کانگریس کا شرم ناک رویہّ!
کانگریس کا شرم ناک رویہّ!

✍️شکیل رشید (ایڈیٹر ممبئی اردو نیوز) ___________________ لوک سبھا کے انتخابات میں اپنی ’بہترکامیابی‘ کے بعد کانگریس نے ایک اور ’ تیر مارلیا ہے ‘۔ کانگریس کی ترجمان سپریا شرینیت نے مودی حکومت کی ایک مہینے کی کارکردگی پر رپورٹ کارڈ پیش کیا ہے ، جس میں مرکزی سرکار کوآڑے ہاتھوں لیا ہے ۔ یہ […]

کانگریس کا شرم ناک رویہّ!
غم جہاں سے نڈھال سراپا درد و ملال!!
غم جہاں سے نڈھال سراپا درد و ملال!!

✍️ جاوید اختر بھارتی محمدآباد گوہنہ ضلع مئو یو پی _____________ دینی ، سیاسی ، سماجی اور تعلیمی مضامین اکثر و بیشتر لکھا جاتاہے اور چھوٹے بڑے سبھی قلمکار لکھتے رہتے ہیں مگر ضروری ہے کہ کچھ ایسے موضوع بھی سامنے آئیں جو حقائق پر مبنی ہوں یعنی آپ بیتی ہوں مرنے کے بعد تو […]

غم جہاں سے نڈھال سراپا درد و ملال!!
جمہوری سیکولر سیاست میں دھرم کی مداخلت: ہندوستانی تناظر میں
جمہوری سیکولر سیاست میں دھرم کی مداخلت: ہندوستانی تناظر میں

✍️ محمد شہباز عالم مصباحی ____________ جمہوریت کا مفہوم ہی اس بات پر منحصر ہے کہ عوامی رائے کو فیصلہ سازی میں اولیت دی جائے اور ہر شہری کو یکساں حقوق اور مواقع فراہم کیے جائیں۔ سیکولرزم، جمہوریت کی بنیاد کو مضبوط کرتا ہے، جس کا مطلب یہ ہے کہ ریاست کو مذہبی معاملات میں […]

جمہوری سیکولر سیاست میں دھرم کی مداخلت: ہندوستانی تناظر میں
کیجریوال کا قصور
کیجریوال کا قصور

✍️ مفتی محمد ثناء الہدیٰ قاسمی نائب ناظم امارت شرعیہ بہار اڈیشہ و جھاڑکھنڈ ________________ دہلی کے وزیر اعلیٰ اروند کیجریوال کی پریشانیاں دن بدن بڑھتی جارہی ہیں، نچلی عدالت سے ضمانت ملتی ہے، ہائی کورٹ عمل در آمد پر روک لگا دیتا ہے، سپریم کورٹ میں عرضی داخل کرتے ہیں، اس کے قبل ہی […]

کیجریوال کا قصور
این جی اوز اور فلاحی اداروں میں علماء کا رول
این جی اوز اور فلاحی اداروں میں علماء کا رول

✍️ نقی احمد ندوی ________________ اس میں کوئی شک نہیں کہ علماء و فارغینِ مدارس اور طلباء کے اندر قوم و ملت اور ملک کی خدمت کا جو حسین جذبہ پایا جاتا ہے وہ عصری تعلیم گاہوں کے فارغین کے اندر عنقا ہے۔ این جی اوز اور فلاحی ادارے ان کے اس حسین جذبہ استعمال […]

این جی اوز اور فلاحی اداروں میں علماء کا رول
previous arrow
next arrow
Shadow

غزوۂ ہند کی حقیقت

از: مولانا خالد سیف اللہ رحمانی

_____________

نبی کے معنی سچی خبر دینے کے ہیں،اسی لئے ہر نبی نے انسانیت کو عالم آخرت کی سچی خبروں سے مطلع کیا ہے، جنت و دوزخ کے بارے میںبتایا ہے، جزاء وسزا کے خدائی نظام سے واقف کرایا ہے اور بعض ان دیکھی مخلوقات جیسے فرشتوں کے بارے میںبھی مطلع کیا ہے، سچی خبروں کی دوسری جہت مستقبل کی پیشن گوئیوں سے متعلق ہے، اللہ تعالی کی ذات ازل سے ابد تک پیش آنے والے تمام واقعات کا خالق ہے اور انبیاء کرام اس کائنات ارضی میں اس کے قاصد وسفیر ہیں، اس لئے اللہ تعالی کی طرف سے حاصل ہونے والی مستقبل کی بعض معلومات کو وہ انسانیت کے سامنے پیش کرتے ہیں، ان میںبعض پیشن گوئیاں توبطور معجزہ کے ہوتی ہیں، جیسے حضور صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے غزوہ بدر سے پہلے ایک ایک حملہ آور مشرک کے بارے میںبتا دیا تھا کہ جنگ میں کون کہاں قتل کیاجائے گا؟ اور یہ پیشن گوئی بعینہ پوری ہوئی، اور بعض پیشن گوئیاں تنبیہ اور انذار کے طورپر ہوتی ہیں، جس میں عمل کی دعوت بھی ہوتی ہے، جیسے امام مہدی کا ظہور، دجال کا خروج، حضرت عیسی علیہ السلام کا نزول، مشرق کی بجائے مغرب کی طرف سے سورج کا طلوع وغیرہ۔
اسی دوسری طرح کی پیشن گوئیوں میں یہ بھی ہے کہ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے دنیا کے مختلف علاقوں میں اسلامی فتوحات کی طر ف اشارہ بھی فرمایا، جیسے روم، قسطنطنیہ، ایران وغیرہ، ایسے ہی پیشن گوئیوں میں ایک ہندوستان کی فتح اور یہاں اسلام کی اشاعت بھی ہے، اس سلسلہ میں چند روایتیں نقل کی گئی ہیں، جن میںبعض تو محدثین کے نزدیک معتبر نہیں ہیں اور بعض کسی حد تک درجہ اعتبار کو پہنچتی ہیں، یہ واقعہ کب ظہور میں آئے گا ؟متعین طور پر حدیث میںیہ بات نہیں بتائی گئی ہے، بعض روایتوںمیں ہے کہ  جب دجال ظاہر ہوگا تو بیت المقدس کا ایک حکمران ہندوستان کو فوج بھیجے گا(اخرجہ نعیم بن حماد فی الفتن، حدیث نمبر:۴۱۲۱)، اوربعض روایتوں سے معلوم ہوتا ہے کہ یہ جنگ عہد صحابہ یااس کے قریب ہوگی؛ کیونکہ حضرت ابوہریرہؓ تمنا کرتے تھے کہ ان کو اس میں شہادت حاصل ہوجائے، اس روایت کوحدیث کی دو مستند کتابوں میں نقل کیاگیا ہے(مسند احمد۲؍۹۲۲، سنن نسائی، حدیث نمبر:۳۷۱۳، ۴۷۱۳، باب غزوۃ الہند)، اگرچہ یہ روایت ضعیف ہے؛ لیکن اس سے اندازہ ہوتا ہے کہ ارشاد نبوی کے اولین مخاطب سمجھتے تھے کہ یہ واقعہ قریبی وقت میں پیش آنے والا ہے۔
اس دور کے بعد قریب ترین وقت میں ہندوستان کے حکمرانوں سے عرب حکمرانوں کی معرکہ آرائی کا جو واقعہ پیش آیا، وہ وہی ہے جو محمد بن قاسم کے ذریعہ سند ھ کی فتح کی شکل میںہمارے سامنے ہے اور اسی نسبت سے سندھ کو ’’باب الاسلام ‘‘کہاجاتا ہے،محمد بن قاسم کا تعلق طائف کے قبیلہ بنوثقف سے تھا، جو بنی امیہ  کے حکمرانوں میں ظلم و جبر میں مشہور تھا، یہاں تک کہ حضرت حسن بصریؒ فرماتے تھے کہ تمام امتوں کے ظلم کو ایک پلڑے میں رکھ دیاجائے اور حجاج کے ظلم کو دوسرے پلڑے میں تو حجاج والاپلڑا جھک جائے گا؛لیکن اس نے زندگی میںبعض اچھے کام بھی انجام دیئے، ان میں ایک یہ بھی ہے کہ اس نے اپنے چچازادبھائی اور داماد محمد بن قاسم کو فارس کے اس وقت کے دارالحکومت ’شیراز‘ کا گورنر بنادیا اس کی وجہ یہ تھی کہ اس کو صرف پندرہ سال کی عمر میں کردوں کی بغاوت فروکرنے کے لئے ۸۰۷ء میں سپہ سالاری کی ذمہ داری سونپی گئی اور انہوں نے حیران کن کامیابی حاصل کی، چنانچہ جب سندھ کے بعض راجائوں سے معرکہ کے لئے انہیں سندھ کی مہم کا ذمہ دار بنایاگیا، اس وقت ان کی عمر ۷۱ سال تھی ، ۱۱۷ء سے ۳۱۷ء تک انہوں نے اپنی مہم جاری رکھی اور سندھ کے اکثر علاقے یہاں تک کہ ’’ملتان ‘‘(جو اس وقت سندھ کا حصہ تھا)تک کو فتح کرلیا ، چار سال سندھ میں رہ کر وہاں کے نظم و نسق کو درست کیا اور انصاف پر مبنی حکومت قائم کی۔
سندھ کی مہم کیوں ںپیش آئی؟اس سے بھی واقف ہوناضروری ہے،تاکہ معلوم ہو کہ کیا یہ کوئی ظالمانہ واقعہ تھا؟تاریخ سے معلوم ہوتا ہے کہ اس کے کئی اسباب پیش آئے، اس وقت سندھ پر راجہ داہر کی حکومت تھی، مکران مسلمانوں کے قبضہ میں تھا، ۳۰۷ء میں کچھ لوگوں نے مکران کے گورنر سعید بن اسلم کو قتل کردیا اور راجہ داہر کی پناہ حاصل کرلی، -حجاج بن یوسف جو عراق کا گورنر تھا- نے اس کی واپسی کا مطالبہ کیا، داہر نے صاف انکا ر کردیا، دوسرے: لنکا کے راجہ نے حجاج کو کچھ بیش قیمت تحائف بھیجے جو کشتی سے آرہے تھے، اس کشتی میں کچھ عرب مسلمان عورتیں بھی تھیں، یہ ساحل کے ساتھ ساتھ آرہے تھے،دیبل جو موجودہ کراچی کے قریب واقع تھا میں سمندری ڈاکوئوں نے اس قافلہ کولوٹ لیا، یہ علاقہ داہر کے زیر قبضہ تھا، کچھ لوگ بچ کر حجاج کے پاس پہنچے اور اس نے راجہ داہر سے لڑکیوں کی رہائی اور سامان کی واپسی کا مطالبہ کیا، مگر داہر نے اس پر توجہ نہیں دی اوریہ بہانہ کرکے مدد سے انکار کردیا کہ میر ان پر کوئی اختیار نہیں ہے۔
تیسری بات یہ پیش آئی کہ راجہ داہر سے پہلے یہاں چندر اور چچ حکمراں رہے جو بدھ دھرم کے ماننے والے تھے، مگر راجہ داہر شدت پسند ہندو تھا، اس نے بودھوں پر بڑے مظالم ڈھائے، اس کا حال یہ تھا کہ اس کے خاندان کے علاوہ کسی کو پگڑی باندھنے کی اجازت نہیں تھی، رعایا کو گھوڑے پر سواری کرنے کی ممانعت تھی، اخلاقی حالت یہ تھی کہ اس نے اپنی سگی بہن کو نکاح میں لے لیا تھا، عوام اس کے ظلم سے عاجز تھی؛ اس لئے سندھ کے مظلوم عوام کے ایک وفد نے بھی حجاج بن یوسف سے راجہ داہر کی شکایت کی اور سندھ پر حملہ کرنے کی دعوت دی۔
چنانچہ حجاج نے سندھ پر حملہ کرنے کی اجازت دے دی، اس نے ایک فوجی لشکر عبید اللہ کی قیادت میں بھیجا ،وہ شہید ہوگئے، پھر تین ہزار پر مشتمل ایک دوسرا فوجی دستہ بدیل کی قیادت میں بھیجا، اس نے بھی شکست کھائی، اب اس کی نظر انتخاب محمد بن قاسم پر پڑی اور اس مہم کے لئے بارہ ہزار مجاہدین جس میں چھ ہزار شامی اور چھ ہزار عراقی فوجی تھے اور اس لشکر کے ساتھ پتھر برسانے والی ایک منجنیق جس کا نام ’’عروس‘‘ تھابھیجا، پھرمقامی مظلوم عوام بھی اس میں شریک ہوگئے، یہاںتک کہ یہ فوج دیبل کی بندرگاہ پر پہنچی تو اس کی تعداد اٹھارہ ہزار ہوچکی تھی، دیبل فتح ہوگیا اور داہر اپنی فوج کے ساتھ آگے بھاگتا گیا، اس کے ساتھ دس ہزار سوار اور تیس ہزار پیدل سپاہی تھے اور اسے اپنے ہاتھیوں کے دستے پر بہت ناز تھا، محمد بن قاسم نے آگے بڑھکر برہمن آباد، پھراروڑ کو فتح کیا ، یہاںتک کہ ملتان جو اس وقت سندھ کا مرکز تھا اور یہاں بڑے بڑے بت خانے تھے،وہ بھی فتح ہوگیا، محمد بن قاسم نے راجہ داہر کے قائم کئے ہوئے اونچ نیچ کے ہندوانہ نظام کو ختم کیا، سب کے ساتھ انصاف اور برابری کا سلوک کیا، ہندو عبادت گاہوں اور پجاریوں کو عطایا دیئے، مقامی عوام اس کی رحم دلی سے بہت متاثر ہوئی، مورخین نے بیان کیا ہے کہ جب محمد بن قاسم سندھ سے واپس روانہ ہوئے تو وہاں کے غیر مسلم عوام رو رہے تھے اور لوگوںکے تاثر کا حال یہ تھا کہ موجودہ ’’کچھ‘‘ جس کا نام اس وقت ’’کیرچ‘‘ تھا میں اسکی مورتی بنا کر عرصہ دراز تک اس کی پوجا کی گئی۔
بظاہر یہی وہ معرکہ ہے جس کو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم  کی پیشین گوئی میں’’ غزوہ ہند ‘‘کہاگیاہے، یہی سندھ و ہند کی پہلی فوج کشی تھی، یہ بات بھی قابل ذکر ہے کہ اس وقت جس علاقہ کو ہم بھارت کہتے ہیں اس وقت کا ہند اس سے بہت مختلف تھا؛ بلکہ تاریخ سے معلوم ہوتا ہے کہ ہزاروں سال پہلے جب آریہ اس ملک میں آئے تو انہوں نے اس خط کا نام ’’سندھ‘‘رکھا؛کیونکہ وہ اپنی زبان میں دریا کو ’’سندھو‘‘ کہتے تھے، ابتداء ًوہ اس ملک کو سندھو کہتے رہے، مگر آہستہ آہستہ وہ اسے سندھ کہنے لگے، ایرانیوں نے اپنے لہجے میں سندھ کو ’’ہند‘‘ کرڈالا اور یونانیوں نے ’’ھ‘‘کو اس کے قریب المخرج حرف ہمزہ سے بدل کر ’’اند‘‘کردیا، رومن میں یہ لفظ ’’اند‘‘سے ’’اندیا‘‘ ہوگیا، اور انگریزی زبان میں چونکہ ’’دال‘‘ نہیں؛اس لئے وہ ’’انڈیا‘‘بن گیا(تاریخ سندھ؛ ۴۲، تالیف:اعجاز الحق قدوسی،طبع لاہور،۶۷۹۱ء)وہ ’’ہند‘‘موجودہ پاکستان کا علاقہ تھا، دریائے سندھ کے ایک طرف کا علاقہ سندھ اور دوسری طرف کا ہند کہلاتا تھا؛لہذا حدیث میں جس ہند کا ذکر آیا ہے وہ موجودہ ہندوستان نہیں ہے، جس میں اس وقت ہم لوگ رہتے ہیں، اور جس کی راجدھانی دہلی ہے، بلکہ یہ علاقہ اس وقت پاکستان کی شکل میں موجود ہے، جہاں صدیوں سے مسلمان آباد ہیں اور جہاں ایسی ہندو آبادی نہیں ہے، جس کو زیر کرنے کے لئے کسی فوجی کاروائی کی ضرورت ہواور نہ اس خطہ میں ہندوراجائوں کی حکومت ہے۔
غرض کہ غزوہ ہند کی پیشن گوئی بعض روایات میں آئی ہے اور ان میں بعض ایک حد تک درجہ اعتبار کو پہنچی ہوئی ہیں؛ لیکن یہ غزوہ ہندوستان میں ہوچکا ہے؛ اس لئے جو لوگ اس پیشین گوئی کو اس انداز پر پیش کر رہے ہیں کہ مسلمان ہندوستان پر حملہ کرنے والے ہیں ،وہ خلاف واقعہ ہے اور یہ صرف مسلمانوں کے خلاف نفرت پیدا کرنے اور اس نفرت سے سیاسی فائدہ اٹھانے کی کوشش ہے، غزوہ ہند وہی فوج کشی تھی جو سندھ کو فتح کرنے کے لئے کی گئی تھی ،نیزیہ فوج کشی پوری طرح مبنی برانصاف تھی اور مظلوم عوام کو نجات دلانے کے لئے تھی۔
غزوہ ہند کا تو اس قدر شور کیا جارہا ہے ؛ لیکن برادران وطن کی کتابوں میں کورووں اور پانڈووں کی جنگ سوائے خاندانی برتری کی لڑائی کے اور کیا تھی اورہندو مذہبی کتابوں کے بیان کے مطابق اس میں مارے جانے والوں کی تعداد اتنی زیادہ تھی کہ دنیا کی موجودہ آبادی سے بھی بڑھی ہوئی تھی، پھر ان کتابوں میں ذات پات کی بنیاد پر اونچ نیچ کا جو تصور پیش کیاگیا ہے اور جس پر ہندو سماج عمل کرتا رہا ہے،نیز عورتوں کے بارے میں جو حقارت آمیز باتیں لکھی گئی ہیں، کاش میڈیا والے اس کو بھی موضو ع بحث بناتے، جوموجودہ ہندوستان کا اصل مسئلہ ہے اور جس کا نتیجہ ہے کہ ملک کا صدر جمہوریہ بھی بعض مندروں میں داخل نہیں ہوسکتا ہے ، اس کا تعلق اسی خود ساختہ طبقاتی نظام سے ہے، اصل بحث اس موضوع پر ہونی چاہئے۔

Leave a Comment

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Scroll to Top
%d bloggers like this: