تعزیہ سے بت پرستی تک!
تعزیہ سے بت پرستی تک!

از: شمس الدین سراجی قاسمی ______________ “أَيْنَ تَذْهَبُونَ” تم کہاں جارہے ہو ، محرم الحرام تو اسلامی تقویم ہجری کا پہلا مہینہ ہے اور تم نے پہلے ہی مہینہ میں رب کو ناراض کر دیا، اب یہ بات کسی پر پوشیدہ نہیں کہ محرم الحرام میں کئے جانے والے اعمال، بدعات ہی نہیں بلکہ کفریات […]

ماہِ محرم الحرام کی بدعات و خرافات
ماہِ محرم الحرام کی بدعات و خرافات

از: عائشہ سراج مفلحاتی __________________ محرم الحرام اسلامی سال کا پہلا مہینہ ہے، جو اشھر حرم، یعنی حرمت والے چار مہینوں میں سے ایک ہے، احادیث میں اس ماہ کی اہمیت وفضیلت مذکور ہے، یومِ عاشوراء کے روزے کی فضیلت بیان‌ کی گئی ہے، جو اسی ماہ کی دسویں تاریخ ہے؛ لیکن افسوس کی بات […]

معرکۂ کربلا کے آفاقی اصول اور پیغام
معرکۂ کربلا کے آفاقی اصول اور پیغام

از: محمد شہباز عالم مصباحی _______________ یہ تجزیاتی مقالہ کربلا کی عظیم الشان جنگ اور اس کے آفاقی پیغام کا جائزہ لیتا ہے۔ امام حسین (ع) اور ان کے ساتھیوں کی قربانیوں کو ایک تاریخی اور اخلاقی واقعے کے طور پر پیش کیا گیا ہے جو نہ صرف مسلمانوں بلکہ پوری انسانیت کے لیے ایک […]

تبصرہ نگاری ایک طرح کی گواہی ہے
تبصرہ نگاری ایک طرح کی گواہی ہے

✍️ڈاکٹر ظفر دارک قاسمی zafardarik85@gmail.com ________________ تبصرہ نگاری نہایت دلچسپ اور اہم فن ہے ۔ تبصرے متنوع مسائل پر کیے جاتے ہیں ۔ مثلا سیاسی ،سماجی ، ملکی ، قانونی احوال و واقعات وغیرہ وغیرہ ۔ لہٰذا اس موضوع پر مزید گفتگو کرنے سے قبل مناسب معلوم ہوتا ہے کہ پہلے تبصرے کا مفہوم و […]

ملک میں تین نئے فوجداری قانون کا نفاذ
ملک میں تین نئے فوجداری قانون کا نفاذ

✍️ مفتی محمد ثناء الہدیٰ قاسمی نائب ناظم امارت شرعیہ بہار اڈیشہ و جھاڑکھنڈ _________________________ انڈین پینل کوڈ (آئی پی سی) 1860، کرمنل پروسیجر کوڈ (سی آر پی سی) 1898 اور انڈین ایویڈنس ایکٹ 1872 ایک جولائی 2024ء سے تاریخ کے صفحات میں دفن ہوگئے ہیں، ان کی جگہ بھارتیہ نیائے سنہیتا، بھارتیہ ناگرگ سورکچھا […]

previous arrow
next arrow

سکھ مت اور اسلام میں مماثلت اورافتراقات کی جہتین:ایک تقابلی جائزہ

✍️ احمد سہیل

________________

سکھ مت، دنیا کا پانچواں سب سے بڑا منظم مذہب، پنجاب، بھارت میں پندرہویں صدی میں قائم ہوا۔ گرو نانک دیو اور ان کے جانشین سکھ گرووں نے مذہبی فلسفے کا یہ نظام قائم کیا۔ مقدس صحیفہ، سری گرو گرنتھ صاحب، سکھوں کا موجودہ گرو ہے۔ سکھ مت کا مذہبی فلسفہ روایتی طور پر گرومت کے نام سے جانا جاتا ہے۔ سکھ مت کی ابتدا لفظ سکھ سے ہوئی ہے، جس کی سنسکرت کی جڑ ہے جس کا مطلب ہے "شاگرد” یا "سیکھنے والا”۔ تقریباً 27 ملین پیروکاروں کے ساتھ یا دنیا کی آبادی کا 0.39%، تقریباً۔ 83% سکھ بھارت میں رہتے ہیں۔ اسلام وہ مذہب ہے جو ایک مذہبی کتاب قرآن پاک نے بیان کیا ہے۔ اس کے ماننے والے اسے ایک لاجواب خدا (اللہ پاک ) کا لفظی لفظ سمجھتے ہیں۔ مسلمان پیغمبر اسلام حضرت محمد(ص) کے مظاہروں اور حقیقی زندگی کی مثالوں (سنت) کی پیروی کرتے ہوئے زندگی بسر کرتے ہیں۔ احادیث کے مجموعوں میں سنت رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے صحابہ کی روایت کے ذریعے جمع کی گئی ہے۔ اسلام کا مطلب ہے خدا کے آگے سر تسلیم خم کرنا۔ اسلام کا لفظ عربی لفظ "سلام” سے ماخوذ ہے جس کے معنی امن کے ہیں۔ تقریباً 1.7 بلین پیروکاروں یا عالمی آبادی کے 23% کے ساتھ، اسلام اپنے پیروکاروں کی تعداد کے لحاظ سے دوسرا سب سے بڑا مذہب ہے۔ مختلف مذاہب ہونے کے باوجود، سکھ مت اور اسلام میں بہت سی مماثلتیں ہیں۔ ان میں سے زیادہ تر مماثلتیں ایک واحد، ہمہ گیر، اور محبت کرنے والے خُدا کے تصور کے گرد مرکوز ہیں۔ دونوں عقائد ایک جیسی معیاری، معاشرتی اور ماحولیاتی اخلاقیات کا اشتراک کرتے ہیں۔ ان میں سے کچھ مماثلتیں اس مضمون میں بیان کی گئی ہیں۔


سکھ مذہب بمقابلہ اسلام، افتراقات  اورخلیقہ:
سکھ مذہب اور اسلام دنیا کے دو بڑے مذاہب ہیں، دونوں دنیا بھر میں لاکھوں پیروکاروں کے ساتھ۔ اگرچہ وہ کچھ مماثلت رکھتے ہیں، جیسے توحید اور انبیاء پر عقیدہ، دونوں کے درمیان اہم فرق بھی ہیں۔ان فرقوں کو سمجھنا ان لوگوں کے لیے اہم ہے جو ان مذاہب کے بارے میں مزید جاننا چاہتے ہیں، اور ساتھ ہی ان لوگوں کے لیے جو یہ فیصلہ کرنا چاہتے ہیں کہ کس کی پیروی کرنی ہے۔ سکھ مذہب اور اسلام کے درمیان ایک اہم فرق ان کی اصل ہے۔ سکھ مت کی بنیاد بھارت  کے پنجاب کے علاقے میں 15ویں صدی میں گرو نانک نے رکھی تھی، جب کہ اسلام کی بنیاد جزیرہ نمائے عرب میں 7ویں صدی میں پیغمبر اسلام نے رکھی تھی۔.ایک اور فرق ان کی مقدس کتابوں کا ہے – اسلام کے لیے قرآن پاک  اور سکھ مت کے لیے گرو گرنتھ صاحب۔ یہ نصوص ہر مذہب کی مرکزی تعلیمات اور عقائد پر مشتمل ہیں، اور ان کو ان کے متعلقہ پیروکار مقدس تصور کرتے ہیں۔اگرچہ دونوں مذاہب نماز اور اچھے اعمال کی اہمیت میں ایک عقیدہ رکھتے ہیں، لیکن وہ اپنے طریقوں اور رسومات میں مختلف ہیں۔
، سکھ مذہب کمیونٹی کی خدمت اور مساوات کی اہمیت پر زور دیتا ہے، اور پیروکاروں سے عقیدے کے پانچ اشیا  پہننے کا مطالبہ کرتا ہے جیسے پانچ  کے کہا جاتا ہے ۔ جیسے  اسلام کو مانے والے  دن میں پانچ وقت کی نماز ادا کرتے ہیں اور رمضان کے مہینے میں روزے رکھتے ہیں۔


سکھ مذہب  اور اسلام کی تاریخ اور اصل حقائق کا تجزیہ
سکھ مت اور اسلام دو الگ الگ مذاہب ہیں جن کی ابتدا دنیا کے مختلف حصوں میں ہوئی۔ سکھ مت کی ابتدا 15ویں صدی میں جنوبی ایشیا کے پنجاب کے علاقے میں ہوئی، جبکہ اسلام کی ابتدا 7ویں صدی میں جزیرہ نما عرب میں ہوئی۔سکھ مذہب کی بنیاد گرو نانک نے رکھی تھی، جو 1469 میں تلوندی کے شہر میں پیدا ہوئے تھے، جسے اب پاکستان میں ننکانہ صاحب کے نام سے جانا جاتا ہے۔ گرو نانک ایک روحانی رہنما تھے جنہوں نے مساوات اورمعاشرتی  انصاف کو فروغ دینے کی کوشش کی۔ اس نے بڑے پیمانے پر سفر کیا اور بھجن کے ذریعے اپنی تعلیمات کو پھیلایا، جو بعد میں سکھوں کی مقدس کتاب گرو گرنتھ صاحب میں مرتب کی گئیں۔ دوسری طرف، اسلام کی بنیاد حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم نے 610 عیسوی میں مکہ شہر میں رکھی جو کہ جدید دور کے سعودی عرب میں واقع ہے۔ محمد (صلی)  ایک تاجر تھے۔  جنھوں نے جبرائیل فرشتہ کے ذریعے اللہ تعالی کی طرف سے وحی حاصل کی تھی۔ ان آیات کو بعد میں قرآن مجید میں مرتب کیا گیا جو کہ اسلام کی مقدس کتاب ہے۔
دونوں مذاہب کی ایک بھرپور تاریخ ہے اور انہوں نے ان خطوں کی ثقافتوں اور معاشروں کی تشکیل میں اہم کردار ادا کیا ہے جہاں سے ان کی ابتدا ہوئی ہے۔ سکھ مذہب ہندومت اور اسلام سے متاثر ہوا ہے، جبکہ اسلام یہودیت اور عیسائیت سے متاثر ہوا ہے۔ دونوں مذاہب کے درمیان ایک بڑا فرق خدا کے لیے ان کا نقطہ نظر ہے۔ سکھ مت میں، خدا کو ایک مکمل روح کے طور پر دیکھا جاتا ہے جو ہر چیز میں موجود ہے۔ اسلام میں، خدا کو ایک الگ ہستی کے طور پر دیکھا جاتا ہے جس کی عبادت اور اطاعت کی جاتی ہے۔ اپنے اختلافات کے باوجود، دونوں مذاہب میں کچھ مماثلتیں ہیں، جیسے کہ ایک خدا پر یقین اور دعا اور خیرات کی اہمیت۔ تاہم، ان کے عقائد اور طرز عمل میں اختلافات نے پوری تاریخ میں دونوں برادریوں کے درمیان تناؤ اور تنازعات کو جنم دیا ہے۔


سکھ مذہب اور اسلام کے عقائد اور اسکی عملیات:
سکھ مت اور اسلام دو الگ الگ مذاہب ہیں جن میں منفرد عقائد اور طرز عمل ہیں۔ سکھ مت ایک توحیدی مذہب ہے جس کی ابتدا 15ویں صدی میں ہندوستان کے پنجاب کے علاقے میں ہوئی۔ یہ دس گرووں کی تعلیمات پر مبنی ہے، جن میں سے آخری، گرو گوبند سنگھ نے خالصہ قائم کیا، جو بپتسمہ یافتہ سکھوں کا ایک فوجی حکم ہے۔
دوسری طرف، اسلام ایک توحیدی مذہب ہے جس کی بنیاد 7ویں صدی میں جزیرہ نما عرب میں پیغمبر محمد صلی اللہ علیہ وسلم نے رکھی تھی۔ یہ قرآن کی تعلیمات پر مبنی ہے، جسے مسلمان محمد (ص) پر نازل ہونے والے اللہ تعالی  کا کلام مانتے ہیں۔
سکھ مت کے کلیدی عقائد میں سے ایک اک اونکار کا تصور ہے، جس کا مطلب ہے "ایک خالق”۔ سکھ ایک خدا کے وجود پر یقین رکھتے ہیں جو ہمہ گیر اور قادر مطلق ہے۔ وہ پیدائش اور موت کے چکر پر بھی یقین رکھتے ہیں، جسے سمسار کہا جاتا ہے، اور کرما کے تصور میں بھی یقین رکھتے ہیں، جس میں کہا گیا ہے کہ اس زندگی میں کسی کے اعمال اگلی زندگی میں ان کی قسمت کا تعین کریں گے۔اس کے علاوہ، سکھ خدمت، یا بے لوث خدمت، اور نام سمرن، یا خدا کے نام پر مراقبہ کی اہمیت پر یقین رکھتے ہیں۔
دوسری طرف، اسلام بھی ایک خدا یا اللہ کے وجود پر یقین رکھتا ہے، جو مہربان اور رحم کرنے والا ہے۔ مسلمان تقدیر، یا قدر کے تصور پر یقین رکھتے ہیں، جو کہتا ہے کہ دنیا میں جو کچھ ہوتا ہے وہ خدا کی مرضی کے مطابق ہوتا ہے۔وہ اسلام کے پانچ ستونوں کی اہمیت پر بھی یقین رکھتے ہیں، جن میں ایمان کا اعلان، نماز، صدقہ دینا، رمضان کے مہینے میں روزہ رکھنا، اور حج کرنا، یا مکہ، مدینہ منّورہ  کی زیارت کرنا شامل ہیں۔ سکھ مذہب اور اسلام دونوں کے اپنے منفرد طریقے اور رسومات ہیں۔ سکھ مت میں، سب سے اہم عمل سکھوں کا مقدس صحیفہ گرو گرنتھ صاحب کی تلاوت ہے۔ سکھ بھی کیرتن، یا عقیدتی گانا، اور لنگا کی مشق کرتے ہیں۔
سکھ مذہب اور اسلام دونوں کے اپنے منفرد طریقے اور رسومات ہیں۔ سکھ مت میں، سب سے اہم عمل سکھوں کا مقدس صحیفہ گرو گرنتھ صاحب کی تلاوت ہے۔ سکھ کیرتن، یا عقیدتی گانا، اور لنگر، یا اجتماعی کھانے کا اشتراک بھی کرتے ہیں۔ اسلام میں، سب سے اہم عمل روزانہ کی نماز، یا صلاۃ ہے، جو دن میں پانچ بار ادا کی جاتی ہے۔ مسلمان بھی رمضان کے مہینے میں روزہ رکھتے ہیں اور اپنے مذہبی فرائض کے حصے کے طور پر صدقہ یا زکوٰۃ دیتے ہیں۔ اگرچہ سکھ مت اور اسلام کے درمیان کچھ مماثلتیں ہیں، جیسے کہ ایک خدا پر یقین اور نماز اور مراقبہ کی اہمیت، ان کے عقائد اور طریقوں میں بھی نمایاں فرق ہے۔ یہ ہر فرد پر منحصر ہے کہ وہ کون سا مذہب ان کے ساتھ گونجتا ہے اور وہ کس راستے پر چلنا چاہتے ہیں۔


سکھ مذہب اور اسلام کا تقابل
سکھ مت اور اسلام مختلف عقائد اور طریقوں کے ساتھ دو الگ الگ مذاہب ہیں۔ یہاں ان دو مذاہب کا تقابل  پیش کیا جاتا ہے:
عقائد:
اسلام ایک توحیدی مذہب ہے جو ایک خدا، اللہ، اور پیغمبر محمد کی تعلیمات پر یقین رکھتا ہے۔ سکھ مت بھی ایک توحیدی مذہب ہے جو ایک خدا، واہگورو، اور دس سکھ گرووں کی تعلیمات پر یقین رکھتا ہے۔
صحیفے:
اسلام کی مقدس کتاب قرآن ہے، جس کے بارے میں خیال کیا جاتا ہے کہ یہ خدا کا کلام ہے جیسا کہ پیغمبر محمد صلی اللہ علیہ وسلم پر نازل ہوا ہے۔ سکھ مت کی مقدس کتاب گرو گرنتھ صاحب ہے، جو دس سکھ گرووں کے بھجن اور تحریروں کا مجموعہ ہے۔
اسلام کے پانچ ستون ہیں جو ایمان کے لیے ضروری سمجھے جاتے ہیں: شہادت (ایمان کا اعلان)، نماز (نماز)، زکوٰۃ (صدقہ)، صوم (رمضان کے روزے) اور حج (مکہ کی زیارت)۔ سکھ مت کے تین ستون ہیں: نام جاپو (خدا کے نام پر مراقبہ)، کرات کرو (ایک ایماندارانہ زندگی کمانا)، اور وند چھکو (دوسروں کے ساتھ بانٹنا)۔
سکھ  پانچ نکات  کی پیروی کرتے ہیں، جو عقیدے کے پانچ چیزیں   ہیں جو ہر وقت پہنتے ہیں: جن میں کیش (کٹے ہوئے بال)، کنگھا (کنگھا)، کارا (اسٹیل کا کڑا)، کچا (انڈر گارمنٹ) اور کرپان (تلوار) شامل ہیں۔


معاشرتی مسائل میں تفاوت:
سکھ مذہب ختنہ کے عمل کے خلاف ہے، جبکہ اسلام نے تاریخی طور پر مرد اور عورت دونوں کے لیے اس پر عمل کیا ہے۔ مزید برآں، سکھ مذہب ذات پات کی بنیاد پر امتیاز کے خلاف ہے، جب کہ ان دونوں میں   اسلام ذات پات کے بارے میں کوئی خاص موقف نہیں ہے۔ مجموعی طور پر، جبکہ سکھ مذہب اور اسلام کے درمیان کچھ مماثلتیں ہیں، جیسے کہ ایک خدا پر یقین، ان کے عقائد، طریقوں اور معاشرتی مسائل میں بھی نمایاں فرق ہے۔


کون سا بہتر مذہب یا نظریہ حیات ہے: سکھ مت یا اسلام؟
مذاہب کا موازنہ کرنا اور ایک کو دوسرے سے بہتر قرار دینا مناسب نہیں۔ سکھ مذہب اور اسلام دونوں منفرد ہیں اور ان کے اپنے عقائد، طریقوں اور روایات کا اپنا ایک سیٹ ہے۔ یہ افراد پر منحصر ہے کہ وہ اس مذہب کا انتخاب کریں جو ان سے مطابقت رکھتا ہو اور ان کی اقدار اور عقائد کے مطابق ہو۔
تاہم، یہ نکتہ ذہن میں رہنا ضروری ہے کہ سکھ مذہب اور اسلام میں کچھ بنیادی اختلافات ہیں۔ مثال کے طور پر، سکھ مت ایک توحید پرست مذہب ہے جو ایک خدا کے تصور پر یقین رکھتا ہے، جبکہ اسلام بھی ایک توحید پرست مذہب ہے لیکن اللہ کو واحد اور واحد خدا کے تصور پر یقین رکھتا ہے۔
دونوں مذاہب کے درمیان ایک اور فرق مذہبی متون کے بارے میں ان کا نقطہ نظر ہے۔ سکھ مت کا مقدس صحیفہ، گرو گرنتھ صاحب، سکھ گرووں کا زندہ مجسم تصور کیا جاتا ہے اور اس کا احترام اور احترام کیا جاتا ہے۔ اس کے برعکس، اسلام کا مقدس صحیفہ، قرآن، اللہ کا لفظی لفظ سمجھا جاتا ہے اور بغیر کسی سوال کے اس کی پیروی کی جاتی ہے۔
مزید برآں، سکھ مذہب گناہ اور سزا کے تصور پر یقین نہیں رکھتا، جبکہ اسلام گناہ اور توبہ پر سخت زور دیتا ہے۔ سکھ مت میں، سب کے لیے بے لوث خدمت، ہمدردی اور محبت پر توجہ دی جاتی ہے، جب کہ اسلام اللہ کی مرضی کے سامنے سر تسلیم خم کرنے اور اسلام کے پانچ ستونوں کی پیروی پر زور دیتا ہے۔
بالآخر، یہ فیصلہ فرد پر منحصر ہے کہ کون سا مذہب ان کے عقائد اور اقدار کے مطابق ہے۔ سکھ مت اور اسلام دونوں روحانیت کا راستہ اور زندگی کا ایک ایسا طریقہ پیش کرتے ہیں جو امن، خوشی اور تکمیل لا سکتا ہے۔
خلاصہ کلام:
اگرچہ سکھ مذہب اور اسلام دونوں میں کچھ مماثلتیں ہیں، جیسے توحید اور اعلیٰ طاقت کے سامنے سر تسلیم خم کرنے پر توجہ، دونوں مذاہب کے درمیان اہم فرق بھی ہیں۔ یہ اختلافات ان کے عقائد، طریقوں اور روایات میں دیکھے جا سکتے ہیں۔دونوں مذاہب کے درمیان بنیادی فرق میں سے ایک خدا کے ساتھ ان کا نقطہ نظر ہے۔ سکھ مت میں، خدا کو ایک ہمہ گیر قوت کے طور پر دیکھا جاتا ہے جو ہر چیز کے اندر موجود ہے، جبکہ اسلام میں، خدا کو ایک الگ ہستی کے طور پر دیکھا جاتا ہے جس کی عبادت اور اطاعت کی جاتی ہے۔
مزید برآں، سکھ مذہب مساوات اور معاشرتی  انصاف پر زیادہ زور دیتا ہے، جبکہ اسلام انفرادی تقویٰ اور مذہبی قانون کی اطاعت پر زیادہ زور دیتا ہے۔
دونوں مذاہب کے درمیان ایک اور اہم فرق مذہبی متون کے بارے میں ان کا نقطہ نظر ہے۔ جب کہ اسلام کی مقدس کتاب قرآن ہے، سکھ مت میں گرو گرنتھ صاحب ہے۔ دونوں نصوص اپنے متعلقہ پیروکاروں کے لیے تعلیمات اور رہنمائی پر مشتمل ہیں، لیکن ان سے رجوع کیا جاتا ہے اور ان کی تشریح مختلف طریقے سے کی جاتی ہے۔ خاطر نشان رہے  سکھ مذہب  برہمن ازم ، ملائیت اور مٖغل  استبداد  کا ردعمل  تھا۔
آخر کار، یہ سوال کہ کون سا مذہب "بہتر” ہے ایک موضوعی ہے جو انفرادی پر منحصر ہے۔

Leave a Comment

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Scroll to Top
%d bloggers like this: