شاعری اور نظم میں کیا فرق ہے:چندبنیادی نکات

از قلم: احمد سہیل 

شاعری (Poetry)اور نظم (poem) دو متعلقہ اصطلاحات ہیں، لیکن ان کے مختلف معنی اور استعمال ہیں ۔

شاعری اور نظم میں فرق ہے:

  • شاعری ایک وسیع تر اصطلاح ہے جو شعریات میں تخلیقی تحریر کی تمام اقسام کو شامل کرتی ہے، جبکہ نظم ادب کا ایک مخصوص کام ہے۔
  • شاعری ایک مصنف کے جذبات اور خیالات کو ابھارنے کے لیے الفاظ اور زبان کا استعمال ہے، جب کہ نظم ان الفاظ کی ترتیب ہے۔
  • شاعری استعارہ، علامتوں اور ابہام کا استعمال کرتے ہوئے ایک ادبی ٹکڑا تخلیق کرنے کا عمل ہے، جبکہ نظم اس عمل کا آخری نتیجہ ہے۔
  • نظم تحریر کا ایک ٹکڑا ہے جو جذبات کو ابھارنے، تصویر پینٹ کرنے یا کہانی سنانے کے لیے زبان کا استعمال کرتی ہے۔
  • شاعری کا استعمال نظموں کو اجتماعی طور پر یا ادب کی ایک صنف کے طور پر بھی کیا جاتا ہے۔

شاعری اور نظمیں اکثر ایک دوسرے سے وابستہ ہوتی ہیں، لیکن یہ تحریر کی دو بالکل مختلف شکلیں ہیں۔ نظمیں تحریری کام ہیں جو شاعری، میٹر، اور لفظ کے انتخاب کی ساخت کی پیروی کرتے ہیں۔ شاعری تحریر کی ایک وسیع شکل ہے جو جذبات اور خیالات کو تلاش کرتی ہے۔ تو ان دونوں میں کیا فرق ہے؟۔

شاعری دوسری قسم کے تحریری عمل  سے بھی مختلف ہے کہ اس میں اکثر کہانی سنانے کے بجائے منظر کشی پر توجہ دی جاتی ہے۔ اگرچہ زیادہ تر نظموں میں بیانیہ عنصر ہوتا ہے، لیکن انہیں اس کی ضرورت نہیں ہوتی۔ نظمیں تجریدی ہو سکتی ہیں اور کہانی سنائے بغیر گہرے جذبات کو تلاش کر سکتی ہیں۔ اگر کوئی نظم کہانی سنانے کا انتخاب کرتی ہے، تو یہ اکثر زیادہ علامتی یا تاثراتی انداز میں کی جاتی ہے۔ یہ شاعر کو ایک موڈ بنانے اور واضح بیانیہ کے بغیر تبصرہ فراہم کرنے کی اجازت دیتا ہے۔

بنیادی سطح پر نظمیں آہنگ یا تال اور بحر (میٹر) کے ذریعے اپنے خیالات کو پیش کرتی ہیں۔ ہر نظم ایک مخصوص ڈھانچے کی پیروی کرتی ہے، جیسے کلاسک سانیٹ یا ہائیکو۔ نظم میں استعمال ہونے والے الفاظ اور جملے کا بھی ایک خاص مقصد ہوتا ہے- قاری میں ایک خاص جذبات یا ماحول کو ابھارنا۔ بہت سے شاعر اپنے کام میں علامت، استعارہ اور منظر نگاری کو بھی شامل کرتے ہیں۔ دوسری طرف، شاعری بہت زیادہ کھلی ہوئی ہے۔ اس کی ساخت شاعر کی مرضی کے مطابق ہو سکتی ہے، یا یہ آزادانہ اور غیر ساختہ ہو سکتی ہے۔ شاعر بعض روایات کی پیروی کر سکتا ہے یا ان کی مکمل خلاف ورزی کر سکتا ہے، یہ ان پر منحصر ہے۔ شاعری گہرے جذبات، خیالات اور خیالات کا بھی جائزہ لیتی ہے۔ اسے انسانی تجربے کو دریافت کرنے یا شاعر کی موجودہ حالت کے اظہار کے لیے استعمال کیا جا سکتا ہے۔

شاعری دوسری قسم کے تحریری عمل  سے بھی مختلف ہے کہ اس میں اکثر کہانی سنانے کے بجائے منظر کشی پر توجہ دی جاتی ہے۔ اگرچہ زیادہ تر نظموں میں بیانیہ عنصر ہوتا ہے، لیکن انہیں اس کی ضرورت نہیں ہوتی۔ نظمیں تجریدی ہو سکتی ہیں اور کہانی سنائے بغیر گہرے جذبات کو تلاش کر سکتی ہیں۔ اگر کوئی نظم کہانی سنانے کا انتخاب کرتی ہے، تو یہ اکثر زیادہ علامتی یا تاثراتی انداز میں کی جاتی ہے۔ یہ شاعر کو ایک موڈ بنانے اور واضح بیانیہ کے بغیر تبصرہ فراہم کرنے کی اجازت دیتا ہے۔

شاعری  اور نظم میں بنیادی فرق ساخت کا ہوتا  ہے۔ نظمیں ایک مخصوص ڈھانچے پر مشتمل ہوتی ہیں، جبکہ شاعری بہت زیادہ کھلی ہوتی ہے۔ نظمیں اکثر جذبات، ماحول اور علامت پر مرکوز ہوتی ہیں، جبکہ شاعری خیالات اور جذبات کو زیادہ گہرائی سے تلاش کرنے کی کوشش کرتی ہے۔ نظموں میں کہانی ہو سکتی ہے یا نہیں، جبکہ شاعری خلاصہ ہو سکتی ہے یا بیانیہ ہو سکتی ہے۔

شاعری  اور نظم میں بنیادی فرق ساخت کا ہوتا  ہے۔ نظمیں ایک مخصوص ڈھانچے پر مشتمل ہوتی ہیں، جبکہ شاعری بہت زیادہ کھلی ہوتی ہے۔ نظمیں اکثر جذبات، ماحول اور علامت پر مرکوز ہوتی ہیں، جبکہ شاعری خیالات اور جذبات کو زیادہ گہرائی سے تلاش کرنے کی کوشش کرتی ہے۔ نظموں میں کہانی ہو سکتی ہے یا نہیں، جبکہ شاعری خلاصہ ہو سکتی ہے یا بیانیہ ہو سکتی ہے۔

شاعری اور نظم کی  تعریف ایک قسم کا ادبی دانشورانہ اور ایک تصوراتی ساخت کا عمل ہےتو ہے مگگت اس کی وی معروضی ساخت بھی ہوتی ہے۔   جو کسی خیال یا جذبات کے اظہار کے لیے زبان کی فنکاری، علامت نگاری اور تال کی تکنیک کا استعمال کرتا ہے، یا کہانی کو بیان کرنے کے لیے مرکب کا ایک ٹکڑا جس میں آیات یا الفاظ کو ایک خوبصورت اور تال میل کے ساتھ ترتیب دیا گیا ہے جذباتی ردعمل یا تصوراتی تجربہ اس کی ساخت کیسے ہے شاعر خوبصورت اشعارکو احتیاط سے تیار کرنے کے لیے شاعری کی اسکیم اور وزن اور بحر( میٹر) جیسے مختلف عناصر کا استعمال کرتے ہیں نظموں کو یا تو شاعرانہ دھڑکنوں پر مبنی نظموں اور میٹر کے ساتھ تشکیل دیا جا سکتا ہے، یا فریفارم بھی ہو سکتا ہے، یا ایسی نظم جو ہیتی  ڈھانچے کی پیروی نہیں کرتی ہے۔

دائرہ کار/فطرت نظمیں بنانے کا فن شاعری کا حتمی نتیجہ یا تحریری پیداوار تخصیص ایک تخلیقی عمل جو شاعروں کے تمام منفرد تحریری کاموں کا احاطہ کرتا ہے، مصنف کے استعمال کردہ شاعرانہ انداز پر منحصر خوبصورت، تال یا آہنگ  کی شعری  زبان کے آغاز سے ہی لوگ اپنے دل کو بہلانے کے لیے الفاظ کا استعمال کرتے رہے ہیں۔

ایک وقت تھا جب یاداشتوں پر مبنی  طویل  نظمیں سننے کے قابل ہونا، اکثر اوقات ایک وقت میں گھنٹوں تک، ایک ناقابل یقین مہارت سمجھا جاتا تھا۔اس قدر کہ متعدد ثقافتوں کے اشرافیہ نے ایک دوسرے کو متاثر کرنے کے واحد مقصد کے لیے اپنی پسندیدہ نظموں کی سطریں یاد کر رکھی ہیں اور نظمیں زیادہ تر زبانی روایت کے طور پر شروع ہوئیں کیونکہ پہلے ادوار میں خواندگی بالکل عام نہیں تھی۔یہ ایک وجہ ہے کہ ہم آج بھی شاعری میں آواز پر مبنی بہت سی تکنیکیں استعمال کرتے ہیں۔

 اس موضوع  کی تشریح  سادہ الفاظ میں یہ ہوسکتی ہے کہ نظم الفاظ کی ترتیب ہے جس میں معنی اور موسیقی کے عناصر ہوتے ہیں۔ یہ تحریر کا ایک ایسا ٹکڑا ہے جو موڈ سیٹ کرنے کے لیے مصنف کی سوچ اور احساسات کا اظہار کرتا ہے۔ یہ خوش یا غمگین، سادہ یا پیچیدہ ہو سکتا ہے۔ صرف چند الفاظ میں ایک نظم بہت کچھ کہہ سکتی ہے۔ یہ حوصلہ افزائی اور خوف پیدا کر سکتا ہے اور کسی ایسی چیز میں خوش آئند فرار ہو سکتا ہے جو مکمل طور پر شاندار ہو۔

نظم یا تو شاعری والی یا غیر شاعری والی ہو سکتی ہے۔ یہ علامتوں کا استعمال کرتا ہے اور اس میں لکیریں اور سٹینز ہوتے ہیں جن میں جملے، جملوں کے ٹکڑے یا دونوں ہوتے ہیں۔ اس میں استعارہ اور تخفیف کا استعمال کیا گیا ہے، یہ خاص طور پر بچوں کے لیے نظموں میں نظر آتی ہے۔

نظموں کی کئی قسمیں ہیں جن میں شامل ہیں: سونیٹ، جو محبت کے بارے میں نظمیں ہیں اور نظم کی سب سے مشہور قسم ہے اور اوڈ، جو تین حصوں پر مشتمل ایک گیت والی نظم ہے۔ اسٹروف، اینٹی اسٹروف اور ایپوڈ۔ وغیرہ۔

ایک نظم رزمیہ ، داستان، ڈرامائی، یا گیت بھی ہو سکتی ہے۔ ایک رزمیہ (مہاکاوی) نظم وہ ہے جو افسانوی یا بہادر شخصیات پر مرکوز ہوتی ہے، ایک داستانی نظم ایک کہانی بتاتی ہے، ڈرامائی نظمیں آیت میں لکھی جاتی ہیں، اور گیت کی نظمیں شاعر کے احساسات اور خیالات کو بیان کرتی ہیں۔

شاعری لوگوں کے پڑھے لکھے ہونے سے بہت پہلے موجود تھی۔ قدیم اشعار زبانی طور پر ایک نسل سے دوسری نسل میں حفظ کیے جاتے تھے۔ ہندوستانی وید، زراسٹر کی گاتھا اور اوڈیسی قدیم شاعری کی مثالیں ہیں۔

شاعری کو فن کی ایک ادبی شکل کے طور پر بیان کیا جاتا ہے، جو زبان میں پیدا ہوتا ہے۔ اسے اپنے طور پر یا دوسرے فنون کے ساتھ مل کر لکھا جا سکتا ہے جیسا کہ شاعرانہ ڈرامہ، شاعرانہ حمد، گیت شاعری اور نثری شاعری میں۔

نظم کو تکرار، نظم، نظم اور جمالیات کے استعمال سے تحریر کی دوسری شکلوں سے ممتاز کیا جاتا ہے۔ یہ بیان بازی، ڈرامہ، گانا اور مزاح میں الفاظ اور تقریر کا استعمال کرتا ہے۔

یہ جذباتی یا حسی ردعمل لانے کے لیے اپنے الفاظ میں متبادل معنی تجویز کرتا ہے۔ شاعری میں تال، تالیف اور اونومیٹوپویا کا استعمال ہوتا ہے، جو اسے موسیقی کا اثر دیتے ہیں۔ اس میں مختلف تشریحات تجویز کرنے کے لیے علامت، استعارہ، تشبیہ، مجاز مرسل (میٹونیمی)، ستم ظریفی اور ابہام کا استعمال کیا گیا ہے۔

شاعری میں بہت سے عناصر ہوتے ہیں، ان میں سے کچھ یہ ہیں: پرسوڈی، میٹر کا مطالعہ، نظم کی تال اور انٹونیشن؛ تال، لہجوں، حرفوں یا موروں کے ذریعہ مقرر کردہ وقت؛ میٹر، شاعروں کی طرف سے استعمال کیا جاتا میٹرک نظام؛ شاعری، تخفیف اور گونج، جو ایسے طریقے ہیں جو آواز کا بار بار نمونہ بناتے ہیں جو ایک جیسی (سخت شاعری) یا اسی طرح کی (نرم شاعری) ہوسکتی ہے۔

نظم سے مراد ایسی صنف سخن ہے جس میں کسی بھی ایک خیال کو مسلسل بیان کیا جاتا ہے۔ نظم میں موضوع اور ہیئت کے حوالے سے کسی قسم کی کوئی پابندی نہیں۔ اس کی مثال یہ ہے کہ ہمارے ہاں نظمیں مثنوی اور غزل کے انداز میں لکھی گئی ہیں۔ جدید دور میں نظم ارتقائی مراحل سے گزرتے ہوئے آج کئی حالتوں میں تقسیم ہو چکی ہے، جس کی پانچ بنیادی قسمیں ہیں:

  • 1۔پابند  نظم
  • 2۔نظم معرا
  • 3۔ آزاد نظم 
  • 4۔نثری نظم
  • 5۔ یک مصرعی نظم

اردو نظم کے شعرا اردو ادب کو کچھ ایسی نظمیں دے گئے ہیں جو رہتی دنیا تک اردو ادب اور خاص طور پر اردو شاعری کو لوگوں کی زبان اور دل میں جگہ بنانے کا موقع عنایت کرتی رہے گی۔سرور جہان آبادی کی نظم   موسم بہار کےآخر گلاب ،علامہ اقبال کی بچوں کی دعا (لب پہ آتہ ہے دعا بن کے تمنا میری)، حالی کی مسدس مد و زجر اسلام حالی (مسدس حالی، نظیر اکبرآبادی کی آدمی نامہ اور بنجارہ نامہ، حفیظ جالندھری اسماعیل میرٹھی فلسفی علما کی شاہنامہ :، اختر شیرانی کی او دیس سے آنے والے بتا،  چکبست کی نظم پھول مالا ،ساحرلدھیانوی کی نظم:تاج محل، جوش ملیح آبادی کی نظم: کسان، ن م راشد کی نظم خواب کی بستی، مجید امجد کی نظم  پنوادی،یوسف ظفر کی نظم  زندان  قیوم نظر کی نظم خراب کار، اختر الایمان کی نظم موت،میراجی کی نظم لب ائبائے، اور قمر جمیل  کی نظم  دو لڑکیان اور سمندر قابل زکر ہیں۔ 

ختم کلام :

  • . 1۔ شاعری ایک مصنف کے جذبات اور خیالات کو ابھارنے کے لیے الفاظ اور زبان کا استعمال ہے، جبکہ نظم ان الفاظ کی ترتیب ہے۔
  • 2۔ شاعری استعارہ، علامتوں اور ابہام کا استعمال کرتے ہوئے ایک ادبی ٹکڑا تخلیق کرنے کا عمل ہے، جبکہ نظم اس عمل کا آخری نتیجہ ہے ۔

Leave a Comment

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Scroll to Top
%d bloggers like this: