کانگریس کا شرم ناک رویہّ!
کانگریس کا شرم ناک رویہّ!

✍️شکیل رشید (ایڈیٹر ممبئی اردو نیوز) ___________________ لوک سبھا کے انتخابات میں اپنی ’بہترکامیابی‘ کے بعد کانگریس نے ایک اور ’ تیر مارلیا ہے ‘۔ کانگریس کی ترجمان سپریا شرینیت نے مودی حکومت کی ایک مہینے کی کارکردگی پر رپورٹ کارڈ پیش کیا ہے ، جس میں مرکزی سرکار کوآڑے ہاتھوں لیا ہے ۔ یہ […]

کانگریس کا شرم ناک رویہّ!
غم جہاں سے نڈھال سراپا درد و ملال!!
غم جہاں سے نڈھال سراپا درد و ملال!!

✍️ جاوید اختر بھارتی محمدآباد گوہنہ ضلع مئو یو پی _____________ دینی ، سیاسی ، سماجی اور تعلیمی مضامین اکثر و بیشتر لکھا جاتاہے اور چھوٹے بڑے سبھی قلمکار لکھتے رہتے ہیں مگر ضروری ہے کہ کچھ ایسے موضوع بھی سامنے آئیں جو حقائق پر مبنی ہوں یعنی آپ بیتی ہوں مرنے کے بعد تو […]

غم جہاں سے نڈھال سراپا درد و ملال!!
جمہوری سیکولر سیاست میں دھرم کی مداخلت: ہندوستانی تناظر میں
جمہوری سیکولر سیاست میں دھرم کی مداخلت: ہندوستانی تناظر میں

✍️ محمد شہباز عالم مصباحی ____________ جمہوریت کا مفہوم ہی اس بات پر منحصر ہے کہ عوامی رائے کو فیصلہ سازی میں اولیت دی جائے اور ہر شہری کو یکساں حقوق اور مواقع فراہم کیے جائیں۔ سیکولرزم، جمہوریت کی بنیاد کو مضبوط کرتا ہے، جس کا مطلب یہ ہے کہ ریاست کو مذہبی معاملات میں […]

جمہوری سیکولر سیاست میں دھرم کی مداخلت: ہندوستانی تناظر میں
کیجریوال کا قصور
کیجریوال کا قصور

✍️ مفتی محمد ثناء الہدیٰ قاسمی نائب ناظم امارت شرعیہ بہار اڈیشہ و جھاڑکھنڈ ________________ دہلی کے وزیر اعلیٰ اروند کیجریوال کی پریشانیاں دن بدن بڑھتی جارہی ہیں، نچلی عدالت سے ضمانت ملتی ہے، ہائی کورٹ عمل در آمد پر روک لگا دیتا ہے، سپریم کورٹ میں عرضی داخل کرتے ہیں، اس کے قبل ہی […]

کیجریوال کا قصور
این جی اوز اور فلاحی اداروں میں علماء کا رول
این جی اوز اور فلاحی اداروں میں علماء کا رول

✍️ نقی احمد ندوی ________________ اس میں کوئی شک نہیں کہ علماء و فارغینِ مدارس اور طلباء کے اندر قوم و ملت اور ملک کی خدمت کا جو حسین جذبہ پایا جاتا ہے وہ عصری تعلیم گاہوں کے فارغین کے اندر عنقا ہے۔ این جی اوز اور فلاحی ادارے ان کے اس حسین جذبہ استعمال […]

این جی اوز اور فلاحی اداروں میں علماء کا رول
previous arrow
next arrow
Shadow

محمد قمرالزماں ندوی

مدارس دین کے قلعے ہیں اس سے امت مسلمہ کی بقا ہے

      محمد قمرالزماں ندوی،جنرل سکریٹری / مولانا علاء الدین ایجوکیشنل سوسائٹی جھارکھنڈ

      مشہور ادیب اور شاعر حکیم احمد شجاع ،علامہ اقبال رح کے دیرینہ نیاز مند تھے ،انہوں نے اپنی کتاب ۔۔ خون بہا۔۔ میں علامہ اقبال کے بارے میں بھی اپنی بعض یاد داشتیں قلمبند کی ہیں،اس کتاب میں انہوں نے ایک جگہ لکھا ہے کہ ایک مجلس میں، میں نے دینی مکاتب و مدارس کا تذکرہ کیا تو علامہ اقبال نے مجھے مخاطب کرتے ہوئے بڑی درد مندی اور دلسوزی کیساتھ فرمایا :

،، جب میں تمہاری طرح جوان تھا تو میرے قلب کی کیفیت بھی ایسی ہی تھی میں بھی وہی کچھ چاہتا تھا، جو تم چاہتے ہو۔ انقلاب ! ایک ایسا انقلاب جو ہندوستان کے مسلمانوں کو مغرب کی مہذب اور متمدن قوموں کے دوش بدوش کھڑا کردے ۔ یورپ کو دیکھنے کے بعد میری رائے بدل گئ ہے ۔ ان مکتبوں کو اسی حالت میں رہنے دو،غریب مسلمانوں کے بچوں کو انہیں مکتبوں میں پڑھنے دو،اگر یہ ملا اور درویش نہ رہے تو جانتے ہو کیا ہوگا ؟ جو کچھ ہوگا میں اسے اپنی آنکھوں سے دیکھ آیا ہوں ۔ اگر ہندوستان کے مسلمان ان مکتبوں کے اثر سے محروم ہوگئے تو بالکل اسی طرح جس طرح ہسپانیہ میں مسلمانوں کی آٹھ سو برس کی حکومت کے باوجود آج غرناطہ اور قرطبہ کے کھنڈرات اور الحمراء اور باب الاخوتین کے سوا اسلام کے پیرووں اور اسلامی تہذیب کے آثار کو کوئی نقش ہی نہیں ملتا،ہندوستان میں بھی آگرہ کے تاج محل اور دلی کے لال قلعہ کے سوا مسلمانوں کی آٹھ سو برس کی حکومت اور ان کی تہذیب کا کوئی نشان نہیں ملے گا،،  (اوراق گم گشتہ ،از رحیم بخش شاہین بحوالہ چراغ راہ ص: ۹۲)

         اس میں کوئی شک اور شبہ نہیں کہ دینی مدارس ملت اسلامیہ کا دھڑکتا دل ہے ۔ وہ دل جس کی دھڑکن زندگی کی علامت اور پہچان ہے اور جس کی خاموشی موت کی خاموشی بن جاتی ہے ،دل اگر پورے جسم میں خون پہنچاتا ہے اور اسے سرگرم اور زندہ رکھتا ہے تو یہ دینی مدارس بھی امت مسلمہ کو دین کا خادم مبلغ اور ترجمان فراہم کرتے ہیں ۔ جن کی وجہ سے امت مسلمہ کا وجود متحرک زندہ اور فعال رہتا ہے، تمام دینی جماعتوں تحریکوں،اداروں  تنظیموں اور سوسائٹیوں کو یہیں سے قوت و طاقت کمک اور رسد پہچتی ہے ۔ اگر ان اداروں تحریکوں جماعتوں اور  تنظیموں کو یہاں سے یہ پاور طاقت و قوت انرجی نہ پہنچے تو ان کی فعالیت اور حرکت و حرارت میں  کمی آجائے اور ایک طرح سے بے جان و بے حس ہو جائے ۔ داعی ہوں یا مبلغ دین کا خادم ہوں یا ترجمان امام ہوں یا خطیب مصنف ہوں یا مولف مرتب ہوں یا صحافی و محرر خطیب ہوں یا واعظ استاد ہوں یا مربی مفتی ہوں یا قاضی امیر ہو یا حاکم یا کوئ بھی خدمت گزار دین کے لائن سے ہوں یا سماجی ورکرر کے اعتبار سے سب اسی کے خوشہ چیں اسی گل کے پھول و کلی اور اسی چمن کے گلہائے رنگا رنگ ہوتے ہیں ۔

             مدارس اسلامیہ حفاظت دین ،فروغ دین اور اشاعت اسلام کا ذریعہ ہیں، تقریبا ڈیڑھ سو سالوں سے تو خود ہندوستان بلکہ بر صغیر میں ان مدارس کے جو خدمات اور کردار ہیں وہ کسی سے بھی مخفی نہیں ہے ۔ موجودہ ہندوستان میں اسلامی تہذیب کے جو بھی جلوے ہمیں نظر آتے ہیں، وہ انہی مدارس کی دین ہیں اور انہیں دینی اداروں کا فیض ہے ۔ انہیں دینی اداروں نے اسلام کی فکری سرحدوں کی حفاظت کے لئے ایسے افراد اور ایسی ٹیم تیار کی ہے، جو اپنے زمانہ کے چیلنجوں کا ڈٹ کر، آنکھ سے آنکھ ملا کر اور سینہ سپر ہوکر مقابلہ کرنے کی مکمل صلاحیت ہر طرح کی قربانی دے کر امت کے  ایمان و عقیدہ کی حفاظت کا حوصلہ رکھتی ہے ،آپ ماضی قریب کی تاریخ اٹھا کر دیکھ لیجئے اور تاریخ کے ان اوراق کا مطالعہ کرلیجئے آپ کو معلوم ہوگا کہ جب بھی اسلام کے خلاف کوئی آندھی اٹھی تو ان مدارس اور دینی جامعات کے فارغین اور فضلاء نے ہی اس باد سموم اور باد سرسر کا مقابلہ کیا اور امت محمدیہ کو راہ حق کی رہنمائی کی ۔ 

اسی دریا سے اٹھتی ہے وہ موج تند جولاں بھی 

نہگوں کے نشیمن جس سے ہوتے ہیں تہہ و بالا 

          دشمنان اسلام کی طرف سے مدارس اور علماء کے خلاف یہ مہم جوئی جو آج اور بھی زور و شور پر ہے خود اس حقیقت کو واشگاف کرتی ہے اور اس راز کو ظاہر کرتی ہے کہ اسلامی عقیدہ ،اسلامی ثقافت اور اسلامی تشخصات کی حفاظت اور مسلمانوں کو مسلمان باقی رکھنے میں مدارس اسلامیہ کا اور طبقئہ علماء کا کتنا بڑا حصہ ہے ۔ جو آج دشمنوں کی نظر میں اور اغیار کی نگاہ میں سب سے زیادہ کھٹک رہا ہے ۔ آج باطل کو سب سے زیادہ خطرہ اور خوف انہیں مدارس اور مدارس کے انہیں درویش صفت اور مادی وسائل کے اعتبار سے خستہ حال لیکن اسلام کے لئے ہر طرح کی قربانی دینے والے علماء سے ہے ۔ 

ہے اگر مجھ کو خطر کوئی تو اس امت سے ہے 

ہے حقیقت جس کے دیں کی احتساب کائنات 

          وہ یہ محسوس کرتے ہیں کہ اگر یہ مدارس اور یہ علماء باقی رہیں گے، تو ممکن نہیں کہ مسلمانوں کے ایمان و عقیدہ اور ان کے اسلامی شعار و تشخصات و امتیازات کو اغوا کیا جاسکے اور ان میں کسی طرح سیندھ لگا سکے ۔ یا انہیں مغربی اور زعفرانی تہذیب میں جذب کیا جاسکے ۔ بقول گھر کے ایک گواہ کے کہ یہ ایسا سخت جان گروہ ہے کہ اسے بیگانے بھی برا کہتے ہیں، اور اپنے ہیں وہ بھی اس پر تحقیر و ملامت طنز و استہزاء کا تیر پھینکنے سے نہیں چوکتے ۔ 

جن دینی مدارس کے بارے میں مفکر اسلام علی میاں ندوی رح نے یہ فرمایا تھاکہ 

            "مدرسہ سب سے بڑی کارگاہ ہے،جہاں آدم گری اور مردم سازی کا کام ہوتا ہے جہاں دین کے داعی اور اسلام کے سپاہی تیار ہوتے ہیں اور عالم اسلامی کا یہ بجلی گھر ہے ، جہاں سے اسلامی آبادی میں، بلکہ انسانی آبادی میں بجلی تقسیم ہوتی ہے اور جہاں قلب و نگاہ اور ذھن و دماغ ڈھلتے ہیں  ان مدارس کے بارے میں غیروں کی عیاری اور اپنوں کی سادگی پر سخت افسوس اور حیرت ہوتی ہے کہ ہمارے بہت سے اچھے خاصے پڑھے لکھے ،اسکالر اور دانشور لوگ بھی بے تکلف سازش کا شکار بن رہے ہیں اور وہ بھی ان مدارس میں خدمت کرنے والوں کو اپنی بے نگاہی اور کم نگاہی کی وجہ سے بے توجہی اور کم نگاہی سے دیکھ رہے ہیں ۔ اور شب و روز مولویوں پر اعتراض اور نقد کو اپنا پیدائشی حق سمجھتے ہیں ۔ لیکن انہیں یاد رکھنا چاہیے اور اس حقیقت کو فراموش نہیں کرنا چاہیے کہ علماء کے اعتماد کو مجروح کرنا اور ہمہ وقت مدارس اور وہاں کے نظام میں کیڑے نکالنا در اصل دین و مذہب کو مجروح کرنے کے مترادف ہے ۔ اس میں بھی کوئی شبہ نہیں کہ ہم طبقئہ علماء میں بھی بہت کمیاں ہو سکتی ہیں اور ہیں ، یہ گروہ کوئی فرشتہ ہے ۔ 

ممکن ہے کہ کسی مدرسہ اور دار العلوم سے آپ کو شکایت ہو اور آپ کی شکایت بالکل بجا اور درست ہو کسی عالم پر آپ غصہ ہوں اور ان پر آپ کی خفگی اور غصہ و ناراضگی  سو فیصد درست ہو لیکن خدا را آپ پورے گروہ علماء بدگمانی کریں ان کے بارے میں غلط رائے قائم کریں یہ اپنے گھر کو آپ آگ لگانے کے ہم معنی ہے ۔ 

آپ کو یہ تسلیم کرنا پڑے گا اور اس حقیقت کو ماننا پڑے گا کہ اگر بر صغیر ہندو پاک میں یہ مدارس نہیں ہوتے تو مغلیہ حکومت و امپائر کے زوال کے بعد ہم کس حشر میں ہوتے ہمارا انجام کیا ہوتا۔ کیا ہمارے نام اور کام میں کہیں اسلامی شان و شوکت کا معمولی سا رنگ بھی ہوتا ؟کیا حلال و حرام جائز اور ناجائز سے واقف ہوتے کیا ہمیں دینی مسائل میں رہنمائی کرنے والا کوئ ملتا اور ہمیں فکری اور تہذیبی ارتداد سے بچنے کو کوئی سامان مہیا ہوتا ؟

اس لئے خدا را ! علماء اور مدارس کے سلسلہ میں اپنے منفی روئیے کو بدلئے بیجا تنقید سے پرہیز کیجئے علماء اور مدارس کے وقار و اعتماد کو ٹھیس مت پہنچائے اپنی مثبت رائے اور ںظام تعلیم میں مفید اصلاح اور تبدیلی نیز نصاب تعلیم کے بارے میں صحیح مشورہ اور تجزیہ ضرور پیش کیجئے ، صرف تھیوری نہ پیش کرکے، پرکٹکل کچھ کرکے دکھائیے، کچھ ایسے معیاری اور آیڈیل مدارس قائم کرکے دکھائیے تاکہ دوسرے بھی آپ کی تقلید کریں اور آپ کے آدئیل کو آڈیل بنائیں ۔ بعض لوگوں نے نئے اور معیاری انداز و سہولیات کے مدارس قائم کئے ہیں، تجربہ کر رہے ہیں کہ نتائج بہتر آئیں ۔ آپ بھی انتظار کریں،خالی خولی انٹر نیٹ پر تبصرہ کرنے اور پروگرام بنانے سے کوئی فائدہ نہیں ہے، اس سے نقصان ہی ہوتا ہے۔ 

           اب جبکہ لاک ڈاؤن اور کرونا کے بعد اسکول اور مدارس کچھ شرطوں کے ساتھ کھل رہے ہیں، ضرورت ہے کہ ہم پوری بیدار مغزی کے ساتھ اور شرائط کا خیال کرتے ہوئے تعلیمی نظام کو شروع کریں اور جو نقصان ہوا ہے، اس کی تلافی اور بھر پائی کی کوشش کریں اور مدارس کی جو روح اور اسپرٹ ہے اس کو دوبارہ زندہ اور بحال کریں۔ خدا کرے یہ حقیقت ہمارے ذہن و دماغ اور قلب و نظر میں بیٹھ جائے آمین

Leave a Comment

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Scroll to Top
%d bloggers like this: