تعزیہ سے بت پرستی تک!
تعزیہ سے بت پرستی تک!

از: شمس الدین سراجی قاسمی ______________ “أَيْنَ تَذْهَبُونَ” تم کہاں جارہے ہو ، محرم الحرام تو اسلامی تقویم ہجری کا پہلا مہینہ ہے اور تم نے پہلے ہی مہینہ میں رب کو ناراض کر دیا، اب یہ بات کسی پر پوشیدہ نہیں کہ محرم الحرام میں کئے جانے والے اعمال، بدعات ہی نہیں بلکہ کفریات […]

ماہِ محرم الحرام کی بدعات و خرافات
ماہِ محرم الحرام کی بدعات و خرافات

از: عائشہ سراج مفلحاتی __________________ محرم الحرام اسلامی سال کا پہلا مہینہ ہے، جو اشھر حرم، یعنی حرمت والے چار مہینوں میں سے ایک ہے، احادیث میں اس ماہ کی اہمیت وفضیلت مذکور ہے، یومِ عاشوراء کے روزے کی فضیلت بیان‌ کی گئی ہے، جو اسی ماہ کی دسویں تاریخ ہے؛ لیکن افسوس کی بات […]

معرکۂ کربلا کے آفاقی اصول اور پیغام
معرکۂ کربلا کے آفاقی اصول اور پیغام

از: محمد شہباز عالم مصباحی _______________ یہ تجزیاتی مقالہ کربلا کی عظیم الشان جنگ اور اس کے آفاقی پیغام کا جائزہ لیتا ہے۔ امام حسین (ع) اور ان کے ساتھیوں کی قربانیوں کو ایک تاریخی اور اخلاقی واقعے کے طور پر پیش کیا گیا ہے جو نہ صرف مسلمانوں بلکہ پوری انسانیت کے لیے ایک […]

تبصرہ نگاری ایک طرح کی گواہی ہے
تبصرہ نگاری ایک طرح کی گواہی ہے

✍️ڈاکٹر ظفر دارک قاسمی zafardarik85@gmail.com ________________ تبصرہ نگاری نہایت دلچسپ اور اہم فن ہے ۔ تبصرے متنوع مسائل پر کیے جاتے ہیں ۔ مثلا سیاسی ،سماجی ، ملکی ، قانونی احوال و واقعات وغیرہ وغیرہ ۔ لہٰذا اس موضوع پر مزید گفتگو کرنے سے قبل مناسب معلوم ہوتا ہے کہ پہلے تبصرے کا مفہوم و […]

ملک میں تین نئے فوجداری قانون کا نفاذ
ملک میں تین نئے فوجداری قانون کا نفاذ

✍️ مفتی محمد ثناء الہدیٰ قاسمی نائب ناظم امارت شرعیہ بہار اڈیشہ و جھاڑکھنڈ _________________________ انڈین پینل کوڈ (آئی پی سی) 1860، کرمنل پروسیجر کوڈ (سی آر پی سی) 1898 اور انڈین ایویڈنس ایکٹ 1872 ایک جولائی 2024ء سے تاریخ کے صفحات میں دفن ہوگئے ہیں، ان کی جگہ بھارتیہ نیائے سنہیتا، بھارتیہ ناگرگ سورکچھا […]

previous arrow
next arrow
مسلم دھرم گرو

نام نہاد”مسلم دھرم گرو” اسلام کا دفاع کرتے ہیں یا توہین ؟

تحریر: مسعود جاوید 

اسلام کی اہانت گناہ کبیرہ ہے اس سے تقریباً ہم سب واقف ہیں لیکن کیا کوئی مسلمان ایسا کرتا ہے ؟ ہاں ایسا کرتا ہے اور اسے سمجھنے کے لیے اللہ کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم کا یہ فرمان سمجھنا ضروری ہے:

 عن عبد الله بن عمرو بن العاص رضي الله عنهما أن رسول الله صلى الله عليه وسلم قال: «من الكبائر شَتْمُ الرجل والديه» قيل: وهل يسبّ الرجل والديه؟ قال: «نعم، يسبّ أبا الرجل فيسبّ أباه، ويسبّ أمّه، فيسبّ أمّه».  [صحيح] – متفق عليه

اللہ کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ اولاد کا اپنے والدین کو گالی دینا گناہ کبیرہ میں سے ہے۔‌ صحابہ کرام رضوان اللہ علیہم نے سوال کیا اے اللہ کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم کیا کوئی شخص اپنے والدین کو گالی دے گا! آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ ہاں اور وہ اس طرح کہ کسی نے کسی شخص کو گالی دی تو جواباً اس نے اس کے باپ اور اس کی ماں کو گالی دی "۔

تو ظاہر ہے اپنی ماں اور اپنے باپ کو گالی دلانے کا سبب وہ شخص بنا گویا اس نے خود اپنے والدین کو گالی دی ۔اسی طرح اللہ سبحانہ وتعالیٰ نے قرآن مجید میں ہمیں حکم دیا ہے کہ تم ان کو جن کی اللہ کے علاوہ وہ عبادت کرتے ہیں یعنی ان کے دیوی دیوتاؤں کو گالی مت دو ان کے خلاف اہانت آمیز الفاظ کا استعمال نہ کرو اس لئے کہ ضد اور نادانی میں پلٹ کر وہ اللہ کے خلاف اہانت آمیز الفاظ کا استعمال کریں گے۔

اسی طرح اللہ تبارک وتعالیٰ نے قرآن کریم میں ہمیں حکم دیا ہے کہ جب تم کسی مجلس میں سنو کہ اللہ کی آیات کا انکار کیا جارہا ہو جھٹلایا جا رہا ہو اور مذاق اڑایا جا رہا ہو تو ایسے لوگوں کے ساتھ تم اس وقت تک مت بیٹھو جب تک کہ وہ دوسرے موضوع پر بات کرنا شروع نہ کریں۔ لقوله تعالى:وَقَدْ نَزَّلَ عَلَيْكُمْ فِي الْكِتَابِ أَنْ إِذَا سَمِعْتُمْ آيَاتِ اللّهِ يُكَفَرُ بِهَا وَيُسْتَهْزَأُ بِهَا فَلاَ تَقْعُدُواْ مَعَهُمْ حَتَّى يَخُوضُواْ فِي حَدِيثٍ غَيْرِهِ.. {النساء:140}، 

اس تناظر میں دیکھا جائے تو ٹی وی ڈیبیٹ میں حصہ لینے والے "اسلامی اسکالر” اس گناہ کبیرہ کے مرتکب ہوتے ہیں وہ نہ صرف مسلمانوں بلکہ دین اسلام ، پیغمبر اسلام محمد صلی اللہ علیہ وسلم اور قرآن کی توہین کا باعث بن کر گناہ کبیرہ کے مرتکب ہوتے ہیں۔ 

 

اس تناظر میں دیکھا جائے تو ٹی وی ڈیبیٹ میں حصہ لینے والے "اسلامی اسکالر” اس گناہ کبیرہ کے مرتکب ہوتے ہیں وہ نہ صرف مسلمانوں بلکہ دین اسلام ، پیغمبر اسلام محمد صلی اللہ علیہ وسلم اور قرآن کی توہین کا باعث بن کر گناہ کبیرہ کے مرتکب ہوتے ہیں۔ 

جنت میں ستر حوروں کا ذکر جنت کے باغات ، دودھ اور شہد کی نہریں ، انواع واقسام کے پھل، آرام دہ صوفے، ریشم و کمخواب کے لباس، ہیرے جواہرات اور عیش و آرام کی زندگی کا تعلق ایمان والوں کے مرنے کے بعد کی زندگی کے تعلق سے ہے اسی طرح کفر، شرک اور گناہ کے مرتکبین کے لئے قبر میں عذاب اور جہنم کی آگ اور سزاؤں کا ذکر ہے۔ ان باتوں کا تعلق ایمان بالغیب سے ہے یعنی ان باتوں پر ہم مومن بغیر عقلی گھوڑے ڈوڑائے یقین رکھتے ہیں۔   یہ ہمارا ایمان اور عقیدہ  ہے اس لئے کہ اللہ سبحانہ وتعالیٰ نے اپنی مقدس کتاب قرآن کریم میں اس کا ذکر اور وعدہ کیا ہے۔  محمد صلی اللہ علیہ وسلم نے ہمیں بتایا ہے ہمارے لئے اتنا ہی کافی ہے۔ اسے ہم منطقی دلائل، لوجک ، دنیاوی فطرت، اور سائنس کے فارمولے سے نہیں سمجھ سکتے ہیں کہ آخر کس طرح کوئی پھل یا اللہ کی دیگر نعمتیں ہماری خواہش پر ہمارے سامنے آجائیں گی۔ 

جب یہ باتیں مومنوں کے لئے ہیں تو غیر مومنوں سے عقلی ، منطقی ، reasoning یعنی ہر مسبب کا سبب ہوتا ہے کے تناظر میں کیسے کسی سے بحث کی جا سکتی ہے! ۔ان کے انکار اور جھٹلانے کا ایک ہی جواب ہے کہ ہم اس پر یقین رکھتے ہیں اور جب میرے یقین سے دوسروں کی صحت پر فرق نہیں پڑتا ہے تو پھر بحث کس بات کی! 

بہت سے نام نہاد اسلامی اسکالر اور دھرم گرو جو اسلام کی حقیقت سے واقف بھی نہیں ہیں اور نہ متبحر عالم دین ہیں فقط جبہ و دستار داڑھی ٹوپی کرتا پاجاما اور بغیر ٹوپی والے بھی اسلام کا دفاع کرنے پہنچ جاتے ہیں نہ انہیں موضوع کی گیرائی اور گہرائی کا پتہ ہوتا ہے اور نہ وہ جانے سے پہلے ہوم ورک کرتے ہیں! ۔

دین اسلام کا مطالعہ کرنے والا عام انسان بھی یہ جانتا ہے ‘یہودی’، ‘عیسائی’ اور دیگر مذاہب کے ماننے والوں کی طرح مسلمان ‘ محمڈن ‘ نہیں ہیں ۔ مسلمانوں کا دین اسلام ہے جسے اللہ نے حضرت آدم علیہ کے ساتھ بھیجا تھا اور آخری پیغمبر تک تمام انبیاء و رسل علیہم الصلوٰۃ والتسلیم تک اسی دین اسلام کی اتباع کرنے کی تلقین کرتے رہے۔ اس طرح ایک اللہ پر یقین رکھنے والا اور شرک نہیں کرنے والا ہر شخص مسلم ہے۔ دین ایک ہے جیسا کہ اللہ تبارک وتعالیٰ نے قرآن کریم میں فرمایا : 

"أن الدين عند الله الاسلام”  کہ دین تو اسلام ہی ہے ہاں مختلف ادوار میں بھیجے گئے نبیوں کی شریعتیں مختلف تھیں۔‌ 

ہمارے نام نہاد مسلم دھرم گرو اتنی سی بات بھی مدلل و مسکت رکھنے کے اہل نہ ہوں تو کیا ان سے امید کی جا سکتی ہے کہ وہ اسلام کا دفاع کرنے کے لئے ڈیبیٹ میں حصہ لیتے ہیں! ۔

آج کا ٹی وی ڈیبیٹ دراصل ڈیجیٹل مناظرہ ہے اور مناظرہ مستقل ایک فن ہے جس کے لئے  بڑے بڑے محدثین و فقہاء بھی تیار نہیں ہوتے تھے وہ فن مناظرہ کے تربیت یافتہ علماء کو اس کے لئے بھیجتے تھے۔ اس کی روشنی میں آج کے ڈیبیٹ کرنے والوں کی علمی لیاقت اور تربیت کا موازنہ کر لیں اور طے کریں کہ کیا وہ  مناظرے، عام یا ڈیجیٹل، میں حصہ لینے کے اہل ہیں ؟ ۔

 ایسے سطحی علم رکھنے والے جنہوں نے نہ اسلامی درسگاہوں کی خاک چھانی ہے نہ یونیورسٹی میں اسلامک اسٹڈیز کا مکمل کورس کیا ہے اور نہ مذاہب کا تقابلی مطالعہ کیا ہے وہ ڈیبیٹ میں حصہ لے کر فقط ہماری رسوائی کا باعث بنتے ہیں۔ 

اللہ ہم سب کو راہ راست کی ہدایت دے۔

Leave a Comment

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Scroll to Top
%d bloggers like this: