کانگریس کا شرم ناک رویہّ!
کانگریس کا شرم ناک رویہّ!

✍️شکیل رشید (ایڈیٹر ممبئی اردو نیوز) ___________________ لوک سبھا کے انتخابات میں اپنی ’بہترکامیابی‘ کے بعد کانگریس نے ایک اور ’ تیر مارلیا ہے ‘۔ کانگریس کی ترجمان سپریا شرینیت نے مودی حکومت کی ایک مہینے کی کارکردگی پر رپورٹ کارڈ پیش کیا ہے ، جس میں مرکزی سرکار کوآڑے ہاتھوں لیا ہے ۔ یہ […]

کانگریس کا شرم ناک رویہّ!
غم جہاں سے نڈھال سراپا درد و ملال!!
غم جہاں سے نڈھال سراپا درد و ملال!!

✍️ جاوید اختر بھارتی محمدآباد گوہنہ ضلع مئو یو پی _____________ دینی ، سیاسی ، سماجی اور تعلیمی مضامین اکثر و بیشتر لکھا جاتاہے اور چھوٹے بڑے سبھی قلمکار لکھتے رہتے ہیں مگر ضروری ہے کہ کچھ ایسے موضوع بھی سامنے آئیں جو حقائق پر مبنی ہوں یعنی آپ بیتی ہوں مرنے کے بعد تو […]

غم جہاں سے نڈھال سراپا درد و ملال!!
جمہوری سیکولر سیاست میں دھرم کی مداخلت: ہندوستانی تناظر میں
جمہوری سیکولر سیاست میں دھرم کی مداخلت: ہندوستانی تناظر میں

✍️ محمد شہباز عالم مصباحی ____________ جمہوریت کا مفہوم ہی اس بات پر منحصر ہے کہ عوامی رائے کو فیصلہ سازی میں اولیت دی جائے اور ہر شہری کو یکساں حقوق اور مواقع فراہم کیے جائیں۔ سیکولرزم، جمہوریت کی بنیاد کو مضبوط کرتا ہے، جس کا مطلب یہ ہے کہ ریاست کو مذہبی معاملات میں […]

جمہوری سیکولر سیاست میں دھرم کی مداخلت: ہندوستانی تناظر میں
کیجریوال کا قصور
کیجریوال کا قصور

✍️ مفتی محمد ثناء الہدیٰ قاسمی نائب ناظم امارت شرعیہ بہار اڈیشہ و جھاڑکھنڈ ________________ دہلی کے وزیر اعلیٰ اروند کیجریوال کی پریشانیاں دن بدن بڑھتی جارہی ہیں، نچلی عدالت سے ضمانت ملتی ہے، ہائی کورٹ عمل در آمد پر روک لگا دیتا ہے، سپریم کورٹ میں عرضی داخل کرتے ہیں، اس کے قبل ہی […]

کیجریوال کا قصور
این جی اوز اور فلاحی اداروں میں علماء کا رول
این جی اوز اور فلاحی اداروں میں علماء کا رول

✍️ نقی احمد ندوی ________________ اس میں کوئی شک نہیں کہ علماء و فارغینِ مدارس اور طلباء کے اندر قوم و ملت اور ملک کی خدمت کا جو حسین جذبہ پایا جاتا ہے وہ عصری تعلیم گاہوں کے فارغین کے اندر عنقا ہے۔ این جی اوز اور فلاحی ادارے ان کے اس حسین جذبہ استعمال […]

این جی اوز اور فلاحی اداروں میں علماء کا رول
previous arrow
next arrow
Shadow

مولانا آزاد فاؤنڈیشن پر قدغن اور ملت کی خاموشی

✍ محمد علم اللہ، نئی دہلی

___________________

بی جے پی کے عہد اقتدار میں اقلیتوں کی زندگی اجیرن ہو گئی ہےاور عرصۂ حیات مسلسل تنگ ہوتا نظر آرہاہے۔ حال ہی میں اقلیتی امور کی وزارت نے مولانا آزاد ایجوکیشن فاؤنڈیشن کو بند کر دیا، جس سے یہ خدشہ پیدا ہو گیا کہ پسماندہ طبقات کے لیے تعلیمی مواقع مزید کم ہوجائیں گے، کچھ حلقوں میں اس فیصلے کو مسلمانوں، عیسائیوں، سکھوں اور دیگر اقلیتی طبقات کی تعلیم تک عدم رسائی کی دانستہ کوشش کے طور پر دیکھا جا رہا ہے۔ کچھ دوسرے لوگ اسے اقلیتی برادریوں کو دبانے کے وسیع تر ایجنڈے کا حصہ سمجھتے ہیں۔
سماج کے تعلیمی طور پر پسماندہ طبقوں کی مدد کے لیے قائم مولانا آزاد ایجوکیشن فاؤنڈیشن کو اقلیتی امور کی وزارت کے ذریعے سے مالی اعانت فراہم کی جارہی تھی۔ تاہم 7 فروری کو وزارت کی جانب سے فاؤنڈیشن کو بند کرنے کے ساتھ ہی یہ انتظام اچانک ختم کر دیا گیا۔
ہندستان کی تحریک آزادی کے ایک قابل احترام رہنما اور ملک کے پہلے وزیر تعلیم مولانا آزاد نےبنیادی تعلیمی ڈھانچے کی تعمیر و تشکیل میں اہم کردار ادا کیاتھا۔ ان کی رہنمائی میں آئی آئی ٹی اور ایمس جیسے ادارے قائم کیے گئے، جو تکنیکی اور طبی تعلیم میں اپنا حصہ ڈال رہے تھے۔
فاؤنڈیشن کی بندش کے حکم کے نتیجے میں 43 کنٹریکٹ ملازمین کو بھی برطرف کردیا گیا۔ ہر سال ہزاروں مسلم طلبہ اور سیکڑوں مسلم تعلیمی ادارے فاؤنڈیشن کی طرف سے پیش کردہ مختلف تعلیمی اسکیموں سے مستفید ہوتے ہیں۔جولائی 1989 میں قائم ہونے والی مولانا آزاد فاؤنڈیشن ایک غیر سیاسی، غیر منافع بخش سوسائٹی کے طور پر کام کرتی تھی جو سوسائٹی رجسٹریشن ایکٹ 1860 کے تحت رجسٹرڈ تھی۔ اس کا فعال کام مالی سال 1993-94 میں شروع ہوا جب مرکزی حکومت نے اپنے کارپس فنڈ کی پہلی قسط مختص کی، جس کی مالیت 5 کروڑ روپے تھی۔ اس کے بعد 1995-96 میں 25.01 کروڑ روپے کی دوسری قسط جاری کی گئی اور 2011-12 تک کارپس فنڈ مسلسل بڑھ کر 750 کروڑ روپے تک پہنچ گیا۔
2006 میں اقلیتی امور کی وزارت کے قیام کے ساتھ ہی اس فاؤنڈیشن کو اس کے دائرہ اختیار میں لایا گیا اور اس کی خودمختاری کو برقرار رکھا گیا۔ 12 ویں منصوبے کے دوران، حکومت نے فاؤنڈیشن کا دوبارہ جائزہ لیا، جس کا مقصد اس کے اثرات کو مزید وسعت دیناتھا۔ نتیجتاً کارپس فنڈ کو 750 کروڑ روپے سے بڑھا کر 1500 کروڑ روپے کر دیا گیا، جس میں اقلیتی بچوں میں معاشی طور پر بااختیار بنانے اور روشن مستقبل کے لیے ان میں قائدانہ صلاحیتوں کو پروان چڑھانے پر خصوصی زور دیا گیا۔
مولانا آزاد ایجوکیشن فاؤنڈیشن نے اقلیتوں کو مدد اور مواقع فراہم کرنے میں اہم کردار ادا کیا۔ اس کا مقصد معاشرے کے پسماندہ طبقوں کو تعلیمی اور معاشی مدد فراہم کرکے ان کی مجموعی ترقی میں حصہ ڈالنا تھا۔ بارہویں منصوبہ بندی کے دوران اس کے کارپس فنڈ میں نمایاں اضافہ اقلیتی برادریوں کو بااختیار بنانے اور ان کی سماجی و اقتصادی ترقی کو فروغ دینے کے لیے حکومت کے عزم کو ظاہر کرتا ہے۔مولانا آزاد ایجوکیشن فاؤنڈیشن کا مقصد تعلیمی، سماجی اور معاشی ترقی کو حل کرنانیز سماجی مساوات، ہم آہنگی اور قومی ترقی کو فروغ دینا تھا۔ مزید برآں، اس کا مقصد معاشرے میں انصاف، آزادی، سیکولرازم اور سوشل ازم کے بارے میں بیداری پیدا کرنا، اقلیتوں کو درپیش چیلنجوں کی نشاندہی کرنے کے لیے تحقیق کرنا، معلومات اور مشاورت کے مراکز، لائبریریوں، بک بینکوں کا قیام اور اقلیتوں کو بااختیار بنانے کے لیے معاشی مدد فراہم کرنا، خاص طور پر خود روزگار کی تربیت کے ذریعے۔تاہم، حالیہ برسوں میں، اس فاؤنڈیشن کی بہت سی اسکیموں کو من مانے طریقے سے بند کر دیا گیا ہے،بی جے پی حکومت کے قیام کے بعد سے اس کی سرگرمیوں میں بتدریج کمی آئی ہے۔ رائٹ ٹو انفارمیشن (آر ٹی آئی) کے ذریعے حاصل کردہ اعداد و شمار ایک پریشان کن رجحان کو ظاہر کرتے ہیں۔ مالی سال 2020-21 میں مولانا آزاد ایجوکیشن فاؤنڈیشن کو صرف 82 کروڑ روپے کا بجٹ مختص کیا گیا تھا، جس میں سے صرف 80 کروڑ روپے ہی جاری کیے گئے تھے۔ پورے سال کے دوران مرکزی حکومت نے مختلف فاؤنڈیشن اسکیموں پر صرف 63.5 ملین روپے خرچ کیے۔ اسی طرح 2019-20 میں اگرچہ 90 کروڑ روپے کا بجٹ مختص اور جاری کیا گیا تھا لیکن صرف 37.5 کروڑ روپے کا استعمال کیا گیا۔ یہ کہانی 2018-19 میں دہرائی گئی، جہاں 125.01 کروڑ روپے کا بجٹ مختص کرنے اور 123.76 کروڑ روپے جاری کرنے کے باوجود صرف 36 کروڑ روپے خرچ ہوئے۔
یہ اعداد و شمار اقلیتی برادریوں کی ترقی کے لیے مختص فنڈز کے کم استعمال کے تشویش ناک رجحان کو اجاگر کرتے ہیں، جو موجودہ حکومت کے تحت فاؤنڈیشن کے مقاصد کو منظم طور پر نظر انداز کرنے کی نشاندہی کرتے ہیں۔
2014 اور 2018 کے درمیان مولانا آزاد ایجوکیشن فاؤنڈیشن کے بارے میں ایک مختلف رجحان تھا۔ ان چار سالوں کے دوران فاؤنڈیشن کو کل 113 کروڑ روپے مختص کیے گئے تھے اور پوری رقم اس کے ذریعے جاری اور استعمال کی گئی تھی۔ اس عرصے میں فاؤنڈیشن کے مقاصد کے لیے حکومت کی طرف سے مسلسل حمایت دیکھی گئی۔تاہم سال 2021-22 کے لیے فاؤنڈیشن کے لیے مختص بجٹ کو تھوڑا سا بڑھا کر 90 کروڑ روپے کردیا گیا تھا۔ اس پیش رفت کے بارے میں اردو اخبارات میں شائع ہونے والی خبروں کے باوجود خود مسلم کمیونٹی کی طرف سے اس پر شدید رد عمل کا اظہار نہیں کیا گیا۔ نتیجتاً سماجی مساوات، ہم آہنگی اور قومی ترقی کے عظیم مقاصد کے ساتھ قائم کی گئی مولانا آزاد ایجوکیشن فاؤنڈیشن کی رفتار آہستہ آہستہ ختم ہوتی چلی گئی۔ آخر کار، اس غفلت کی وجہ سے حکومت کی طرف سے فاؤنڈیشن کو مکمل طور پر بند کر دیا گیا۔اس کی بندش سے پہلے، مولانا آزاد ایجوکیشن فاؤنڈیشن چار اہم اسکیمیں چلا رہا تھا:
بیگم حضرت محل نیشنل اسکالرشپ: اس اسکالرشپ کا مقصد اقلیتی برادریوں سے تعلق رکھنے والی ہونہار لڑکیوں کی مدد کرنا تھا۔ نویں اور دسویں جماعت کی طالبات کو 10 ہزار روپے جبکہ گیارہویں اور بارہویں جماعت کی طالبات کو 12 ہزار روپے دیے جاتے تھے۔
•غریب نواز روزگار اسکیم: 2017-18 میں شروع کی گئی اس اسکیم میں اقلیتی برادریوں کے نوجوانوں کے روزگار کو بڑھانے پر توجہ مرکوز کی گئی ہے۔ اس نے ہنرمندی کی ترقی کے لیے قلیل مدتی کورسپیش کیے، حالاں کہ مرکزی حکومت کے ذریعے پہلے ہی ’سیکھو اور کام کرو‘ کے نام سے اسی طرح کی ایک اسکیم چلائی جا رہی تھی۔
•علی گڑھ مسلم یونیورسٹی اور جامعہ ملیہ اسلامیہ میں برجنگ کورس: ’نئی منزل اسکیم کے تحت مدرسوں کے گریجویٹس اور اسکول چھوڑنے والوں کے لیے برجنگ کورس کا انعقاد کیا گیا تاکہ انھیں اعلیٰ تعلیم کی طرف منتقلی میں سہولت فراہم کی جاسکے۔
•سووچھ ودیالیہ: اس اسکیم کا مقصد اسکولوں میں صفائی ستھرائی کو فروغ دینا ہے۔ اس کے علاوہ فاؤنڈیشن نے ’مولانا ابوالکلام آزاد خواندگی ایوارڈ‘ کا بھی انتظام کیا، جس میں تعلیم میں تعاون کرنے والے افراد اور تنظیموں کو تسلیم کیا گیا۔ تاہم 2005 کے بعد سے اس زمرے میں کوئی ایوارڈ نہیں دیا گیا ہے۔
یہ اسکیمیں اقلیتی برادریوں کی مختلف ضروریات کو پورا کرنے کے لیے ڈیزائن کی گئی تھیں، جن میں تعلیم سے لے کر ہنر مندی کی ترقی اور صفائی ستھرائی تک شامل ہیں۔ مولانا آزاد ایجوکیشن فاؤنڈیشن کی ویب سائٹ اور سرگرمیوں کی فہرست میں اب مولانا آزاد میموریل لیکچر اور بیداری پروگرام شامل نہیں ہے، جو نویں کلاس میں اقلیتی لڑکیوں کی تعلیم کو فروغ دینے کے لیے شروع کیا گیا تھا۔غور طلب ہے کہ یو پی اے حکومت کے دور میں مولانا آزاد ایجوکیشن فاؤنڈیشن کا کارپس فنڈ 750 کروڑ روپے سے بڑھا کر 1500 کروڑ روپے کر دیا گیا تھا۔ حالاں کہ حکومت کی تبدیلی کے بعد سے اقلیتی امور کی وزارت نے اپنے کارپس فنڈ میں صرف 1362 کروڑ روپے مختص کیے ہیں۔ فاؤنڈیشن نے اس کارپس فنڈ پر سود سے سالانہ ١٠٠ کروڑ روپے کمائے، جو عام طور پر اس کے بنیادی ڈھانچے پر خرچ کیا جاتا تھا۔
2015 میں، سابق مرکزی وزیر برائے اقلیتی امور، نجمہ ہیبت اللہ نے ایک نئی بنیاد کی عمارت کی تعمیر کے منصوبے کا اعلان کیا۔ یقین دہانیوں کے باوجود اس محاذ پر کوئی پیش رفت نہیں ہوئی ہے۔
2019 میں مولانا آزاد ایجوکیشن فاؤنڈیشن کی 112 ویں آپریٹنگ کونسل اور 65 ویں جنرل اسمبلی کے اجلاس کے دوران اقلیتی امور کے وزیر مختار عباس نقوی نے مختلف اداروں کے اساتذہ کو تربیت دے کر مدرسوں کو مرکزی دھارے کی تعلیم میں ضم کرنے کی ترغیب دینے کا ارادہ ظاہر کیا تھا۔ تاہم، اس اقدام کو عملی جامہ نہیں پہنایا جا سکا۔سال 2017 میں مرکزی حکومت نے مولانا آزاد ایجوکیشن فاؤنڈیشن کے ذریعے ملک بھر میں مسلم لڑکیوں کو اعلیٰ تعلیم حاصل کرنے کی ترغیب دینے کے لیے 51,000 روپے ’شادی شگن‘ کے طور پر فراہم کرنے کے لیے ایک اسکیم کا اعلان کیا تھا۔ تاہم، اس اسکیم کو ابھی تک نافذ نہیں کیا گیا ہے۔ دلچسپ بات یہ ہے کہ رواں سال 8 مارچ کو پنجاب حکومت نے اسی طرح کے اقدام کا اعلان کیا تھا، جس میں مولانا آزاد ایجوکیشن فاؤنڈیشن سے بیگم حضرت محل نیشنل اسکالرشپ حاصل کرنے والی اقلیتی لڑکیوں کو 51 ہزار روپے ’شادی کے شگون‘ کے طور پر دینے کا اعلان کیا گیا تھا، بشرطیکہ ان کے والدین کی سالانہ آمدنی دو لاکھ روپے سے زیادہ نہ ہو۔
قبل ازیں مولانا آزاد ایجوکیشن فاؤنڈیشن کی 57 ویں جنرل باڈی میٹنگ اور 101 ویں گورننگ باڈی اجلاس کے دوران مختار عباس نقوی نے راجستھان کے الور ضلع میں پس ماندہ طبقات اور اقلیتوں کے لیے پہلا عالمی تعلیمی ادارہ قائم کرنے کے منصوبوں کا اعلان کیا۔ اس کا سنگ بنیاد رکھا جانا تھا اور توقع کی جا رہی تھی کہ یہ ادارہ 2020 تک کام کرنا شروع کر دے گا۔ تاہم تحقیقات سے پتا چلتا ہے کہ اس کی بندش سے پہلے اس پر کوئی پیش رفت نہیں ہوئی تھی۔ راجستھان حکومت کی جانب سے الور ضلع کے راپی پلی گاؤں میں تعلیمی ادارے کے لیے ۱۵ ہیکٹر زمین فراہم کرنے کے باوجود یہ پروجیکٹ آگے نہیں بڑھ سکا۔
قابل ذکر ہے کہ موجودہ حکومت کی طرح یو پی اے حکومت نے بھی کئی وعدے اور اعلانات کیے تھے، جن میں سے کئی پورے نہیں ہوئے۔ 2013 میں سابق وزیر برائے اقلیتی امور کے رحمان خان نے مولانا آزاد ایجوکیشن فاؤنڈیشن کے پانچ یونیورسٹیوں کے قیام کے منصوبے کا اعلان کیا تھا۔ مزید برآں، فاؤنڈیشن کا مقصد اقلیتوں کی تعلیمی حیثیت کے بارے میں معلومات جمع کرنے کے لیے ایک ڈیٹا بینک قائم کرنا تھا۔ اس کے علاوہ اقلیتوں کے مسائل پر تحقیق کے لیے مختلف یونیورسٹیوں میں مولانا آزاد چیئر قائم کیے جانے تھے۔ مزید برآں پبلک اسکولز اور پولی ٹیکنک کو پبلک پرائیویٹ پارٹنرشپ (پی پی پی) کے ذریعے قائم کرنے کی بھی تجویز دی گئی۔ تاہم، یہ تمام اعلیٰ منصوبے کاغذ پر ہی رہے اور کوئی پیش رفت نہیں ہوسکی۔
رحمان خان نے یہ بھی کہا کہ ان اداروں کے قیام کے لیے مجموعی طور پر 500 کروڑ روپے مختص کیے گئے ہیں۔ اس کے علاوہ 3 سے 5 پبلک اسکولوں کے قیام کے لیے 10 کروڑ روپے اور پولی ٹیکنک کے قیام کے لیے 5 کروڑ روپے رکھے گئے ہیں۔ رحمان خان نے لوک سبھا کو تین یونیورسٹیوں کے منصوبوں کے بارے میں بتایا، جن میں بنگلورو میں ٹیپو سلطان یونیورسٹی آف سائنس اینڈ ٹکنالوجی، خواجہ غریب نواز پروفیشنل، اجمیر میں ٹیکنیکل اینڈ ووکیشنل ایجوکیشن اور بہار یونیورسٹی شامل ہیں۔ کشن گنج میں رفیع احمد قدوائی یونیورسٹی آف ہیلتھ اینڈ میڈیکل سائنسز بھی قائم کی جانی تھی۔ تاہم، ان اعلانات اور وعدوں کے باوجود، ان میں سے کسی بھی ادارے کا خواب شرمندہ تعبیر نہیں ہوا۔
اب سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ کیا مسلمان اس معاملے پر آواز اٹھائیں گے؟ کیا مسلم رہنما سرکاری عہدیداروں کے ساتھ بات چیت کریں گے؟ کیا احتجاجی ریلیاں نکالی جائیں گی؟
سینئر صحافی افروز عالم ساحل نے مسلم کمیونٹی کی بے حسی پر افسوس کا اظہار کیا۔ انھوں نے کہا کہ مجھے سمجھ نہیں آتا کہ ہم ہمیشہ دیر سے ردعمل کیوں دیتے ہیں۔ میں ایک طویل عرصے سے اس مسئلے پر آواز اٹھا رہا ہوں۔ 2014 میں میں نے کئی ممتاز مسلم سیاست دانوں سے ملاقات کی اور قومی رہنماؤں کی توجہ اس معاملے کی طرف مبذول کرانے کی کوشش کی۔ میں نے انھیں متنبہ کیا کہ اگر یہ سلسلہ جاری رہا تو مولانا آزاد ایجوکیشن فاؤنڈیشن کو بند کر دیا جائے گا۔ جون 2021 میں، میں نے صورتحال کے بارے میں تفصیلی معلومات فراہم کیں، جس میں فاؤنڈیشن کے پٹری سے اترنے کے امکان کو اجاگر کیا گیا۔ بدقسمتی سے میرے انتباہ پر دھیان نہیں دیا گیا۔ میں نے سرکاری حکام سے ملنے کے لیے ایک وفد تشکیل دینے کا بھی مشورہ دیا تھا، لیکن ایسا لگتا ہے کہ اب بہت دیر ہو چکی ہے، اور فاؤنڈیشن کی بندش واقعی ایک افسوسناک نتیجہ ہے، یہ کہتے ہوئے افروز سرد خاموش ہو جاتے ہیں، لیکن اپنے پیچھے لا ینحل سوالات چھوڑ جاتے ہیں۔
ایک طرف حکومت نے مولانا آزاد ایجوکیشن فاونڈیشن کو بندکردیاہے تو دوسری طرف اپنے آلۂ کاروں کو اقلیتی طبقات کے درمیان مختلف اسکیموں کے ساتھ بھیجاجارہاہے تاکہ انھیں یہ فریب دیاجاسکے کہ بی جے پی ان کی تعلیمی ترقی اور پسماندگی کے ازالے کے لیے پرعزم ہے۔خاص طورپر مسلم راشٹریہ منچ کے نمائندے مسلمانوں کو جھوٹی تسلیاں دیتے نظرآتے ہیںاور مسلمان ان کے دکھلائے ہوئے سبز باغوں کو حقیقت خیال کرلیتے ہیں۔لکھنؤ میں راج ناتھ سنگھ کے نام پر ’کلکٹر بٹیا‘ اور نہ جانے کون کون سی اسکیمیں چلائی جارہی ہیں،تاکہ اقلیتی طبقے کی لڑکیوں کو کامیاب بنایاجاسکے۔سوال یہ ہے کہ اگر حکومت مسلمانوں کے تئیں اس قدر مخلص ہےتوپھر مولانا آزادایجوکیشن  فاؤنڈیشن پر تالا کیوں ڈال دیاگیا؟اگر اس کا جواب نہ مل سکے تو باور کرلیجیے کہ آپ کو دھوکہ دیاجارہاہے اور جو لوگ حکومت کی جانب سے اقلیتوں کی فلاح و بہبودی کے لیے برائے نام پروگرام چلارہے ہیں ان کے پیش نظر اپنے ذاتی مفاد ہیں۔

Leave a Comment

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Scroll to Top
%d bloggers like this: