کانگریس کا شرم ناک رویہّ!
کانگریس کا شرم ناک رویہّ!

✍️شکیل رشید (ایڈیٹر ممبئی اردو نیوز) ___________________ لوک سبھا کے انتخابات میں اپنی ’بہترکامیابی‘ کے بعد کانگریس نے ایک اور ’ تیر مارلیا ہے ‘۔ کانگریس کی ترجمان سپریا شرینیت نے مودی حکومت کی ایک مہینے کی کارکردگی پر رپورٹ کارڈ پیش کیا ہے ، جس میں مرکزی سرکار کوآڑے ہاتھوں لیا ہے ۔ یہ […]

کانگریس کا شرم ناک رویہّ!
غم جہاں سے نڈھال سراپا درد و ملال!!
غم جہاں سے نڈھال سراپا درد و ملال!!

✍️ جاوید اختر بھارتی محمدآباد گوہنہ ضلع مئو یو پی _____________ دینی ، سیاسی ، سماجی اور تعلیمی مضامین اکثر و بیشتر لکھا جاتاہے اور چھوٹے بڑے سبھی قلمکار لکھتے رہتے ہیں مگر ضروری ہے کہ کچھ ایسے موضوع بھی سامنے آئیں جو حقائق پر مبنی ہوں یعنی آپ بیتی ہوں مرنے کے بعد تو […]

غم جہاں سے نڈھال سراپا درد و ملال!!
جمہوری سیکولر سیاست میں دھرم کی مداخلت: ہندوستانی تناظر میں
جمہوری سیکولر سیاست میں دھرم کی مداخلت: ہندوستانی تناظر میں

✍️ محمد شہباز عالم مصباحی ____________ جمہوریت کا مفہوم ہی اس بات پر منحصر ہے کہ عوامی رائے کو فیصلہ سازی میں اولیت دی جائے اور ہر شہری کو یکساں حقوق اور مواقع فراہم کیے جائیں۔ سیکولرزم، جمہوریت کی بنیاد کو مضبوط کرتا ہے، جس کا مطلب یہ ہے کہ ریاست کو مذہبی معاملات میں […]

جمہوری سیکولر سیاست میں دھرم کی مداخلت: ہندوستانی تناظر میں
کیجریوال کا قصور
کیجریوال کا قصور

✍️ مفتی محمد ثناء الہدیٰ قاسمی نائب ناظم امارت شرعیہ بہار اڈیشہ و جھاڑکھنڈ ________________ دہلی کے وزیر اعلیٰ اروند کیجریوال کی پریشانیاں دن بدن بڑھتی جارہی ہیں، نچلی عدالت سے ضمانت ملتی ہے، ہائی کورٹ عمل در آمد پر روک لگا دیتا ہے، سپریم کورٹ میں عرضی داخل کرتے ہیں، اس کے قبل ہی […]

کیجریوال کا قصور
این جی اوز اور فلاحی اداروں میں علماء کا رول
این جی اوز اور فلاحی اداروں میں علماء کا رول

✍️ نقی احمد ندوی ________________ اس میں کوئی شک نہیں کہ علماء و فارغینِ مدارس اور طلباء کے اندر قوم و ملت اور ملک کی خدمت کا جو حسین جذبہ پایا جاتا ہے وہ عصری تعلیم گاہوں کے فارغین کے اندر عنقا ہے۔ این جی اوز اور فلاحی ادارے ان کے اس حسین جذبہ استعمال […]

این جی اوز اور فلاحی اداروں میں علماء کا رول
previous arrow
next arrow
Shadow

وزیر اعظم مودی کا عدم اعتماد تحریک پر بحث، اپوزیشن پر سخت حملہ

کانگریس لیڈر ادھیر رنجن چودھری لوک سبھا سے سسپینڈ، پارٹی نے کہا: ایوان نہیں چلنے دیں گے۔

لوک سبھا میں  عدم اعتماد کی تحریک ناکام ہوچکی ہے۔ لیکن اس دوران لوک سبھا میں تلخ بحث جاری رہی۔  لوک سبھا میں تحریک عدم اعتماد پر بحث کے دوران وزیر اعظم نریندر مودی کے بارے میں نامناسب الفاظ استعمال کرنے پر ایوان میں کانگریس کے لیڈر ادھیر رنجن چودھری کو ایوان سے معطل کر دیا گیا ہے اور ان کا معاملہ ایوان کی استحقاق کمیٹی کو بھیج دیا گیا ہے۔ مرکزی وزیر پرہلاد جوشی کی طرف سے ایوان میں پیش کی گئی تحریک کو قبول کئے جانے کے بعد لوک سبھا اسپیکر برلا نے ادھیر رنجن چودھری کے ذریعہ ایوان میں لگار کئے جارہے رویہ کی تحقیقات کا معاملہ ایوان کی استحقاق کمیٹی کو بھیجتے ہوئے کمیٹی کی رپورٹ آنے تک انہیں ایوان سے معطل کرنے کا اعلان کیا۔

وہیں کانگریس صدر ملکا ارجن کھڑگے نے  لوک سبھا میں منی پور تشدد پر بولنے کے لئے وزیر اعظم نریندر مودی کا شکریہ ادا کیا اور کہا کہ اگر وہ ایسا پہلے کر لیتے تو پارلیمنٹ کا وقت بچ جاتا اور اہم بلوں پر بحث ہوتی۔ کھڑگے نے کہا کہ جب پی ایم مودی پارلیمنٹ میں منی پور کے بارے میں پہلے ہی بول چکے تھے تو انہیں سیشن کے اختتام پر ایوان میں کانگریس لیڈر ادھیر رنجن چودھری کو معطل کرنے کی کارروائی نہیں کرنی چاہیے تھی۔ انہوں نے کہا کہ یہ روایت اچھی نہیں اور جمہوریت کے لیے بہت خطرناک ہے۔  انہوں نے کہا، ’’شکریہ وزیر اعظم جی، آخر میں آپ نے ایوان میں منی پور تشدد پر بات کی۔ ہمیں یقین ہے کہ منی پور میں امن کی بحالی کی رفتار تیز ہوگی، ریلیف کیمپوں سے لوگ اپنے گھروں کو لوٹیں گے۔ ان کی بحالی ہوگی۔ ان کے ساتھ انصاف ہوگا۔ اگر آپ اپنی ضد اور تکبر پہلے چھوڑ دیتے تو پارلیمنٹ کا قیمتی وقت بچ جاتا۔

بتاتے چلیں کہ وزیر اعظم نریندر مودی نے عدم اعتماد کی تحریک پر بحث کے دوران اپنی طویل تقریر میں اپوزیشن نے سخت حملے کئے ، منی پور تشدد  پر اٹھائے گئے سوالات پر انہوں نے اپوزیشن خاص طور پر کانگریس کو ہی اس کیلئے ذمہ دار ٹھہرایا۔ اپوزیشن اتحاد پر وزیراعظم مودی نے کہا یہ کہ ‘انڈیا’ اتحاد نہیں ، یہ ‘گھمنڈیا’ اتحاد ہے ۔ یہاں سب کو دولہا بننا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ یہ ایسا ‘انڈیا’ اتحاد ہے، جس میں وزیراعظم عہدہ کے کئی امیدوار ہیں ۔وزیراعظم مودی نے اپوزیشن پارٹیوں کے اتحاد اور ‘انڈیا’ اتحاد پارٹیوں کو لے کر کہا کہ کانگریس ریاستوں میں ان سب کے ساتھ لڑ رہی ہے، مگر مرکز میں ان کے ساتھ کھڑی ہے ۔ یہ عوام سے اپنے گناہ کیسے چھپا سکتے ہیں ۔ حالات کی وجہ سے ہاتھوں میں ہاتھ ڈال کر گھوم رہے ہیں ۔ حالات بدلتے ہی پھر چھریاں نکالیں گے ۔

Leave a Comment

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Scroll to Top
%d bloggers like this: