تعزیہ سے بت پرستی تک!
تعزیہ سے بت پرستی تک!

از: شمس الدین سراجی قاسمی ______________ “أَيْنَ تَذْهَبُونَ” تم کہاں جارہے ہو ، محرم الحرام تو اسلامی تقویم ہجری کا پہلا مہینہ ہے اور تم نے پہلے ہی مہینہ میں رب کو ناراض کر دیا، اب یہ بات کسی پر پوشیدہ نہیں کہ محرم الحرام میں کئے جانے والے اعمال، بدعات ہی نہیں بلکہ کفریات […]

ماہِ محرم الحرام کی بدعات و خرافات
ماہِ محرم الحرام کی بدعات و خرافات

از: عائشہ سراج مفلحاتی __________________ محرم الحرام اسلامی سال کا پہلا مہینہ ہے، جو اشھر حرم، یعنی حرمت والے چار مہینوں میں سے ایک ہے، احادیث میں اس ماہ کی اہمیت وفضیلت مذکور ہے، یومِ عاشوراء کے روزے کی فضیلت بیان‌ کی گئی ہے، جو اسی ماہ کی دسویں تاریخ ہے؛ لیکن افسوس کی بات […]

معرکۂ کربلا کے آفاقی اصول اور پیغام
معرکۂ کربلا کے آفاقی اصول اور پیغام

از: محمد شہباز عالم مصباحی _______________ یہ تجزیاتی مقالہ کربلا کی عظیم الشان جنگ اور اس کے آفاقی پیغام کا جائزہ لیتا ہے۔ امام حسین (ع) اور ان کے ساتھیوں کی قربانیوں کو ایک تاریخی اور اخلاقی واقعے کے طور پر پیش کیا گیا ہے جو نہ صرف مسلمانوں بلکہ پوری انسانیت کے لیے ایک […]

تبصرہ نگاری ایک طرح کی گواہی ہے
تبصرہ نگاری ایک طرح کی گواہی ہے

✍️ڈاکٹر ظفر دارک قاسمی zafardarik85@gmail.com ________________ تبصرہ نگاری نہایت دلچسپ اور اہم فن ہے ۔ تبصرے متنوع مسائل پر کیے جاتے ہیں ۔ مثلا سیاسی ،سماجی ، ملکی ، قانونی احوال و واقعات وغیرہ وغیرہ ۔ لہٰذا اس موضوع پر مزید گفتگو کرنے سے قبل مناسب معلوم ہوتا ہے کہ پہلے تبصرے کا مفہوم و […]

ملک میں تین نئے فوجداری قانون کا نفاذ
ملک میں تین نئے فوجداری قانون کا نفاذ

✍️ مفتی محمد ثناء الہدیٰ قاسمی نائب ناظم امارت شرعیہ بہار اڈیشہ و جھاڑکھنڈ _________________________ انڈین پینل کوڈ (آئی پی سی) 1860، کرمنل پروسیجر کوڈ (سی آر پی سی) 1898 اور انڈین ایویڈنس ایکٹ 1872 ایک جولائی 2024ء سے تاریخ کے صفحات میں دفن ہوگئے ہیں، ان کی جگہ بھارتیہ نیائے سنہیتا، بھارتیہ ناگرگ سورکچھا […]

previous arrow
next arrow

اسرائیل کے قیام کے متعلق بعض تاریخی تسامحات

محمد علم اللہ، نئی د ہلی

فلسطین پر اسرائیلی بمباری کا دوسرا دن تھا۔ کثیرتعداد میں معصوم اور بے گناہ لوگ، جن میں بوڑھے، بچے اور خواتین شامل تھیں، جاں بحق ہو رہے تھے۔ اپنے آن لائن انگریزی کی کلاس میں جب میں عالم افسردگی میں بیٹھا ہوا تھا تو میرے امریکی نژاد استاذ نے افسردگی کی وجہ دریافت کی۔ میں نے غزہ کے روح فرسا حالات کا ذکر کیا، جس پر گفتگو ہوتے ہوتے یہاں تک پہنچی کہ اسرائیلی مظلوم ہیں اور یہ کہ ان کے ساتھ زیادتی ہو رہی ہے۔

ہمارے استاذ کی عیسائی شریک حیات نے دلیل دی کہ فلسطین کی زمین درحقیقت یہودیوں کی تھی ،جس پر مسلمانوں نے قبضہ کیا تھا۔ کسی ایسے شخص کی طرف سے اس قدر ناقص اور خلاف تاریخ بیان سن کر مجھے حیرانی تو ہوئی مگر افسوس بھی ہوا کہ جس کی پوری زندگی پڑھنے پڑھانے اور علم و حکمت کی گفتگو کرتے گذری تھی، ان کے دماغ میں بھی زہر بھرا ہوا ہے۔ میں نے انھیں بہتیرا سمجھانے کی کوشش کی لیکن وہ خود ساختہ تاریخ اور صہیونی پروپیگنڈے کا اس قدر شکار تھے کہ انہیں تاریخی واقعیت سمجھانا آسان نہیں تھا۔

اس واقعےکو ابھی زیادہ دن نہیں گذرے تھے کہ میں نے اسی قسم کا بیانیہ خود اپنے کئی مسلم بھائیوں سے سنا۔ سوشل میڈیا پر بھی کئی جگہوں پر اس قسم کی تحریریں دیکھنے کو ملیں۔ تاریخ کا طالب علم ہونے کی حیثیت سے ایسی باتیں مجھے بہت آزردہ کرنےوالی تھیں۔ اسی آزردہ طبعی نے مجھے یہ مضمون لکھنے پر مجبور کیا۔

تو آئیے جانتے ہیں اس کی حقیقت کیا ہے اور حقائق کو کیسے مسخ کرکے پیش کیاجارہاہے:

تاریخی طور پر فلسطین میں اسرائیل کے قیام پر صہیونی قبضے تین محاذوں پر آگے بڑھے: 1) قتل عام، دہشت گردی اور نقل مکانی، 2) عوامی زمینوں کی لوٹ مار، 3) اراضی اور جائیداد کی منتقلی۔ تاریخ کے لحاظ سے اس کی وضاحت کرنے کے لیے، آئیے آخر سے شروع کرتے ہیں:

1800 کی دہائی میں جب سلطنت عثمانیہ نسبتاً مستحکم تھی، دنیا کے کئی ممالک سے مختلف نسلوں اور مذاہب کے لوگ سرزمین فلسطین پر نمودار ہونے لگے۔ اس وقت ریاست کی سیاست اور توازن کی پالیسیوں کے فریم ورک کے اندر مختلف ریاستوں اور ان کی رعایا کو مراعات دی گئیں، انہیں عبادت گاہیں بنانے، جائیدادیں خریدنے کے حقوق اور رئیل اسٹیٹ کے لین دین میں نرمی برتی گئی۔ فلسطین میں فلسطینی النسل یہودی ، عیسائی اور مسلمان آباد تھے۔ حال ہی میں یورپ اور دیگر خطوں سے آنے والے یہودیوں نے اس فریم ورک کے اندر زمینیں خریدیں اور بستیاں قائم کیں۔ اس وقت کے اس ماحول میں کبھی کسی نے سوچا بھی نہیں تھا کہ یہ یہودی ایک دن مقامی آبادی کو اپنے وطن سے بے دخل کر کے وہاں ایک قابض ریاست قائم کر لیں گے۔ لیکن سلطان عبدالحمید کے دور میں جب صیہونی ریاست ایک خطرے کے طور پر ابھری تو سلطنت عثمانیہ نے یہودیوں کو جائیداد کی فروخت کو روکنے کے لیے ہر طرح کی احتیاط برتی۔ ہمارے پاس اس وقت کے عرب علما کے بہت سے فتوے موجود ہیں جن میں کہا گیا تھا کہ باہر کے یہودیوں کو جائیداد اور زمین فروخت کرنا ”مذہبی طور پر ناجائز اور حرام“ ہے۔

زمین اور جائیداد کی فروخت کے حوالے سے درج ذیل باتوں پر غور کرنا ضروری ہے: خاص طور پر فلسطین، لبنان اور مصر کے شمالی علاقوں میں عرب زمینداروں کے وسیع علاقے تھے جن میں زیادہ تر غیر مسلم تھے۔ مثال کے طور پر وادی مرک ابن عامر حیفہ کے جنوب مشرق میں درجنوں دیہاتوں اور ان علاقوں میں رہنے والے ہزاروں عرب کسانوں کے ساتھ، لبنان سے تعلق رکھنے والے سرسوک خاندان سے تعلق رکھتے تھے۔سرسوک جو یونانی آرتھوڈوکس عیسائی تھے، نے ان سالوں میں عثمانی حکومت سے زمین خرید لی اور 1912 اور 1925 کے درمیان، انہوں نے اسے صیہونی تنظیموں کو فروخت کر دیا۔ اسی طرح یروشلم میں جس زمین پر اسرائیلی پارلیمنٹ کی عمارت تعمیر کی گئی ہے، وہ کبھی یروشلم یونانی آرتھوڈوکس پیٹریارکیٹ کی ملکیت تھی۔

1900 کی دہائی کے اوائل سے جیسے ہی سلطنت اپنے آخری دنوں میں کمزور ہونی شروع ہوئی ، اس نے خطے پر اپنا مؤثر کنٹرول کھونا شروع کردیا۔ دنیا کے کونے کونے سے فلسطین آنے والے یہودیوں نے موقع کا فائدہ اٹھاتے ہوئے سرکاری زمینوں پر قبضہ کر لیا اور نیم فوجی ملیشیاؤں کے ذریعے گھیرے ہوئے علاقوں پر قائم کردہ کھیتوں ”کبوتزم“ کی حفاظت پر توجہ مرکوز کی۔ یہ مسلح ملیشیا، مختلف ناموں سے اسرائیل کے قیام کے عمل کے دوران منظم ہوئیں، جن میں سے کچھ کو ختم کر دیا گیا اور دیگر نے مل کر اسرائیلی فوج کی بنیاد رکھی۔

فلسطین میں بسنے والے سویلین اور مقامی آبادی کے خلاف قتل عام، دہشت گردی اور جبری نقل مکانی صہیونی قبضے کے سب سے زیادہ استعمال ہونے والے اور مؤثر ترین طریقے تھے۔ 1930 کی دہائی کے دوسرے نصف حصے سے لے کر 1948 تک فلسطینی علاقوں نے اپنی تاریخ کے سب سے خونیں اور سب سے زیادہ تنازعات والے ادوار کا تجربہ کیا۔ ساڑھے سات لاکھ سے زائد افراد کو مختلف علاقوں کی طرف ہجرت کرنی پڑی، 20 ہزار سے زائد شہری مارے گئے، دیہاتوں کو آگ لگا دی گئی اور لوٹ مار کی گئی اور جو کچھ پیچھے رہ گیا وہ خوفناک تجربہ، قتل و غارت گری ، بے ایمانی اور استحصال کے لا متناہی سلسلے تھے جو اسرائیل کے وجود میں آنے کے لئے کسی بھی ریاست کے قیام کے دوران ہونے والے ”نقصانات“ سے کہیں زیادہ تھے۔ تقریبا ًایک ہزار فلسطینی بستیوں کو نقشے سے مٹا دیا گیا اور مقامی لوگوں کی چھوڑی ہوئی ہر چیز پر یہودیوں نے قبضہ کر لیا۔ اسرائیل کی بنیادیں خون کے سمندر کے درمیان رکھی گئیں۔

ان سب کے علاوہ، 1948-1949، 1967 اور 1973 میں عربوں کے ساتھ جنگوں کے بعد اسرائیل نے فلسطینیوں کی متعدد جائیدادوں اور زمینوں پر قبضہ کر لیا۔ اس تناظر میں نوآبادیاتی نظام جس کا ہم نے مختصراً تذکرہ”بستیوں“ کے طور پر کیا ہے، اس پر الگ سے بحث کی جانی چاہیے۔ سنہ 1967 میں اسرائیل کی جانب سے مغربی کنارے اور مشرقی یروشلم پر قبضے کے بعد جن علاقوں میں فلسطینی رہتے تھے ان کے لیے ‘یہودیت کے’ مستقل طریقے‘ کے طور پر استعمال کی جانے والی آبادکاری کی پالیسی اب ایک ایسے نقطہ میں تبدیل ہو چکی ہے جس نے اسرائیل کی داخلی سیاسی زمین کو مکمل طور پر زہر آلود کر دیا ہے۔

یہاں پر اس تاریخی تناظر کو بھی یاد کرنا ضروری ہے جو خلافت عثمانیہ کے دور میں بیت المقدس کی مقدس سرزمین کو گھیرے ہوئے تھا۔ اس زمانے میں یہ زمین صرف مسلمانوں کے لیے وقف تھی اور اس کی خرید و فروخت پر سخت پابندیاں عائد تھیں۔ یہ مقدس سرزمین کے طور پر قابل احترام علاقہ تھا اور بیت المقدس کے مسلمان باشندوں اور خلافت عثمانیہ کے درمیان ایک مضبوط معاہدہ تھا۔ اس عہد میں اوقاف کا قیام، زمین کے لین دین پر مستقل ممانعت اور یہ یقین دہانی شامل تھی کہ یہاں کے باشندوں کو ان کے وطن سے زبردستی بے گھر نہیں کیا جائے گا۔ یہ معاہدہ، جسے عام طور پر ”کشان“ کہا جاتا ہے، ایک پختہ عہد تھا جس میں دیگر اہم دستاویزات کے ساتھ ایک کلید بھی شامل تھی۔ جس کے مطابق ایک فرد کے پاس متعدد کشان بھی ہوسکتے تھے، ہر ایک اپنے حقوق اور دعووں کی نمائندگی کرتا تھا۔ یہاں یہ ذکر اہم ہے کہ اس عرصے میں یہودی، عیسائی اور مسلمان فلسطین میں مقیم تھے، جہاں یہودیوں کی آبادی محض 3فی صدتھی۔

خلافت عثمانیہ کے خاتمے کے بعد برطانوی افواج نے فلسطین پر قبضہ کر لیا۔ دھوکہ دہی سے، برطانوی انتظامیہ نے اس قبضے کے لیے ”مینڈیٹ“ کی اصطلاح رائج کی، جو گمراہ کن طور پر آزادی کے مشن کو ظاہر کرتی ہے۔ انہوں نے ایک داستان کا پرچار کیا جس میں بتایا گیا تھا کہ عثمانی ظالم تھے اور انگریز اس سرزمین کو آزادی دلانے کے لیے موجود تھے۔ان کے جانے کے بعد، عثمانیوں نے کشان کی دستاویزات ان کے حق داروں کو سونپ دیں۔ ایسے معاملات میں جہاں جلد بازی یا لاجسٹک مسائل کی وجہ سے مالکان کی شناخت نہیں ہو سکی، یہ دستاویزات عراقی شاہ فیصل کو منتقل کر دی گئیں۔ اس کے بعد شاہ فیصل نے یہ دستاویزات موجودہ اردنی بادشاہ کے دادا عبداللہ اول کے حوالے کر دیں۔

تسلیم شدہ حکومت کی عدم موجودگی میں ریاست کی عدم موجودگی واضح ہو جاتی ہے۔ برطانوی حکومت کی طرف سے من گھڑت باتیں اس تاریخی سچائی کے سامنے غیر اہم ہیں۔ افواہیں یہ بھی گردش کر رہی ہیں کہ اردن کے شاہ عبداللہ اوّل نے کشان دستاویزات کو برطانیہ کو بیچ دیا یا چھوڑ دیا۔ 1924 سے 1948 تک برطانیہ نے منظم طریقے سے یہودیوں کی فلسطین میں ہجرت کی حوصلہ افزائی کی۔ ان کے جانے کے بعد، اسرائیل کو ایک ریاست قرار دیا گیا، جس نے فلسطینیوں کو سلطنت، ریاست، حکومت، فوج یا عدلیہ کے بغیر چھوڑ دیا۔اس حوالے سے راشد خالدی نے بڑا اچھا کام کیا ہے جو ایک فلسطینی نژاد امریکی مورخ ہیں اور جنھوں نے فلسطین کی تاریخ اور اسرائیل فلسطین تنازع پر کئی کتابیں لکھی ہیں۔ ان کے کام تنازعات کے تاریخی تناظر کا گہرائی سے تجزیہ فراہم کرتے ہیں۔

 نور مصالحہ ایک فلسطینی تاریخ داںاور مصنف ہیںجو فلسطین کی تاریخ پر اپنی تحقیق بشمول نکبہ (1948 کا فلسطینیوں کا خروج) کے لیے مشہور ہیں۔ ان کا کام اسرائیل کی تخلیق کے ارد گرد کے واقعات پر تنقیدی تناظر فراہم کرتا ہے۔ ان کے مطابق فلسطینیوں کی جانب سے اپنی زمین کو اپنی مرضی سے فروخت کرنے کے دعوے اسرائیلی اور برطانوی استعمار کی طرف سے جاری مسخ شدہ بیانیے سے زیادہ کچھ نہیں ہیں۔ جو بھی اس طرح کے دعوے کی آواز اٹھاتا ہے اس کی سخت مخالفت کی جانی چاہیے۔ اس کے بجائے، عثمانی کشان کی مستند دستاویزات پر توجہ دی جانی چاہیے۔ اسرائیلی اور برطانوی دستاویزات قطعی طور پر ناقابل قبول ہیں۔ اس امکان پر بھی غور کرنا مضحکہ خیز ہے کہ فلسطینی جنہوں نے اپنی سرزمین کے لیے بے شمار قربانیاں دی ہیں، یہودیوں کو چھوڑ کر اسے کسی کو بھی بیچ دیں گے۔ مزید برآں، وہ زمین جو فلسطینیوں کو فروخت کرنے کے لیے واضح طور پر ممنوع تھی، یہودی آباد کاروں کو کیسےفروخت کی جا سکتی ہے؟ یہ دعوے استدلال اور تاریخی درستی کی نفی کرتے ہیں۔

 نوجوان نسل کو اس بات کی تعلیم دینا بہت ضروری ہے کہ فلسطین کی سرزمین مقدس ہے جس کا خاکہ خلافت عثمانیہ اور فلسطینیوں کے درمیان ’کشان معاہدے‘ میں بیان کیا گیا ہے۔ یہ معاہدہ فلسطین کو وقف کے طور پر نامزد کرتا ہے، جو فلسطینیوں کی مجازی ملکیت کی نشاندہی اور اس کی فروخت کو باطل بناتا ہے۔ چونکہ ایک چھوٹے سے کالم میں بہت ساری چیزوں کونہیں سمیٹا جا سکتا اس وجہ سے ہم نے یہاں محض جدید تاریخ کے حوالے سے گفتگو کی ہے، تاہم اس بابت ایلان پیپے، بینی مورس، ایڈورڈ سعید اور جوزف مساد وغیرہ کے کاموں کو دیکھنا چاہیے جو اس حوالے سے سند کا درجہ رکھتے ہیں۔ انشاء اللہ اگلے کالم میں قدیم تاریخ اور مذہب کے حوالے سے گفتگوکی جائے گی۔

Leave a Comment

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Scroll to Top
%d bloggers like this: