کانگریس کا شرم ناک رویہّ!
کانگریس کا شرم ناک رویہّ!

✍️شکیل رشید (ایڈیٹر ممبئی اردو نیوز) ___________________ لوک سبھا کے انتخابات میں اپنی ’بہترکامیابی‘ کے بعد کانگریس نے ایک اور ’ تیر مارلیا ہے ‘۔ کانگریس کی ترجمان سپریا شرینیت نے مودی حکومت کی ایک مہینے کی کارکردگی پر رپورٹ کارڈ پیش کیا ہے ، جس میں مرکزی سرکار کوآڑے ہاتھوں لیا ہے ۔ یہ […]

کانگریس کا شرم ناک رویہّ!
غم جہاں سے نڈھال سراپا درد و ملال!!
غم جہاں سے نڈھال سراپا درد و ملال!!

✍️ جاوید اختر بھارتی محمدآباد گوہنہ ضلع مئو یو پی _____________ دینی ، سیاسی ، سماجی اور تعلیمی مضامین اکثر و بیشتر لکھا جاتاہے اور چھوٹے بڑے سبھی قلمکار لکھتے رہتے ہیں مگر ضروری ہے کہ کچھ ایسے موضوع بھی سامنے آئیں جو حقائق پر مبنی ہوں یعنی آپ بیتی ہوں مرنے کے بعد تو […]

غم جہاں سے نڈھال سراپا درد و ملال!!
جمہوری سیکولر سیاست میں دھرم کی مداخلت: ہندوستانی تناظر میں
جمہوری سیکولر سیاست میں دھرم کی مداخلت: ہندوستانی تناظر میں

✍️ محمد شہباز عالم مصباحی ____________ جمہوریت کا مفہوم ہی اس بات پر منحصر ہے کہ عوامی رائے کو فیصلہ سازی میں اولیت دی جائے اور ہر شہری کو یکساں حقوق اور مواقع فراہم کیے جائیں۔ سیکولرزم، جمہوریت کی بنیاد کو مضبوط کرتا ہے، جس کا مطلب یہ ہے کہ ریاست کو مذہبی معاملات میں […]

جمہوری سیکولر سیاست میں دھرم کی مداخلت: ہندوستانی تناظر میں
کیجریوال کا قصور
کیجریوال کا قصور

✍️ مفتی محمد ثناء الہدیٰ قاسمی نائب ناظم امارت شرعیہ بہار اڈیشہ و جھاڑکھنڈ ________________ دہلی کے وزیر اعلیٰ اروند کیجریوال کی پریشانیاں دن بدن بڑھتی جارہی ہیں، نچلی عدالت سے ضمانت ملتی ہے، ہائی کورٹ عمل در آمد پر روک لگا دیتا ہے، سپریم کورٹ میں عرضی داخل کرتے ہیں، اس کے قبل ہی […]

کیجریوال کا قصور
این جی اوز اور فلاحی اداروں میں علماء کا رول
این جی اوز اور فلاحی اداروں میں علماء کا رول

✍️ نقی احمد ندوی ________________ اس میں کوئی شک نہیں کہ علماء و فارغینِ مدارس اور طلباء کے اندر قوم و ملت اور ملک کی خدمت کا جو حسین جذبہ پایا جاتا ہے وہ عصری تعلیم گاہوں کے فارغین کے اندر عنقا ہے۔ این جی اوز اور فلاحی ادارے ان کے اس حسین جذبہ استعمال […]

این جی اوز اور فلاحی اداروں میں علماء کا رول
previous arrow
next arrow
Shadow

سیل رواں

گلہائے رنگا رنگ سے ہے زینت چمن

ہندوستان جیسے متنوع ملک میں یوسی سی کا نفاذ انتہائی حساس مسئلہ

محمد علم اللہ

ان دنوں پورے ملک میں یکساں سول کوڈ کا موضوع زیر بحث ہے، چونکہ مکمل ڈرافٹ ابھی پیش نہیں کیا گیا ہے اس لیے کئی حلقوں سے اس پر کوئی واضح رائے سامنے نہیں آئی ہے۔ تاہم حکومتی اعلامیہ اور سیاسی پارٹیوں کی جانب سے جو بیان بازی کی جا رہی ہے اس سے بہت کچھ مطلب صاف ہوجاتا ہے کہ اس بل میں کیا ہوگا۔ امریکہ، برطانیہ اور مغرب کے متعدد ممالک میں اس جیسا قانون پہلے سے نافذ ہے اس لیے اغلب امکان یہی ہے کہ یہ بل اسی نوعیت کی کوئی چیز ہوگی۔ سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ ہندوستان جیسے ملک میں جن کی اکثریت کسی نہ کسی مذہب کو مانتی اور اس کے قوانین پر عمل کرتی ہے اس طرح کا قانون کتنا سود مند ہوگا اور معاشرے پراس کے کیا اثرات مرتب ہوں گے۔

ہندوستان ایک وفاقی اتحاد ہے جس میں کل 29 وفاقی ریاستیں اور7 یونین علاقہ جات ہیں۔ اس طرح ان کی کل تعداد 36 ہوتی ہے۔ یہ ریاستیں اور یونین علاقے اضلاع میں منقسم ہوتے ہیں اور اسی سے ہندوستان کی انتظامی تقسیم بنتی چلی جاتی ہے۔آئین ہند تمام ریاستوں اور یونین علاقوں میں انتظامی اور قانونی اختیارات تقسیم کرتا ہے جو مرکز اور ریاست کے مابین منقسم ہوتے ہیں۔یہی سبب ہے کہ ہندوستان میں قوانین اپنی خصوصی حیثیت کی وجہ سے تمام ریاستوں میں مختلف ہیں۔ یہاں تک کہ ممنوعات اور ٹیکس جیسے مسائل میں بھی۔ ہمارے ملک میں مخصوص آرٹیکلز ہیں، جیسے آرٹیکل 369 اورآرٹیکل 371 اے سے 371 ایچ اور آئی تک مختلف ریاستوں کے لیے مختلف دفعات فراہم کرتے ہیں۔ آرٹیکل 370 کی حالیہ منسوخی بھی اس سلسلے میں ایک اہم تبدیلی ہے۔ مزید برآں، ریاستوں میں زبان کی پالیسیاں بھی مختلف ہیں، کرناٹک، کیرالہ اور تمل ناڈو میں سرکاری زبان ہندی نہیں ہے۔ان ریاستوں کی سرکاری زبان کنڑ، ملیالم اور تمل ہے۔اسی طرح، شراب نوشی اور گائے کے ذبیحہ سے متعلق قوانین بھی ریاستوں میں مختلف ہیں۔ کچھ ریاستیں، جیسے اروناچل پردیش، میزورم، میگھالیہ، ناگالینڈ، تریپورہ، سکم، کیرالہ، اور مغربی بنگال میں گائے کے ذبیحہ پر پابندی نہیں ہے۔ جبکہ’ہندی بھاشی‘تقریباً تمام ریاستوں میں گائے کا ذبیحہ ایک بڑا جرم ہے۔تعلیم اور ملازمت میں ریزرویشن کو لے کر بھی ریاستوں اور کمیونٹیز کے اپنے اختیارات ہیں۔یہ تغیرات ہندوستان کے اندر متنوع قانونی منظر نامے کو ظاہر کرتے ہیں، اور یکساں سول کوڈ کے نفاذ سے متعلق بحث و مباحثے کو مزید ہوا دیتے ہیں۔

یکساں سول کوڈ (یو سی سی) کے لیے رہنما خطوط قابل نفاذ نہ ہونے کی کئی وجوہ ہیں۔ سب سے پہلے، وہ محض رہنما خطوط ہیں اور قانونی طور پر پابند نہیں ہیں،یعنی تعمیل لازمی نہیں ہے۔ دوم، آرٹیکل 44، جو کہ یو سی سی سے متعلق ہے، واحد ہدایتی اصول نہیں ہے جس پر عمل نہیں ہوتا۔ مثال کے طور پر، ایک ہدایتی اصول ہے جس میں کہا گیا ہے کہ ریاست کو افراد اور مختلف گروہوں کے درمیان معاشی عدم مساوات، حیثیت اور مواقع میں عدم مساوات کو کم کرنے کے لیے کام کرنا چاہیے۔ اس کے باوجود، ملک میں معاشی عدم مساوات مسلسل بڑھ رہی ہے، جس میں دولت زیادہ تر اعلیٰ ذات کے ہندووں کے ہاتھ میں مرکوز ہے، جیسا کہ فوربس کی 100 امیر ترین ہندوستانیوں کی فہرست سے ظاہر ہے۔
جدید نظام کو یکساں سول کوڈ کی بنیاد کے طور پر استعمال کرنا قابل قبول نہیں ہے۔ اس طرح کے نظاموں میں صحت اور امن پر معاشی تحفظات کو فوقیت دی جاتی ہے، جس کی وجہ سے خطرناک طرز عمل جیسے بدکاری، ہم جنس پرستی، جسم فروشی، شراب اور منشیات کا غلط استعمال، اور جوا وغیرہ ان طریقوں کے صحت کے لیے سنگین نتائج ہیں، جن میں جنسی طور پر منتقل ہونے والی بیماریوں کا پھیلاو اور جرائم میں اضافہ، بشمول عصمت دری وغیرہ شامل ہیں۔ اسی طرح ہر سال لاکھوں غیر پیدائشی بچے اسقاط حمل کر دیے جاتے ہیں ان کی کہانی الگ ہے۔
یو پی حکومت کے ذریعہ منظور کردہ قانون کا مقصد کچھ شرائط کی بنیاد پر مذہبی تبدیلیوں کو منظم کرنا اور زبردستی، دھوکہ دہی یا غلط بیانی کے ذریعے ہونے والی تبدیلیوں کو روکنا ہے۔ اس میں خاص طور پر ان شادیوں کا ذکر کیا گیا ہے جن کا واحد مقصد لڑکی کے مذہب کو کالعدم قرار دینا ہے۔ تاہم، مسلم لڑکوں اور ہندو لڑکیوں کی بین المذاہب شادیوں پر ایسے قوانین کی منتخب توجہ کے بارے میں خدشات پیدا ہوئے ہیں، جبکہ ہندو لڑکوں اور مسلم لڑکیوں کی بین المذاہب شادیوں پر توجہ نہیں دی گئی ہے۔

ناقدین کا استدلال ہے کہ یہ انتخابی نقطہ نظر قانون کے پیچھے حقیقی نیت کے بارے میں سوالات اٹھاتا ہے اور ممکن ہے اس میں کوئی پوشیدہ ایجنڈا موجود ہو۔ کچھ کا خیال ہے کہ یہ ہندو لڑکیوں سے شادی کرنے والے مسلمان لڑکوں کے خلاف تعصب کی عکاسی کرتا ہے، جو ممکنہ طور پر فرقہ وارانہ اور تفرقہ انگیز نظریات سے متاثر ہوتا ہے۔ صنفی امتیاز کا مسئلہ بھی اٹھایا جاتا ہے کیونکہ قانون بنیادی طور پر ان شادیوں کو نشانہ بناتا ہے جہاں لڑکی اسلام قبول کر لیتی ہے، جبکہ ایسے معاملات پر توجہ نہیں دی جاتی جہاں ایک ہندو لڑکا مسلمان لڑکی سے شادی کرتا ہے۔ ناقدین کا خیال ہے کہ بین المذاہب شادیوں پر توجہ مرکوز کرنے کے بجائے ان داخلی سماجی چیلنجوں سے نمٹنے کے لیے کوششیں بہتر ہوں گی۔
مسلم لڑکیوں سے شادی کرنے والے ہندو لڑکوں کے خلاف مستقبل کی ممکنہ مہم کے بارے میں تشویش، جسے ”لو جہاد” کہا جاتا ہے، قیاس آرائی پر مبنی ہے اور اس میں ملوث افراد کے مختلف عوامل اور ارادوں پر منحصر ہے۔ یہ نوٹ کرنا ضروری ہے کہ سوال میں فراہم کردہ معلومات مخصوص خدشات اور نقطہ نظر پر مبنی ہے اور ہو سکتا ہے کہ اس میں شامل تمام فریقین کے خیالات کی نمائندگی نہ کرے۔
شادی کے لیے قانونی عمر بڑھانا ایک پالیسی فیصلہ ہے جس کا مقصد مختلف سماجی اور قانونی خدشات کو دور کرنا ہے۔ تاہم، اس طرح کے فیصلے کے ممکنہ مضمرات اور غیر ارادی نتائج پر غور کرنا ضروری ہے۔ ناقدین کا استدلال ہے کہ جب شادی کی عمر میں اضافہ کیا جا رہا ہے، ملک میں جنسی عمل کے لیے رضامندی کی قانونی عمر 16 سال پر برقرار ہے، جس کی وجہ سے تضاد ہے۔ اس سے اس بارے میں سوالات اٹھتے ہیں کہ آیا شادی سے پہلے کے تعلقات اور مردوں اور عورتوں کے درمیان جنس، خوبصورتی اور کشش کو تجارتی بنانے کی حوصلہ افزائی کا کوئی بنیادی ارادہ ہے۔
ہم جنس پرستی کو جرم قرار دینے کے بعد سپریم کورٹ کا ہم جنس شادیوں کو قانونی حیثیت دینے کے بارے میں آنے والا فیصلہ ایک اہم پیش رفت ہے۔ متنوع نقطہ نظر اور اس میں شامل حقائق کی تفہیم کے ساتھ اس موضوع سے رجوع کرنا ضروری ہے۔اگرچہ ہم جنس پرستی کو جرم قرار دیا گیا ہے، لیکن یہ تسلیم کرنا ضروری ہے کہ اس معاملے پر رائے مختلف ہو سکتی ہے۔ کچھ افراد اناٹومی، فزیالوجی اور صحت سے متعلق خدشات کا حوالہ دیتے ہوئے ہم جنس تعلقات کے بارے میں منفی خیالات رکھ سکتے ہیں۔ تاہم، سائنسی شواہد پر بحث کی بنیاد رکھنا اور تمام افراد کے حقوق اور وقار کا احترام کرنا بہت ضروری ہے۔
تین طلاق پر پابندی کے بارے میں، مودی حکومت کے فیصلے کا مقصد خواتین اور بچوں پر اس عمل کے اثرات سے متعلق خدشات کو دور کرنا تھا۔ اگرچہ پابندی کی مخصوص دفعات اور نتائج کی جانچ پڑتال کی جا سکتی ہے، لیکن اس کا مقصد اس عمل سے متاثر ہونے والوں کے حقوق اور بہبود کا تحفظ کرنا تھا۔ چونکہ یہ معاملات پیچیدہ اور حساس ہیں، اس لیے ہمدردی، تنوع کے احترام، اور تمام افراد کے لیے انسانی حقوق کے اصولوں کو برقرار رکھنے کے عزم کے ساتھ بات چیت کرنا بہت ضروری ہے، چاہے ان کا جنسی رجحان یا صنفی شناخت کچھ بھی ہو۔
ہندوستان میں سیکولرازم مذہب کی نفی کرنے کے بجائے اپنے مذہب پر عمل کرنے اور اس کی تبلیغ کرنے کے افراد کے حقوق کو قبول کرنے کی علامت ہے۔ 15، 16، اور 25-29 جیسے آئینی آرٹیکلز ان حقوق کے تحفظ کے لیے بنائے گئے ہیں۔ ہندوستان میں لوگوں کی اکثریت مضبوط مذہبی عقائد رکھتی ہے اور خاندان کے ادارے کی قدر کرتی ہے، جس کی جڑیں ان کے ثقافتی ورثے میں گہری ہیں۔
یکساں سول کوڈ (یو سی سی) کے نفاذ کو مسلمانوں کی مخالفت کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے۔ وہ یو سی سی کو مسترد کر سکتے ہیں، اگر یہ اسلامی اصولوں کی ان کی سمجھ سے متصادم ہے یا پھر یہ اسلامی عائلی قوانین کے بعض پہلووں کو جدید بنانے کی کوشش کرتا ہے، جیسے محدود تعدد ازدواج اور طلاق۔ مزید برآں، اگر کوئی یو سی سی ہم جنس پرستی، عصمت فروشی، اور جسم فروشی جیسے تصورات کو فروغ دیتا ہے، یا اگر وہ وراثت کے قوانین میں ترمیم کرنے کی کوشش کرتا ہے جو کہ اسلام میں مردوں اور عورتوں کی معاشی ذمہ داریوں سے براہ راست منسلک ہیں، تو اسے قبول کیے جانے کا امکان نہیں ہے۔
اگرچہ خاندانی منصوبہ بندی کے عارضی طریقے مسلم کمیونٹی میں قابل قبول ہیں، لیکن بچوں کی تعداد پر مکمل پابندی عائد کرنے سے انتخابی اسقاط حمل اور لڑکیوں کے بچوں کے قتل میں اضافہ ہو سکتا ہے۔ مسلمان ایسے کسی بھی اقدام کی مخالفت کریں گے جو مسلم لڑکیوں کی ہندو مردوں کے ساتھ بین المذاہب شادیوں کی حوصلہ افزائی کرتے ہیں جبکہ مسلم لڑکوں اور ہندو لڑکیوں کے درمیان شادیوں پر پابندی برقرار رکھتے ہیں۔ مزید برآں، مسلم کمیونٹی کے وقف املاک کو استعمال کرنے یا اذان، نماز، روزہ اور حج جیسی اسلامی رسومات پر عمل کرنے کے حقوق کی خلاف ورزی کو بھی مزاحمت کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے۔
مسلمانوں کے لئے یہ ضروری ہے کہ وہ اسلامی شریعت کے اصولوں پر صحیح اور متوازن طریقے سے عمل کریں، وراثت، مہر اور طلاق میں خواتین کے حقوق سے متعلق قوانین کے صحیح نفاذ کو یقینی بنائیں۔ اگر لوگوں کی مرضی کے خلاف یو سی سی کو مسلط کرنے کی کوشش کی جاتی ہے، تو اس سے سخت ردعمل کی توقع کی جاتی ہے، اور کمیونٹی اس طرح کے اقدامات کی مخالفت کے لیے پرامن ذرائع استعمال کرنے کا حق محفوظ رکھتی ہے۔ مسلمان ایسے اقدامات کی حمایت کریں گے جو مشترکہ مذہبی اخلاقیات کی بنیاد پر مختلف مذاہب کو متحد کرتے ہیں، وہ مذہبی عداوت کو فروغ دینے والے کسی بھی اقدام کی مخالفت کریں گے۔شراب کی ممانعت، غیر ازدواجی اور شادی سے پہلے کے تعلقات، جوا، جسم فروشی، عریانیت اور فحاشی، اور ہم جنس پرستی جیسے مسائل پر رائے عامہ کا اندازہ لگانے کے لیے ایک ملک گیر سروے کرایا جانا چاہیے۔ ان سوالات کو اس موضوع پر لاء کمیشن کی طرف سے جاری کردہ سوالنامے میں شامل کیا جا سکتا ہے۔

ہندوستان ایک سیکولر جمہوریت ہے جہاں کا آئین مساوات، مذہب کی آزادی اور ثقافتی تنوع کے حق کی ضمانت دیتا ہے۔بہت سی کمیونٹیز خاص طور پر اقلیتی برادریاں یو سی سی کو اپنے ذاتی معاملات میں موجودہ حکومت کی ممکنہ مداخلت اور مذہبی آزادی کے حق پر تجاوزات کے طور پر دیکھ رہی ہیں۔ انہیں خدشہ ہے کہ ایک مشترکہ ضابطہ ان کی روایات کو نظر انداز کر دے گا، ان کے خیالات کو ایک طرف رکھ دے گا اور ملک کے تمام شہریوں پر ہندو پرسنل لاء کے قوانین کو لازمی طور پر نافذ کر دے گا اور ان کے ذاتی قوانین کی سنگین خلاف ورزی کرے گا اور اس طرح ان کے مذہب اور وہاں کے قوانین کو ناقابل تلافی نقصان پہنچے گا۔

میں یہ کہہ کر اپنی بات ختم کرتا ہوں کہ، مذہبی اور ثقافتی شناختوں کی کثرت کے ساتھ ہندوستان جیسے متنوع ملک میں یو سی سی کا نفاذ ایک انتہائی حساس مسئلہ ہے۔ ہندوستان تنوع کے اندر اپنی سالمیت پر فخر کرتا ہے لہذا، پورے ہندوستان کے تنوع میں امن، سکون اور اتحاد کو برقرار رکھنے کے لیے، ہمیں ہر اقلیتی برادری کے ذاتی انتخاب اور قوانین کا احترام کرنے کی ضرورت ہے اور ان کے بنیادی حقوق کو برقرار رکھنے کی بھی۔ ہم بحیثیت مسلمان قوانین میں ایسی کسی تبدیلی کی حمایت نہیں کریں گے جو قرآن و سنت میں بیان کردہ اصولوں سے متصادم ہوں، جو ان کے مذہبی عقائد اور طرز عمل میں مرکزی حیثیت رکھتے ہیں۔

Leave a Comment

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Scroll to Top
%d bloggers like this: