرات خوب کریں,نیک اعمال میں اپنا وقت صرف کریں, شرعی حدودوقیود کا مکمل خیال رکھیں۔ اس رات کی حرمت کو آتش بازی کے ذریعے پامال نہ کریں۔ اس رات میں بائک لے کرسڑکوں پر اسٹنٹ نہ کریں۔ یہ غیرقانونی ہونے کے ساتھ ساتھ ہلاکت خیز بھی ہے۔مذکورہ بالا خلاف شرع اعمال  شب برأت کی بے حرمتی ہی نہیں بلکہ اسلام کے مزاج کے بھی خلاف ہے۔ اس رات  بائیکرس کا  سر پر اسلامی ٹوپیاں رکھ کر  اسٹنٹ کرنا , ایک ایک بائک پر چار چار جوانوں کا  سوار ہونا اور بغیر ہیلمٹ کے بائک کا مقابلہ بازی کرنا خود کو خطرے میں ڈالنے کے ہم معنیٰ  اور خود کشی کے مترادف ہے جن کی اسلام میں اجازت نہیں ہے۔ ملکی قانون کی دھجیاں اڑانا بھی اسلام کی نظر میں کوئی پسندیدہ کام نہیں ہے۔
اس طرح  مسلم نوجوان مسلم  اور اسلام دونون کی تصویر کو مسخ کرتے ہیں ۔شب برات  وہ مبارک رات  ہے جو عبادت کی رات ہے، جو تلاوت قرآن کی رات ہے، جو قبولیت دعاء کی رات ہے، جس میں تجلیات الٰہی کا نزول ہوتا ہے اور جس میں اللہ کی رحمت بندوں کی جانب متوجہ ہوتی ہے، اس میں دعاء و درود سے غافل ہوکر فضول کاموں میں وقت گذارنا کس قدر محرومی اور بدنصیبی ہے۔کاش ! ہمارے نوجوان اس کو سمجھتے !جو شخص اس رات عبادت کرتا ہے، وہ اللہ تبارک و تعالی سے رحمتیں, نعمتیں , برکتیں اور سعادتیں پا لیتا ہے اور جو غافل رہتا ہے، خواہشاتِ نفس کی پیروی میں لگا رہتا ہے، وہ بہت سے خیر اور رحمت سے محروم ہو جاتا ہے۔لہذا مسلم نوجوان  اپنی  سہولت کے مطابق عبادت کا اہتمام کریں، سڑکوں، پارکوں ہوٹلوں اور تفریح گاہوں کی زینت بننے سے خود کو دور رکھیں۔ اپنی غیر ذمہ دارانہ اور خلاف شرعر اعمال  اور غلط حرکتوں سے اس مبارک رات کی عظمت کو پامال نہ کریں۔
اللہ تبارک و تعالی اپنے فضل و کرم سے ہمارے گناہوں کی بخشش کرتے ہوئے اس رات کی خیروبرکت سے پوری امت مسلمہ کو مالا مال فرمائے آمین۔

Leave a Comment

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Scroll to Top
%d bloggers like this: