کانگریس کا شرم ناک رویہّ!
کانگریس کا شرم ناک رویہّ!

✍️شکیل رشید (ایڈیٹر ممبئی اردو نیوز) ___________________ لوک سبھا کے انتخابات میں اپنی ’بہترکامیابی‘ کے بعد کانگریس نے ایک اور ’ تیر مارلیا ہے ‘۔ کانگریس کی ترجمان سپریا شرینیت نے مودی حکومت کی ایک مہینے کی کارکردگی پر رپورٹ کارڈ پیش کیا ہے ، جس میں مرکزی سرکار کوآڑے ہاتھوں لیا ہے ۔ یہ […]

کانگریس کا شرم ناک رویہّ!
غم جہاں سے نڈھال سراپا درد و ملال!!
غم جہاں سے نڈھال سراپا درد و ملال!!

✍️ جاوید اختر بھارتی محمدآباد گوہنہ ضلع مئو یو پی _____________ دینی ، سیاسی ، سماجی اور تعلیمی مضامین اکثر و بیشتر لکھا جاتاہے اور چھوٹے بڑے سبھی قلمکار لکھتے رہتے ہیں مگر ضروری ہے کہ کچھ ایسے موضوع بھی سامنے آئیں جو حقائق پر مبنی ہوں یعنی آپ بیتی ہوں مرنے کے بعد تو […]

غم جہاں سے نڈھال سراپا درد و ملال!!
جمہوری سیکولر سیاست میں دھرم کی مداخلت: ہندوستانی تناظر میں
جمہوری سیکولر سیاست میں دھرم کی مداخلت: ہندوستانی تناظر میں

✍️ محمد شہباز عالم مصباحی ____________ جمہوریت کا مفہوم ہی اس بات پر منحصر ہے کہ عوامی رائے کو فیصلہ سازی میں اولیت دی جائے اور ہر شہری کو یکساں حقوق اور مواقع فراہم کیے جائیں۔ سیکولرزم، جمہوریت کی بنیاد کو مضبوط کرتا ہے، جس کا مطلب یہ ہے کہ ریاست کو مذہبی معاملات میں […]

جمہوری سیکولر سیاست میں دھرم کی مداخلت: ہندوستانی تناظر میں
کیجریوال کا قصور
کیجریوال کا قصور

✍️ مفتی محمد ثناء الہدیٰ قاسمی نائب ناظم امارت شرعیہ بہار اڈیشہ و جھاڑکھنڈ ________________ دہلی کے وزیر اعلیٰ اروند کیجریوال کی پریشانیاں دن بدن بڑھتی جارہی ہیں، نچلی عدالت سے ضمانت ملتی ہے، ہائی کورٹ عمل در آمد پر روک لگا دیتا ہے، سپریم کورٹ میں عرضی داخل کرتے ہیں، اس کے قبل ہی […]

کیجریوال کا قصور
این جی اوز اور فلاحی اداروں میں علماء کا رول
این جی اوز اور فلاحی اداروں میں علماء کا رول

✍️ نقی احمد ندوی ________________ اس میں کوئی شک نہیں کہ علماء و فارغینِ مدارس اور طلباء کے اندر قوم و ملت اور ملک کی خدمت کا جو حسین جذبہ پایا جاتا ہے وہ عصری تعلیم گاہوں کے فارغین کے اندر عنقا ہے۔ این جی اوز اور فلاحی ادارے ان کے اس حسین جذبہ استعمال […]

این جی اوز اور فلاحی اداروں میں علماء کا رول
previous arrow
next arrow
Shadow

saile rawan

مولانا سید محمد طاہر حسین گیاوی رح نے بھی داغ مفارقت دے دی

محمد قمر الزماں ندوی

    موت ان کی ہے کرے جس پہ زمانہ افسوس

    یوں   تو مرنے کو  یہاں  روز مرا  کرتے   ہیں 

 ملک کے نامور عالم دین متکلم اسلام ترجمان احناف مناظر اسلام قاطع بدعت حامی سنت حضرت سید محمد طاہر حسین گیاوی رح( پیدائش 1947ء وفات 10 جولائی 2023ء) کا آج کچھ دیر قبل انتقال ہوگیا ۔اللہ تعالیٰ حضرت مولانا مرحوم کی مغفرت فرمائے اور اعلیٰ علین میں جگہ عطا فرمائے وارثین متعلقین منتسبین اور تمام اہل تعلق کو صبر جمیل عطا فرمائے آمین 

   بچپن سے کانوں کی سماعت سے جن مقررین کی تقریریں کٹرت سے ٹکرائیں اور جن کی تقریریں کو خالی اوقات میں اکثرسنا کرتا تھا ،ان میں مولانا محمد طاہر حسین گیاوی رح کا نام سر فہرست ہے ۔ گو مولانا کی تقریریں مناظرہ کی شکل میں ہوتی اور راقم کو فن مناظرہ سے کوئی خاص مناسبت نہیں ہے اور اس کی افادیت کا بہت کم قائل ہوں ۔ لیکن اس کے باوجود مولانا کی زور خطابت ،قوت بیان اور طرز استدلال و استنباط کا ہمیشہ معترف اور قائل رہا ۔ مولانا کی خدمات کو بھلایا نہیں جاسکتا ، ان کی خدمات کا اعتراف سب کو ہے ۔انہوں نے احناف کی طرف سے بہترین وکالت کی اور غلط فہمیوں کا ازالہ کیا اور احناف پر لگائے گئے الزامات کا انہوں مسکت جواب دیا ۔ رد بدعت پر ان کا جو کام تقریر و تحریر کی شکل میں ہے وہ خاصا کی چیز ہے ۔ مولانا فطری طور پر بلا کے ذہین و فطین تھے، بے پناہ قوت حافظہ کے مالک تھے ،بڑی بڑی حدیثیں مع سند خطبہ میں پڑھتے تھے ، ہر بات مدلل کہتے تھے ، اللہ تعالیٰ نے فوت اخذ و استنباط کی بے پناہ صلاحیت سے نوازہ تھا ۔ مولانا نے رد بدعت پر جو کام کیا ہے ،اس کا کوئی جواب نہیں ۔ دار العلوم دیوبند کے فیض یافتہ اور تربیت یافتہ تھے ،دار العلوم دیوبند کے زمانہ اسٹرائیک میں طلبہ کی سرپرستی کی جس بنا پر سند فراغت حاصل نہیں کر سکے، لیکن اس کے باوجود انہوں نے دار العلوم دیوبند کو اپنی محبت و عقیدت سرمہ بنایا، اس کی عظمت معترف و قائل رہے اور دار العلوم دیوبند نے بھی ان کی خدمات کو سراہا ان کو ان کا مقام دیا ۔۔ مولانا گیاوی رح کے بعض معاصر کی بعض تحریریں ان سے متعلق کہیں پڑھنے کو ملی تھیں ،جس میں زمانہ اسٹرائیک کی ان کی بعض تقریروں کے اقتباسات تھے ،ان کو پڑھنے کے بعد لگا کہ واقعتا اس زمانہ میں بھی وہ شہنشاہ خطابت تھے مجمع کو مٹھی میں کرلینا ان کے جوش خطابت اور انداز بیان ان کے لئے آسان کردیا تھا۔ ان کی تقریروں کے ان جملوں نے طلبہ کے خون میں گردش پیدا کردیا ہوگا ۔ افسوس کہ ان تحریروں کو محفوظ نہیں رکھ سکا ۔ مولانا بہت ہی ذہین لوگوں میں تھے اور یہ حقیقت ہے کہ ذہین انسان میں کبھی کبھی شوخی بھی زیادہ پائی جاتی ہے ۔۔ بہر حال مولانا کے معاصر ان کے متعلقین ان کے بارے میں لکھیں گے اور خوب لکھیں ، میں نے دوران سفر جب کے ٹرین پر ہوں ، یہیں اطلاع ملی،  راقم نےمولانا کی زندگی کے بارے میں اپنے کچھ تاثرات پیش کردیے ،متعدد بار مولانا مرحوم کی براہ راست مجمع میں تقریریں سنیں اور سوشل ذرائع سے تو ان کی تقریریں سنتا تھا۔ 

    شاید مولانا کا انتقال آرار میں ہوا ہے اور وہیں ملکی محلہ ولی گنج میں کل صبح آٹھ بجے دن تدفین عمل میں آئے گی ۔ مولانا کافی دنوں سے کمزور اور بیمار تھے اولاد اور وارثین نے خوب خدمت کی اللہ تعالیٰ ان سب کو اس کا بہترین بدلہ دے آمین 

   بس دعا ہے کہ اللہ تعالیٰ حضرت مولانا سید محمد طاہر حسین گیاوی رح کی مغفرت فرمائے جنت الفردوس میں اعلیٰ مقام نصیب فرمائے تمام متعلقین وارثین اور پسماندگان کو صبر جمیل عطا فرمائے ،نیز امت کو ان کا بدل بلکہ نعم البدل نصیب فرمائے آمین 

 

 آسماں ان کی لحد پر شبنم افشانی کرے

سبزیہ نورستہ اس گھر کی نگہبانی کرے

Leave a Comment

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Scroll to Top
%d bloggers like this: