کانگریس کا شرم ناک رویہّ!
کانگریس کا شرم ناک رویہّ!

✍️شکیل رشید (ایڈیٹر ممبئی اردو نیوز) ___________________ لوک سبھا کے انتخابات میں اپنی ’بہترکامیابی‘ کے بعد کانگریس نے ایک اور ’ تیر مارلیا ہے ‘۔ کانگریس کی ترجمان سپریا شرینیت نے مودی حکومت کی ایک مہینے کی کارکردگی پر رپورٹ کارڈ پیش کیا ہے ، جس میں مرکزی سرکار کوآڑے ہاتھوں لیا ہے ۔ یہ […]

کانگریس کا شرم ناک رویہّ!
غم جہاں سے نڈھال سراپا درد و ملال!!
غم جہاں سے نڈھال سراپا درد و ملال!!

✍️ جاوید اختر بھارتی محمدآباد گوہنہ ضلع مئو یو پی _____________ دینی ، سیاسی ، سماجی اور تعلیمی مضامین اکثر و بیشتر لکھا جاتاہے اور چھوٹے بڑے سبھی قلمکار لکھتے رہتے ہیں مگر ضروری ہے کہ کچھ ایسے موضوع بھی سامنے آئیں جو حقائق پر مبنی ہوں یعنی آپ بیتی ہوں مرنے کے بعد تو […]

غم جہاں سے نڈھال سراپا درد و ملال!!
جمہوری سیکولر سیاست میں دھرم کی مداخلت: ہندوستانی تناظر میں
جمہوری سیکولر سیاست میں دھرم کی مداخلت: ہندوستانی تناظر میں

✍️ محمد شہباز عالم مصباحی ____________ جمہوریت کا مفہوم ہی اس بات پر منحصر ہے کہ عوامی رائے کو فیصلہ سازی میں اولیت دی جائے اور ہر شہری کو یکساں حقوق اور مواقع فراہم کیے جائیں۔ سیکولرزم، جمہوریت کی بنیاد کو مضبوط کرتا ہے، جس کا مطلب یہ ہے کہ ریاست کو مذہبی معاملات میں […]

جمہوری سیکولر سیاست میں دھرم کی مداخلت: ہندوستانی تناظر میں
کیجریوال کا قصور
کیجریوال کا قصور

✍️ مفتی محمد ثناء الہدیٰ قاسمی نائب ناظم امارت شرعیہ بہار اڈیشہ و جھاڑکھنڈ ________________ دہلی کے وزیر اعلیٰ اروند کیجریوال کی پریشانیاں دن بدن بڑھتی جارہی ہیں، نچلی عدالت سے ضمانت ملتی ہے، ہائی کورٹ عمل در آمد پر روک لگا دیتا ہے، سپریم کورٹ میں عرضی داخل کرتے ہیں، اس کے قبل ہی […]

کیجریوال کا قصور
این جی اوز اور فلاحی اداروں میں علماء کا رول
این جی اوز اور فلاحی اداروں میں علماء کا رول

✍️ نقی احمد ندوی ________________ اس میں کوئی شک نہیں کہ علماء و فارغینِ مدارس اور طلباء کے اندر قوم و ملت اور ملک کی خدمت کا جو حسین جذبہ پایا جاتا ہے وہ عصری تعلیم گاہوں کے فارغین کے اندر عنقا ہے۔ این جی اوز اور فلاحی ادارے ان کے اس حسین جذبہ استعمال […]

این جی اوز اور فلاحی اداروں میں علماء کا رول
previous arrow
next arrow
Shadow

مولانا سید طاہر حسین گیاوی ؒ

مفتی محمد ثناء الہدیٰ قاسمی/ نائب ناظم امارت شرعیہ 

 نامور عالم دین، ممتاز مناظر اسلام، ترجمان حق وصداقت، بے مثال خطیب، برجستہ گو اور حاضر جواب ، جامع مسجد امروہہ کے فارغین میں گل سر سبد، ماہر علم کلام، مصنف کتب کثیرہ، بانی دار العلوم حسینیہ پلاموں مولانا سید طاہر حسین گیاوی کا 10جولائی 2023مطابق 21ذی الحجہ 1444ھ روز سوموار پونے بارہ بجے دوپہر آرہ ضلع بھوجپور میں انتقا ل ہو گیا،وہ برسوں سے صاحب فراش تھے۔11جولائی 2023کو جنازہ کی نماز ان کی وصیت کے مطابق ان کے داماد مولانا ولی اللہ ولی نے پڑھائی، مولانا ولی اللہ احد کے قریب ایک مسجد کے امام ہیں، مدینہ منورہ میں قیام ہے، اللہ نے سہولت بہم پہونچائی اور وہ وقت پر مدینہ سے تشریف لے آئے، بعد نماز مغرب ولی گنج حویلی مسجد آرہ میں ہزاروں معتقدین کی موجودگی میں انہوں نے جنازہ کی نماز پڑھائی، تدفین آرہ کے روضہ گنج قبرستان میں ہوئی، پس ماندگان میں اہلیہ ، چار لڑکے مولانا عبد الغافر، مولانا عبد الناصر، عبد القادر ، عبد الظاہر، اور پانچ لڑکیاں شامل ہیں، مولانا عبد الغافر دار العلوم حسینیہ پلاموں اور مولانا عبد الناصر دار العلوم حسینیہ لوہردگا کے ناظم ہیں۔ مولانا  کوئی چالیس سال قبل ہی کوچ بلاک واقع اپنے آبائی وطن کا برگاؤں سے نقل مکانی کرکے آرہ کے سندیش تھانہ علاقہ میں منتقل ہو گیے تھے، یہاں انہوں نے آرہ کے ولی گنج محلہ میں اپنا مکان بنالیا تھااور آخری سانس یہیں لی۔

ابتدائی تعلیم گاؤں کے مکتب سے حاصل کرنے کے بعد ابو المحاسن مولانا محمد سجاد بانی امارت شرعیہ کے قائم کردہ مدرسہ انوار العلوم گیا میں داخلہ لیا اور عربی سوم تک کی تعلیم یہاں پائی، وہاں سے مدرسہ مظہر العلوم بنارس چلے گیے، متوسطات کی کتابیں یہیں پڑھیں ایک سال مدرسہ مظاہر علوم سہارن پور میں بھی گذارا ۔  1967مطابق 1386ھ میں دار العلوم دیو بند میں داخل ہوئے۔ دو سال تعلیمی سلسلہ جاری رہا، لیکن ہفتم کے سال 1969میں طلبہ کے اسٹرائک کی قیادت میں نامور ساتھیوں مولانا نور عالم خلیل امینی ، مولانا اعجاز احمد شیخو پور رحمھما اللہ کے ساتھ آپ بھی انتظامیہ کی نظر پر چڑھ گئے چنا نچہ آپ کا اخراج ہو گیا، مولانا سید فخر الدین صاحب ؒ کے مشورہ سے جامعہ اسلامیہ جامع مسجد امروہہ میں دورہ حدیث میں داخلہ لیا اور 1970مطابق 1399ھ میں یہیں سے فراغت پائی تعلیمی اسناد کے اعتبار سے آپ الٰہ آباد بورڈ سے عالم فاضل اور جامعہ اردو علی گڈھ سے ادیب کامل بھی تھے۔

 تدریسی زندی کا آغاز جامعہ اسلامیہ ریوڑی تالاب بنارس سے کیا، کم وبیش نو سال بنارس کے مختلف مدارس میں تدریسی خدمات انجام دیتے رہے۔ 1984ء مطابق1404ھ میں انہوں نے دار العلوم حسینیہ کے نام سے پلاموں میں ایک مدرسہ قائم کیا،  اسے پروان چڑھانے کے لیے کوشاں رہے، مگر مناظرہ ، خطابت اور مختلف قسم کے اسفار کی وجہ سے وہ اپنی پوری توجہ ادھر مرکوز نہیں کرسکے، اس لیے ادارہ کی اپنی کوئی شناخت نہیں بن سکی۔

یہ بھی پڑھیں:

 تقریر اور مناظرہ کی بے پناہ صلاحیت کے ساتھ اللہ رب العزت نے انہیں تصنیفی ملکہ اور تالیفی شعور سے وافر حصہ عطا کیا تھا، ان کی بیش تر کتابیں مناظرانہ انداز کی ہیں، ان میں عصمت انبیاء اور مودودی، اعجاز قرآنی، رضاخانیت کے علامتی مسائل، العدد الصحیح فی رکعات التراویح، نماز وں کے بعد کی دعا، شہید کربلااور یزید ، مقتدی پر فاتحہ واجب نہیں، انگشت بوسی سے بائبل بوسی تک ، ترک تقلید ایک بدعت ہے، بریلویت کا شیش محل، مسئلہ قدرت، حدیث ثقلین، خطبات مناظر اسلام خاص طور پر قابل ذکر ہیں۔

 مناظرہ ان کا خاص موضوع تھا، کئی جگہ انہوں نے اپنے دلائل سے فتح کے جھنڈے گاڑے، کئی مناظروں میں ان کی شرکت مولانا ارشاد احمد صاحب مبلغ دار العلوم دیو بند کے ساتھ ہوئی، جھریا ، کٹک اور کٹیہار کے مناظرے ان کے یادگار مناظرے ہیں، جھریا کے مناظرے کی روداد اور تفصیلات مطبوعہ شکل میں موجود ہے۔

 مولانا کی خطیبانہ اور قائدانہ صلاحیتیں دار العلوم دیو بند کی طالب علمی کے دوران ابھر کر طلبہ کے سامنے آئیں، مولانا نور عالم خلیل امینی ؒ نے تفصیل سے ان کی اس صلاحیت کا تذکرہ اپنی کتاب ’’رفتگاں نا رفتہ‘‘ میں کیا ہے، یہاں ایک اقتباس کا نقل کرنا فائدے سے خالی نہیں ، لکھتے ہیں:

 "وہ از خود یا کسی تجربہ کار کے مشورے سے اسٹرائک کے لائق وفائق اور مطلوبہ صلاحیت کے قائد بن کر ابھرے اور طلبہ کے انبوہ پر جس طرح چھا گئے، راقم نے اس کی مثال اپنی طالب علمانہ اور مدرسانہ دونوں زندگیوں میں تادم تحریر نہیں دیکھی۔ان کی زبان قینچی کی طرح چلتی، وہ سیلِ رواں کی طرح بہتی، کسی توقف یا انقطاع سے ان کا سلسلہ کلام جتنا نا آشنا تھا، اس کو میں صحیح تعبیر دینے سے بالکل قاصر ہوں۔ اس سے بڑھ کر یہ بات تھی کہ وہ طلبہ پرایسی حکومت کرنے لگے تھے، جیسی کوئی غیر معمولی رعب داب کا مالک مطلق العنان خودسر ڈکٹیٹر کرتا ہے، جس کے پاس اپنی بات من وعن منوانے کے لیے فوجی طاقت، اقتدار کی قوت، ملک کے سارے وسائل، انتظامی اداروں کی آہنی گرفت اور حدود و قیود نا آشنا اپنے عزم و ارادے کی زبردست کمک ہوتی ہے، وہ جب چاہے عوام کے سروں کی پکی ہوئی فصل کو یک لخت کاٹ ڈالنے کے لیے مکمل انتظام کے ساتھ تیار رہتا ہے۔ وہ طلبہ سے کہتے بیٹھ جاؤ،تو اسی سکنڈ میں سب بیٹھ جاتے، کہتے کھڑے ہو جاؤ، تو سبھی آن کی آن میں کھڑے ہو جاتے،سر جھکالو،تو سبھی اس لمحے سرنگوں ہو جاتے، صرف دائیں طرف دیکھو، تو کسی کی مجال نہ ہوتی کہ نفاذ حکم کے پورے دورانیے میں بائیں طرف دیکھ لے، سبھی طلبہ تین منٹ میں فلاں جگہ جمع ہو جائیں، تو دو ہی منٹ میں سب اس جگہ آ موجود ہوتے۔ ان کی ساری اداؤں میں نظم و ضبط ہوتا، ڈسپلن ہوتا، قائدانہ انداز ہوتا، خطیبانہ شان ہوتی، مربیانہ وقار ہوتا، استادانہ مہارت ہوتی،منتظمانہ دوررسی وحکمت عملی ہوتی اور وہ سب کچھ ہوتا، جس کی وجہ سے کوئی واجب التعظیم ومحترم المقام اور باعثِ فرماں برداری ہوتا ہے‘‘۔(ص:127-128)

اقتباس ذرا طویل ہو گیا، لیکن مولانا کی قائدانہ وخطیبانہ صلاحیتوں کو سمجھنے کے لیے یہ ضروری تھا ، مولانا کی اسی خطیبانہ صلاحیت نے ملک اور بیرون ملک کے لوگوں کو ان کا گرویدہ بنا رکھا تھا، دلائل کی قوت اور طلاقت لسانی سے وہ مجمع پر چھا جاتے تھے اور دو تین گھنٹے تک مجمع انہیں پورے انہماک کے ساتھ سنتا رہتا تھا، مولانا کی مقبولیت ومحبوبیت میں جس قدر اضافہ ہوتا گیا ، مولانا کے وقت کی قیمت بھی بڑھتی چلی گئی،آخر میں تاریخ نوٹ ہونے کے لیے پیشگی” نوٹ "کی ادائیگی ضروری ہوا کرتی تھی، جلسہ والے ادائیگی کے بعد مطمئن ہوجاتے تھے، مولانا کس طرح جلسہ گاہ پہونچیں گے، یہ ان کا اپنا درد سر ہوتا تھا، بہت ہوا تو اسٹیشن یا بس اسٹینڈ سے جلسہ والے اپنی گاڑی میں لے جاتے تھے، اس موقع سے بھی مولانا اپنی غیرت اور خود داری سے سمجھوتہ نہیں کرتے تھے، گاڑی لینے نہیں پہونچی تو بلا توقف واپس ہوجاتے، مزاج کے خلاف بات ہو گئی تو اسٹیج پر خطبہ پڑھ کر واپس ہوتے بھی میں نے ان کو دیکھا تھا، ایسے موقع سے ہم چھوٹوں کی جان پر بن آتی، مولانا کے نام پر آئے مجمع کو سنبھالنا آسان کام نہیں ہوتا، مولانا کی سادہ زندگی اور بود وباش میں جو رعب تھا، وہ کم لوگوں کے حصہ میں آتا ہے۔

مولانا حق کے ترجمان تھے، اس لیے باطل قوتیں ان کے پیچھے پڑی رہا کرتی تھیں، ایک بار بھدرک اور کئی بار دوسری جگہوں پر مولانا پر قاتلانہ حملے ہوئے، لیکن اللہ نے حفاظت فرمائی، کئی بار ان کی شہادت کی افواہ اڑی، لیکن مولانا اپنا کام کرتے رہے، اور جب اللہ نے وقت مقرر کر رکھا تھا اس وقت دنیا سے تشریف لے گیے۔

 مولانا سے میری ملاقات امارت شرعیہ آنے سے قبل کی تھی، بہت ساری جگہوں پر اصلاح معاشرہ کے جلسوں کو ہم لوگوں نے ساتھ ساتھ خطاب کیا، ایک بار ہم دونوں دار العلوم دیو بند ساتھ ساتھ پہونچ گیے، مولانا دار العلوم کے مخرج تھے اور میں جمعیۃ الطلبہ کا سابق جنرل سکریٹری ، مولوی اظہار الحق مرحوم  ان دنوں انجمن تقویۃ الایمان سے جڑے ہوے تھے،انہوں نے "نودرہ” میں ہم لوگوں کا استقبالیہ انتظامیہ کی بلا اجازت کے رکھ دیا، طلبہ اپنے ہم وطنوں کو استقبالیہ دیا بھی کرتے تھے، لیکن یہ بات طویل ہو گئی اور مولوی اظہار الحق کے اخراج کے لیے جو فرد جرم  بنایا گیا، اس میں یہ بھی ایک سبب بن گیا، بعد میں مولانا دار العلوم کے اکابر کے نور نظر بن گئے ، کیوں کہ” ترجمان دیو بند” پورے ہندوستان میں ان کے طرز کا دوسرا کوئی نہیں تھا، جمعیت علماء سے بھی ان کی قربت بڑھی اور ان کی شرکت وہاں بھی ہونے لگی۔

 مولانا کی علالت کے زمانہ میں ایک بار ہوسپیٹل میں ان سے ملا اور دوسری بار ان کے گھر آرہ میں ملاقات کی سعادت ملی، یہ موقع تھا مولانا قاری علی انور کے مدرسہ کے جلسہ کا ، وقت فارغ ہوا تو میں ان کی عیادت کے لیے جا پہونچا، مولانا کی صحت وعافیت کے لیے اللہ سے دعا کرکے لوٹا، کئی سال ہو گیے، ادھر زمانہ سے ملاقات نہیں ہوئی تھی، انتقال کی خبر آئی تو میں سفر پر تھا، جنازہ اور تعزیتی مجلس میں حاضری سے بھی محروم رہا، دعا تو کہیں سے بھی کی جا سکتی ہے، سو دعاء مغفرت اور ایصال ثواب کا سلسلہ جاری ہے، اللہ مغفرت فرمائے اور پس ماندگان کو صبر جمیل عطا کرے۔ آمین یا رب العالمین وصلی اللہ علی النبی الکریم وعلی اٰلہ وصحبہ اجمعین۔

Leave a Comment

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Scroll to Top
%d bloggers like this: