تعزیہ سے بت پرستی تک!
تعزیہ سے بت پرستی تک!

از: شمس الدین سراجی قاسمی ______________ “أَيْنَ تَذْهَبُونَ” تم کہاں جارہے ہو ، محرم الحرام تو اسلامی تقویم ہجری کا پہلا مہینہ ہے اور تم نے پہلے ہی مہینہ میں رب کو ناراض کر دیا، اب یہ بات کسی پر پوشیدہ نہیں کہ محرم الحرام میں کئے جانے والے اعمال، بدعات ہی نہیں بلکہ کفریات […]

ماہِ محرم الحرام کی بدعات و خرافات
ماہِ محرم الحرام کی بدعات و خرافات

از: عائشہ سراج مفلحاتی __________________ محرم الحرام اسلامی سال کا پہلا مہینہ ہے، جو اشھر حرم، یعنی حرمت والے چار مہینوں میں سے ایک ہے، احادیث میں اس ماہ کی اہمیت وفضیلت مذکور ہے، یومِ عاشوراء کے روزے کی فضیلت بیان‌ کی گئی ہے، جو اسی ماہ کی دسویں تاریخ ہے؛ لیکن افسوس کی بات […]

معرکۂ کربلا کے آفاقی اصول اور پیغام
معرکۂ کربلا کے آفاقی اصول اور پیغام

از: محمد شہباز عالم مصباحی _______________ یہ تجزیاتی مقالہ کربلا کی عظیم الشان جنگ اور اس کے آفاقی پیغام کا جائزہ لیتا ہے۔ امام حسین (ع) اور ان کے ساتھیوں کی قربانیوں کو ایک تاریخی اور اخلاقی واقعے کے طور پر پیش کیا گیا ہے جو نہ صرف مسلمانوں بلکہ پوری انسانیت کے لیے ایک […]

تبصرہ نگاری ایک طرح کی گواہی ہے
تبصرہ نگاری ایک طرح کی گواہی ہے

✍️ڈاکٹر ظفر دارک قاسمی zafardarik85@gmail.com ________________ تبصرہ نگاری نہایت دلچسپ اور اہم فن ہے ۔ تبصرے متنوع مسائل پر کیے جاتے ہیں ۔ مثلا سیاسی ،سماجی ، ملکی ، قانونی احوال و واقعات وغیرہ وغیرہ ۔ لہٰذا اس موضوع پر مزید گفتگو کرنے سے قبل مناسب معلوم ہوتا ہے کہ پہلے تبصرے کا مفہوم و […]

ملک میں تین نئے فوجداری قانون کا نفاذ
ملک میں تین نئے فوجداری قانون کا نفاذ

✍️ مفتی محمد ثناء الہدیٰ قاسمی نائب ناظم امارت شرعیہ بہار اڈیشہ و جھاڑکھنڈ _________________________ انڈین پینل کوڈ (آئی پی سی) 1860، کرمنل پروسیجر کوڈ (سی آر پی سی) 1898 اور انڈین ایویڈنس ایکٹ 1872 ایک جولائی 2024ء سے تاریخ کے صفحات میں دفن ہوگئے ہیں، ان کی جگہ بھارتیہ نیائے سنہیتا، بھارتیہ ناگرگ سورکچھا […]

previous arrow
next arrow

مسلم مجاہدین آزادی؛جنہیں ہم فراموش کرتے جارہے ہیں

مسلم مجاہدین آزادی جنہیں ہم فراموش کرتے جارہے ہیں

مفتی محمد اطہر القاسمی

نائب صدر جمعیۃ علما صوبہ بہار

پندرہ  اگست سنہ ۱۹۴۷ کو ہمارا ملک بھارت انگریزوں  کی غلامی سے آزاد ہوا،۲۶ نومبر سنہ ۱۹۴۹ کو آزاد بھارت کا آئین بنا اور ۲۶ جنوری سنہ ۱۹۵۰ کو یہ آئین ملک میں نافذ ہوا۔اسی مناسبت سے پورے ملک میں ہرسال ۱۵ اگست کو جشن آزادی اور ۲۶ جنوری کو جشن جمہوریہ منایا جاتا ہے۔

مختلف تہذیبوں اور ثقافتوں کا گہوارہ ہمارا یہ ملک ساڑھے آٹھ سو سالہ مغلیہ سلطنت کے زوال کے بعد برسوں ظالم انگریزوں کے زیر اقتدار رہا،انگریزوں کے چنگل سے ملک کو آزاد کرانے کے لئے بےشمار قربانیوں کے نذرانے پیش کئے گئے؛لاکھوں انسانوں کی جانیں گئیں،ہزاروں مجاہدین جیل کی سلاخوں میں ڈالے گئے اور سینکڑوں لوگ پھانسی کے پھندے پر لٹکائے گئے،تب جاکر جنت نشاں ملک ہندوستاں کو آزادی کا پروانہ نصیب ہوا۔

آزادئی وطن کی اس عظیم جنگ میں یوں تو ملک کے ہر طبقے اور مذہب کے لوگوں نے قربانیاں پیش کیں لیکن ملک کے مسلمانوں نے جو کردار ادا کیا وہ  تاریخِ آزادی کا ایک روشن باب ہے،خصوصا مدارس اسلامیہ کے بوریہ نشیں علماء کرام نے آزادئی وطن کے لئے قربانیوں کے جو نذرانے پیش کئے وہ تاریخ کے اوراق میں آبِ زر سے لکھے ہوئے ہیں۔چنانچہ جہادِ آزادی کی دردانگیز کہانی میں درج ہے کہ دلی کے چاندنی چوک سے لےکر لاہور کے قصہ خوانی بازار تک کوئی ایسا درخت نہیں تھا جس پر کسی سفید ریش بزرگ کی نعش نہیں جھول رہی تھی،فخر کی بات یہ ہے کہ ملک کے ان جاں باز علماء کرام نے آزادئی وطن کا صور اس وقت پھونکا تھا جب دوسرے لوگ خوابِ غفلت میں مست و مگن تھے اور انہیں طوقِ غلامی سے آزادی کا احساس تک نہیں تھا۔حتی کہ سنہ 1866 میں ام المدارس دارالعلوم دیوبند اور سنہ 1919 میں جمعیت علماء ہند کے قیام کے پیچھے بھی یہی تحریک کارفرما تھی،گویا ملک کے غیور مسلمانوں اور جاں باز اکابرین علماء دیوبند نے بھارت کی آزادی کی کہانی اپنے گرم لہو سے تحریر کی۔

اسی لئے بھارت کے سابق وزیر خارجہ جسونت سنگھ نے کہا تھا کہ انڈیا کی جنگ آزادی مسلمانوں کے خون سے لکھی گئی ہے۔

جانےنہ جانےگل ہی نہ جانےباغ توساراجانےہے

پتہ پتہ بوٹا بوٹا حال ہمارا جانے ہے

صاحبو

آج ملک کے حالات تیزی سے بدل رہے ہیں،حالات کی اس منفی تبدیلی پر ہم آہ و بکا تو خوب کرتے ہیں لیکن افسوس ناک سچائی یہ ہے کہ ہم نوشتۂ دیوار نہیں پڑھتے اور نہ ہی اپنی شاندار تاریخ کو سامنے رکھ کر اپنے مستقبل کا منصوبہ بناتے ہیں۔کتنے افسوس کی بات ہے کہ خود ہم مسلمانوں نے اپنے ہی بیشتر مجاہدینِ آزادی کو فراموش کردیا ہے،آزادئی وطن کو ابھی ایک صدی بھی نہیں گذری کہ اکا دکا چند ناموں کو چھوڑ کر نہ تو ہمیں ان کے خوبصورت نام یاد ہیں اور نہ ہی ان کی قربانیوں کی تاریخ اور کارنامے یاد ہیں اور نہ ہی ہمیں اس سے کوئی خاص دلچسپی ہے،اس سے بڑی دکھ کی بات یہ ہے کہ مدارسِ اسلامیہ کے علاوہ (کیونکہ ان ہی کی وجہ سے آج بیشتر مسلم مجاہدین آزادی کے نام زندہ ہیں)آج ملک بھر میں ہزاروں اور لاکھوں چھوٹے بڑے مسلم تعلیمی ادارے قائم ہیں؛ان کی طرف سے 15 اگست اور 26 جنوری کو ہر سال بڑے ہی تزک و احتشام کے ساتھ پروگرام منعقد ہوتے ہیں،لیکن بڑے افسوس کی بات ہے کہ ان پروگراموں میں دوچار کے علاوہ کسی بھی مسلم مجاہد آزادی کا نام تک نہیں لیا جاتا،اسی غفلت و کاہلی کا نتیجہ ہے کہ ہمارے مجاہدین آزادی کے نام رفتہ رفتہ تاریخ کے صفحات سے مٹتے جارہے ہیں اور ہمیں شکوہ یہ ہے کہ لوگ انہیں مٹانے پر تلے ہوئے ہیں۔

صاحبو

یاد رکھیں کہ زندہ قومیں اپنی تاریخ کبھی فراموش نہیں کرتیں،انہیں اپنے بزرگوں کی تاریخ اور اپنے آباء واجداد کے کارنامے ہمیشہ یاد رہتے ہیں،وہ ان تاریخی کارناموں کو اپنی نسلوں کے لئے محفوظ رکھتی ہیں تاکہ ان سے سبق حاصل کرکے ملک میں سر اٹھا کر چل سکیں،فخر کے ساتھ جی سکیں اور زندہ دلی کے ساتھ اپنی زندگی بسر کرسکیں۔اس لئے آج عہد کریں کہ آزادئی وطن کی ہم اپنی تاریخ پڑھیں گے،بچوں کو پڑھائیں گے،انہیں حفظ کریں گے،یاد رکھیں گے،اپنے دوستوں میں چرچا کریں گے،کاغذ کے پنوں کے ساتھ اپنے سینوں میں بھی محفوظ کریں گے اور 15 اگست ہو یا 26 جنوری کم از کم ان اہم مواقع پر ہم اپنے اسٹیجوں سے ملک کے ان جیالوں،قوم کے متوالوں اور ملت کے سرفوشوں کو ضرور یاد کریں گے اور اپنے پروگراموں کا انہیں حصہ بنائیں گے انشاءاللہ۔

کیونکہ ہماری تاریخ لکھنے کے لئے اور لکھی ہوئی تاریخ ہمیں پڑھانے کے لئے اب آسمان سے کوئی فرشتہ نہیں آنے والا،یہ کام مجھے خود کرنا ہوگا،آپ کو کرنا ہوگا،ہم سب کو کرنا ہوگا اور ہماری موجودہ نسلوں کو مل جل کر کرنا ہوگا۔

اس لئے کہ لاکھ منفی کوششوں اور پروپیگنڈوں کے باوجود ہم اپنی شاندار تاریخ ہی کی وجہ سے آج زندہ ہیں،خدانخواستہ جس دن ہماری تاریخ مٹ جائے گی یا مٹادی جائے گی،یقین جانئے کہ روئے زمین پر اس دن ہماری بھی اجتماعی تاریخی موت ہوجائے گی۔

آج ہمیں مہاتما گاندھی،نیتاجی سبھاش چندر بوس،لال بہادر شاستری،جے پرکاش نارائن،سردار ولبھ بھائی پٹیل،پنڈت جواہر لعل نہرو،راجہ مہندر پرتاپ سنگھ،کھدی رام بوس،سروجنی نائیڈو،جھانسی کی رانی لکشمی بائی،بھگت سنگھ،ڈاکٹر چندر شیکھر آزاد،گوپال کرشن گوکھلے،رابندر ناتھ ٹیگور،ڈاکٹر رادھا کرشنن اور رام پرساد بسمل جیسے عظیم مجاہدین آزادی کے نام تو یاد ہیں،جو اچھی بات ہے لیکن اپنے بزرگوں اور آباء واجداد کے اُن ناموں کی طویل فہرست ہمیں یاد نہیں جن کے سرفروشانہ جذبوں،بےمثال قربانیوں،قلندرانہ ولولوں اور بے نظیر کوششوں کے صدقے میں ہمارا یہ ملک ظالم انگریزوں کے چنگل سے آزاد ہوا اور ساتھ ہی بحیثیت ملت اسلامیہ ہمیں اس وطن عزیز میں سر اٹھا کر جینے کا سلیقہ عطا ہوا۔

خود ہم کو محبت کا سبق یاد نہیں ہے۔۔۔

کس منہ سے کریں ان کے تغافل کی شکایت 

ثریا سے زمیں پر آسماں نے ہم کو دے مارا۔۔۔

گنوادی ہم نے جو اسلاف سے میراث پائی تھی

Leave a Comment

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Scroll to Top
%d bloggers like this: