کانگریس کا شرم ناک رویہّ!
کانگریس کا شرم ناک رویہّ!

✍️شکیل رشید (ایڈیٹر ممبئی اردو نیوز) ___________________ لوک سبھا کے انتخابات میں اپنی ’بہترکامیابی‘ کے بعد کانگریس نے ایک اور ’ تیر مارلیا ہے ‘۔ کانگریس کی ترجمان سپریا شرینیت نے مودی حکومت کی ایک مہینے کی کارکردگی پر رپورٹ کارڈ پیش کیا ہے ، جس میں مرکزی سرکار کوآڑے ہاتھوں لیا ہے ۔ یہ […]

کانگریس کا شرم ناک رویہّ!
غم جہاں سے نڈھال سراپا درد و ملال!!
غم جہاں سے نڈھال سراپا درد و ملال!!

✍️ جاوید اختر بھارتی محمدآباد گوہنہ ضلع مئو یو پی _____________ دینی ، سیاسی ، سماجی اور تعلیمی مضامین اکثر و بیشتر لکھا جاتاہے اور چھوٹے بڑے سبھی قلمکار لکھتے رہتے ہیں مگر ضروری ہے کہ کچھ ایسے موضوع بھی سامنے آئیں جو حقائق پر مبنی ہوں یعنی آپ بیتی ہوں مرنے کے بعد تو […]

غم جہاں سے نڈھال سراپا درد و ملال!!
جمہوری سیکولر سیاست میں دھرم کی مداخلت: ہندوستانی تناظر میں
جمہوری سیکولر سیاست میں دھرم کی مداخلت: ہندوستانی تناظر میں

✍️ محمد شہباز عالم مصباحی ____________ جمہوریت کا مفہوم ہی اس بات پر منحصر ہے کہ عوامی رائے کو فیصلہ سازی میں اولیت دی جائے اور ہر شہری کو یکساں حقوق اور مواقع فراہم کیے جائیں۔ سیکولرزم، جمہوریت کی بنیاد کو مضبوط کرتا ہے، جس کا مطلب یہ ہے کہ ریاست کو مذہبی معاملات میں […]

جمہوری سیکولر سیاست میں دھرم کی مداخلت: ہندوستانی تناظر میں
کیجریوال کا قصور
کیجریوال کا قصور

✍️ مفتی محمد ثناء الہدیٰ قاسمی نائب ناظم امارت شرعیہ بہار اڈیشہ و جھاڑکھنڈ ________________ دہلی کے وزیر اعلیٰ اروند کیجریوال کی پریشانیاں دن بدن بڑھتی جارہی ہیں، نچلی عدالت سے ضمانت ملتی ہے، ہائی کورٹ عمل در آمد پر روک لگا دیتا ہے، سپریم کورٹ میں عرضی داخل کرتے ہیں، اس کے قبل ہی […]

کیجریوال کا قصور
این جی اوز اور فلاحی اداروں میں علماء کا رول
این جی اوز اور فلاحی اداروں میں علماء کا رول

✍️ نقی احمد ندوی ________________ اس میں کوئی شک نہیں کہ علماء و فارغینِ مدارس اور طلباء کے اندر قوم و ملت اور ملک کی خدمت کا جو حسین جذبہ پایا جاتا ہے وہ عصری تعلیم گاہوں کے فارغین کے اندر عنقا ہے۔ این جی اوز اور فلاحی ادارے ان کے اس حسین جذبہ استعمال […]

این جی اوز اور فلاحی اداروں میں علماء کا رول
previous arrow
next arrow
Shadow

صدائے انور

از: مفتی محمد ثناء الہدیٰ قاسمی

نائب ناظم امارت شرعیہ پھلواری شریف، پٹنہ

_____________

مولانا محمد دبیر عالم نعمانی متخلص انورؔ ساکن موضع بہورار، تھانہ نان پور ضلع سیتامڑھی مشہور عالم ہیں، بافیض ہیں، دار العلوم دوری (قیام ۱۹۸۰) کے ذریعہ ان کا فیض آج بھی عام وتام ہے، شاعری مولانا کا نہ کبھی مشغلہ رہا اور نہ ہی باعث عزت وشہرت ، لیکن طبع موزوں ہو اور خیالات وارد ہوتے ہوں تو وزن، بحر قافیہ ، ردیف کے سانچے میں ڈھل کر افکار وخیالات اشعار بن جاتے ہیں، ان میں اصناف کی قید نہیں ہوتی، جو خیال آگیا وہ شعر میں ڈھل گیے، اب وہ حمد، نعت، غزل، ہزل کچھ بھی ہوسکتا ہے، درجہ بندی بعد میں ہوتی ہے اور جب یہ کثیر تعداد میں جمع ہوجاتی ہیں تو شاعر کو اس کی بقا کی فکردامن گیر ہوتی ہے اور وہ اسے کتابی شکل میں لانے میں کامیاب ہوجاتا ہے، کبھی شاعر اپنی زندگی میں ایسا نہیں کر سکا تو بعد میں ان کے وارثین اور شاگردان اس کام کو کر گذرتے ہیں، لیکن اب ایسے علمی ذوق والے وارث اور شاگرد بھی عنقا ہیں، یہاں سب اپنے اپنے پیرہن کی بات کرتے نظر آتے ہیں، میں نے بڑے علماء کے افادات اور کئی شعراء کے دواوین کو ضائع ہوتے دیکھا ہے ،  اس لیے یہ بات علی وجہ البصیرت کہہ رہا ہوں۔
مولانا محمد دبیر عالم انورؔ نعمانی نے یہ اچھا کیا کہ مدرسہ کی چہار دیواری اور دیہات کے مرغزاروں میں بیٹھ کر جو فکر سخن کیا، اس کو صدائے انورؔ کے نام سے محفوظ کرنے کا عزم کیا اور الحمد للہ کتاب ’’صدائے انور‘‘ کے نام سے تیار ہو گئی، اور اب یہ قارئین کی ضیافت طبع کے لیے طباعت کے مرحلے سے گذرنے والی ہے ۔
میں نے صدائے انور کے پورے مسودہ کا حرف حرف مطالعہ نہیں کیا ہے، لیکن ہر صنف سے کچھ کچھ اشعار، نعتیں اور غزلیں میرے مطالعہ سے گذری ہیں، اور بہت سارے اشعار سے محظوظ ہوا ہوں، بعض مجلسوں میں ان کا کلام ان کی زبانی بھی سنا ہے، شاعر کا کلام بزبان شاعر سننے کا مزہ اور کیف کچھ اور ہی ہوتا ہے، اس مجموعہ میں کئی نعتیں ہیں اور یقینا نعت نبی کہنا ایک طرف بڑی سعادت کی بات ہے، اور دوسری طرف یہ پل صراط پر چلنے جیساعمل ہے، ذرا سا ادھر ادھر ہوئے اوربات بگڑ گئی، مولانا دبیر عالم صاحب کی نعتیں اچھی ہیں اور ان میں حمد، نعت، مناجات کے فاصلے کو بر قرار رکھا گیا ہے اوربرتا گیا ہے ، لیکن دوسری طرف نعت کے نام سے لکھے گیے اشعار میں کافی تنوع پیدا ہو گیا ہے، اور اس سے کہیں کہیں قاری کو الجھن ہوتی ہے کہ یہ نعت ہے یا عصری حسیت سے بھر پور غزل کے اشعار، میرے مطالعہ کی روشنی میں نعت کے بیش تر اشعار میں توصیف نبی کا عنصر دب گیا ہے، جو نعت کی جان ہوا کرتی ہے۔ مثلا ایک عنوان نعت مقدس ہے، جس کا مطلع ہے۔
میری برکت کا اس دن عرش پہ اعلان ہوتا ہے کہ جس دن میرے گھر میں جب کوئی مہمان ہوتا ہے
اس پوری نعت میں ایک بھی شعر مدح رسول اور توصیف نبی پر نہیں ہے، ایک دوسری نعت کا مطلع ہے۔ ’’طائف میں نبی پتھر کھائے ہوئے تو ہیں‘‘۔ اس نعت میں پانچ اشعار ہیں، جن میں آخر کے دو اشعار کا نعت سے کوئی تعلق نہیں ہے، ایک شعر آپ بھی دیکھئے۔
جنت ملے گی مجھ کو دعاء ماں سے ملی ہے
قدموں کو اپنی ماں کے دبائے ہوئے تو ہیں
اس طرح کی اور کئی نعتیں اس مجموعے میں شامل ہیں، جن میں نعت اصطلاحی کا فقدان ہے اور اگر اس کے اوپر سے نعت کا عنوان ہٹا دیا جائے اور اس پر غزل لکھ دیا جائے تو قاری تمیز نہیں کر سکے گا کہ یہ نعت کے اشعار ہیں، بلکہ عصری حسیت سے بھر پور غزل کے اشعار ہی سمجھے گا، نعت کے عنوان سے درج اس مطلع کو دیکھئے۔
تب روتا غریب باپ ہے لے لے کے سسکیاں

جب ہاتھوں میں لیے زہر کوسوتی ہیں بیٹیاں
ظاہر ہے اس مضمون کا نعت سے کیا تعلق ہے، اس کے باوجود ایسا نہیں ہے کہ ان میں نعت کے اشعار بالکل نہیں ہیں، ہیں لیکن آٹے میں نمک کے برابر۔ اس لیے مولانا کو میرا مشورہ ہے کہ وہ اشعار کی درجہ بندی پھر سے کریں، نعت کی تعداد اس مجموعہ میں کم ہوجائے پر واہ  نہیں، لیکن اسے خالص رکھیں اور بقیہ اشعار کو غزل کے عنوان سے شامل کتاب کریں،اس مجموعہ میں جو غزلیں ہیں وہ عصر حاضر کے تناظر میں ہیں، ان میں ندرت خیال اور رفعت افکار تو نہیں ہے، لیکن ان میں ترسیل کی کمی نہیں ہے، انورؔ صاحب سادے لفظوں میں قاری تک اپنی بات  پہونچانے کا نہر جانتے ہیں، البتہ ان کو پڑھ کر ہم اسے اعلیٰ شاعری کا نمونہ نہیں قرار دے سکتے، کیوں کہ اس کا انداز بڑی حد تک مولوی کے وعظ کی طرح ہو گیا ہے، وعظ کی بڑی اہمیت ہے، اس سے انکار نہیں، لیکن واعظانہ انداز کی شاعری سے فن کو بڑا نقصان پہونچتا ہے، مضامین وتخیلات شاعر اپنے ماحول سے ہی اٹھاتا ہے، لیکن شعروادب کے لیے مستعمل صنعتیں، تشبیہ ، استعارے، تلمیحات اسے وعظ وخطاب سے اوپر لے جاتے ہیں اور تب وہ ادبی شہ پارہ بن پاتا ہے، صدائے انورؔ میں یہ کمی کھٹکتی ہے۔ اس حقیقت کے باوجود بعض غزلیں اس مجموعہ میں اچھی ہیں، چند اشعار بطورنمونہ درج ہے:
ہم شان ہندوستان کو بچانے میں لگے
وہ مجھ کو ہندوستان سے بھگانے میں لگے ہیں
ہم نے آگ جن کے گھر کی بجھائی تھی دوستو
وہ آگ میرے گھر میں لگانے میں لگے ہیں
ان سب کے باوجود اس حقیقت سے انکار نہیں کیا جا سکتا کہ اس کتاب کے ذریعہ مولانا کی شاعری کے نمونے ہمارے سامنے آگیے اورمستقبل میں کوئی شعراء سیتامڑھی کی تاریخ وتذکرہ لکھے گا تو مولانا کے ان رشحات قلم کو نظر انداز کرنااس کے لیے آسان نہیں ہوگا۔
نظمیں اور قطعات وغیرہ بھی اس مجموعہ میں شامل ہیں، حادثہ گجرات پر بھی ایک نظم ہے، جس میں قتل وغارت گری کے مناظر کی مضبوط اور مؤثر عکاسی کی گئی ہے، لیکن اسے بھی اپنے اسلوب، الفاظ اور شعری پیرہن کے اعتبار سے اعلیٰ ادب قرار نہیں دیا جا سکتا۔کتاب ابھی زیر طبع ہے، انتظار مجھے بھی ہے ، آپ بھی کیجئے، اس انتظار میں قیمت اور ملنے کے پتے کو بھی شامل کر لیجئے۔

Leave a Comment

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Scroll to Top
%d bloggers like this: