کانگریس کا شرم ناک رویہّ!
کانگریس کا شرم ناک رویہّ!

✍️شکیل رشید (ایڈیٹر ممبئی اردو نیوز) ___________________ لوک سبھا کے انتخابات میں اپنی ’بہترکامیابی‘ کے بعد کانگریس نے ایک اور ’ تیر مارلیا ہے ‘۔ کانگریس کی ترجمان سپریا شرینیت نے مودی حکومت کی ایک مہینے کی کارکردگی پر رپورٹ کارڈ پیش کیا ہے ، جس میں مرکزی سرکار کوآڑے ہاتھوں لیا ہے ۔ یہ […]

کانگریس کا شرم ناک رویہّ!
غم جہاں سے نڈھال سراپا درد و ملال!!
غم جہاں سے نڈھال سراپا درد و ملال!!

✍️ جاوید اختر بھارتی محمدآباد گوہنہ ضلع مئو یو پی _____________ دینی ، سیاسی ، سماجی اور تعلیمی مضامین اکثر و بیشتر لکھا جاتاہے اور چھوٹے بڑے سبھی قلمکار لکھتے رہتے ہیں مگر ضروری ہے کہ کچھ ایسے موضوع بھی سامنے آئیں جو حقائق پر مبنی ہوں یعنی آپ بیتی ہوں مرنے کے بعد تو […]

غم جہاں سے نڈھال سراپا درد و ملال!!
جمہوری سیکولر سیاست میں دھرم کی مداخلت: ہندوستانی تناظر میں
جمہوری سیکولر سیاست میں دھرم کی مداخلت: ہندوستانی تناظر میں

✍️ محمد شہباز عالم مصباحی ____________ جمہوریت کا مفہوم ہی اس بات پر منحصر ہے کہ عوامی رائے کو فیصلہ سازی میں اولیت دی جائے اور ہر شہری کو یکساں حقوق اور مواقع فراہم کیے جائیں۔ سیکولرزم، جمہوریت کی بنیاد کو مضبوط کرتا ہے، جس کا مطلب یہ ہے کہ ریاست کو مذہبی معاملات میں […]

جمہوری سیکولر سیاست میں دھرم کی مداخلت: ہندوستانی تناظر میں
کیجریوال کا قصور
کیجریوال کا قصور

✍️ مفتی محمد ثناء الہدیٰ قاسمی نائب ناظم امارت شرعیہ بہار اڈیشہ و جھاڑکھنڈ ________________ دہلی کے وزیر اعلیٰ اروند کیجریوال کی پریشانیاں دن بدن بڑھتی جارہی ہیں، نچلی عدالت سے ضمانت ملتی ہے، ہائی کورٹ عمل در آمد پر روک لگا دیتا ہے، سپریم کورٹ میں عرضی داخل کرتے ہیں، اس کے قبل ہی […]

کیجریوال کا قصور
این جی اوز اور فلاحی اداروں میں علماء کا رول
این جی اوز اور فلاحی اداروں میں علماء کا رول

✍️ نقی احمد ندوی ________________ اس میں کوئی شک نہیں کہ علماء و فارغینِ مدارس اور طلباء کے اندر قوم و ملت اور ملک کی خدمت کا جو حسین جذبہ پایا جاتا ہے وہ عصری تعلیم گاہوں کے فارغین کے اندر عنقا ہے۔ این جی اوز اور فلاحی ادارے ان کے اس حسین جذبہ استعمال […]

این جی اوز اور فلاحی اداروں میں علماء کا رول
previous arrow
next arrow
Shadow

ہلدوانی کے مسلمانوں کا المیہ !

✒️شکیل رشید

( ایڈیٹر ممبئی اردو نیوز)

__________

ہلدوانی کی غفور بستی اور وہاں رہنے والے مسلمانوں کا المیہ یہ ہے کہ وہ ایک ایسی حکومت کے زیر سایہ ہیں جو سر سے لے کر پیر تک مسلم دشمنی میں ڈوبی ہوئی ہے ۔ بلڈوزر چلا کر ایک مسجد اور مدرسے کو شہید کرنا سارے المیے کا ایک پہلو ہے ، سچ یہ ہے کہ اتراکھنڈ کی دھامی حکومت ساری غفور بستی کو ، جس میں چار ہزار مکانات ہیں اور کوئی پچاس ہزار مسلمان بستے ہیں ، اُجاڑنا چاہتی ہے ۔ یوں بھی کہا جا سکتا ہے کہ دھامی کے اترا کھنڈ میں اِن دنوں ایک ایسا تجربہ کیا جا رہا ہے جِس پر آنے والے دنوں میں سارے ملک میں عمل کیا جا سکتا ہے ۔ مسجد اور مدرسے کو شہید کرنے کا سیدھا مطلب مسلمانوں کو اکسانا ہے کہ دیکھ لو ہم تمہارے تمام مذہبی مقامات کو اجاڑ رہے ہیں جو کرنا ہے کر لو ۔ ظاہر ہے کہ مسلمان سوائے سینوں پر گولیاں کھانے کے اور کیا کر سکتے ہیں ، اور ہلدوانی میں یہی ہوا ہے ، احتجاجی مسلمانوں کے سینوں پر گولیاں داغی گئی ہیں ، اور سیکڑوں احتجاجیوں کو زخمی کیا گیا ہے ۔ دھامی کی حکومت نے یو سی سی کا تجربہ کیا ، پھر مسجد شہید کرنے کا ، اور اس کے بعد سڑکوں پر اترنے والوں کے سینے سرخ کرنے کا ، اب یہ مزید تجربے کریں گے ، اب یہ مسلمانوں کے خلاف مقدمے بنائیں گے ، انہیں گرفتار کریں گے ، ان کے گھروں پر بلڈوزر چلائیں گے اور ساری مسلم قوم کو یہ پیغام دیں گے کہ اگر کسی نے بھی احتجاج کرنے کی جرأت کی تو اس کا بھی حشر ایسا ہی ہوگا ۔ مسلمان مسجدوں کو شہید ہوتا تو نہیں دیکھ سکتا ، وہ احتجاج تو کرے گا ہی ، اس لیے کہ اس ملک میں احتجاج کوئی جرم نہیں ہے ۔ لیکن افسوس کہ اس ملک میں مسلمانوں کے احتجاج کو جرم بنا دیا گیا ہے ، اور پولیس فورس ہندتو کی فوج بنا دی گئی ہے ۔ ہلدوانی میں مسلم بستی پر پولیس والے بھی پتھراؤ کرتے ہوئے دیکھے جا گیے ہیں ۔ سوال یہ ہے کہ دھامی حکومت نے یہ کیسے طئے کر لیا کہ مسجد اور مدرسہ غیرقانونی ہیں ، اس لیے ان کا ڈھایا جانا ضروری ہے ؟ اتراکھنڈ کی عدالت نے اس تعلق سے کوئی فیصلہ نہیں دیا ، سپریم کورٹ سے پہلے ہی ہلدوانی میں انہدامی کارروائی پر روک ہے ! اس کا سیدھا مطلب یہ ہے کہ دھامی حکومت نے قانون کو ، آئین کو اور لاء اینڈ آرڈر کو کھیل سمجھ رکھا ہے ۔ کیوں ؟ اس لیے کہ سارے ملک میں ، چند ریاستوں کو چھوڑ کر ، اس وقت ہندو فرقہ پرستی کا عفریت پوری شدت کے ساتھ نفرت پھیلانے میں لگا ہوا ہے ، اور اسے مرکز کی مودی سرکار کی پوری حمایت حاصل ہے ۔ مرکز اور اتراکھنڈ کی حکومتوں کو لگتا ہے کہ وہ اس ملک سے مسلم آثار کو مٹا دیں گے ، مسجدوں اور مقبروں کو ، مدرسوں کو ہٹا دیں گے ، اور اس ملک کو ایک ایسے ہندو راشٹر میں تبدیل کر دیں گے کہ دیکھنے والوں کو لگے گا یہاں کبھی مسلمان رہے ہی نہیں ! لیکن یہ ممکن نہیں ہے ۔ نہ اسلام ختم ہوگا اور نہ مسلمان ، لیکن نفرت ، فرقہ وارانہ تشدد اور عصبیت اس ملک کو معاشی طور پر ہی نہیں ایک قوت کے طور پر بھی کمزور کر دے گی ، انتشار اسے تنزلی کی طرف ڈھکیل دے گا ۔ اور اس کے ذمے دار نفرت پروسنے والے سیاست داں ہی ہوں گے۔

Leave a Comment

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Scroll to Top
%d bloggers like this: